حمد جیلانی شاہد یادگیر

logomaqbooliya

حمد
آئینہ تیرا روشنی تیری
ہے عطا کردہ زندگی تیری
میں تو اظہار کا وسیلہ ہوں
لفظ تیرے سخنوری تیری
خاک کو برتری جو دی تو نے
ہے حقیقت میں برتری تیری
پھول مہکے ہیں تیری خوشبو سے
ہے کلی میں شگفتگی تیری
ہم تو ذرات ہیں ترے مولا
کیا کرے کوئی ہمسری تیری
سبز پتوں میں رنگ ہے تیرا
ڈالی ڈالی میں تازگی تیری
تیری رحمت کے جاؤں میں صدقے
میں ترا کائنات بھی تیری
تیرا ادنیٰ سا بندہ ہے شاہدؔ
کر رہا ہے جو بندگی تیری
جیلانی شاہدیادیادگیر