دشمن ہے گلے کا ہار آقا

logomaqbooliya

دشمن ہے گلے کا ہار آقا
دشمن ہے گلے کا ہار آقا
لٹتی ہے مری بہار آقا
تم دل کے لیے قرار آقا
تم راحتِ جانِ زار آقا
تم عرش کے تاجدار مولی
تم فرش کے باوَقار آقا
دامن دامن ہوائے دامن
گلشن گلشن بہار آقا
بندے ہیں گنہگار بندے
آقا ہے کرم شعار آقا
اس شان کے ہم نے کیا کسی نے
دیکھے نہیں زِینہار آقا
بندوں کا اَلم نے دل دکھایا
اور ہوگئے بے قرار آقا
آرام سے سوئیں ہم کمینے
جاگا کریں باوَقار آقا
ایسا تو کہیں سنا نہ دیکھا
بندوں کا اُٹھائیں بار آقا
جن کی کوئی بات تک نہ پوچھے
ان پر تمھیں آئے پیار آقا
پاکیزہ دلوں کی زینتِ اِیماں
ایمان کے تم سنگار آقا
صدقہ جو بٹے کہیں سلاطیں
ہم بھی ہیں امیدوار آقا
چکرا گئی ناؤ بے کسوں کی
آنا مِرے غمگسار آقا

اللّٰہ  نے  تم  کو  دے  دیا  ہے

ہر چیز کا اختیار آقا

ہے خاک پہ نقشِ پا تمہارا

آئینۂ بے غبار آقا

عالم میں ہیں سب بنی کے ساتھی

بگڑی کے تمہیں ہو یار آقا

سرکار کے تاجدار بندے

سرکار ہیں تاجدار آقا

دے بھیک اگر جمالِ رنگیں

جنت ہو مرا مزار آقا

آنکھوں کے کھنڈر بھی اب بسا دو

دل کا تو ہوا وقار آقا

ایمان کی تاک میں ہے دشمن

آؤ دَمِ اِحتضار آقا

ہو شمعِ شبِ سیاہ بختاں

تیرا رُخِ نور بار آقا

تو رحمت بے حساب کو دیکھ

جرموں کا نہ لے شمار آقا

دیدار کی بھیک کب بٹے گی

منگتا ہے امیدوار آقا

بندوں کی ہنسی خوشی میں گزرے

اس غم میں ہوں اَشکبار آقا

آتی ہے مدد بلا سے پہلے

کرتے نہیں انتظار آقا

سایہ میں تمہارے دونوں عالم

تم سایۂ کردگار آقا

جب فوجِ اَلم کرے چڑھائی

ہو اَوجِ کرم حصار آقا

ہر مِلکِ خدا کے سچے مالک

ہر مُلک کے شہریار آقا

مانا کہ میں ہوں ذلیل بندہ

آقا تو ہے با وقار آقا

ٹوٹے ہوئے دل کو دو سہارا

اب غم کی نہیں سہار آقا

ملتی ہے تمہیں سے داد دل کی

سنتے ہو تمہیں پکار آقا

تیری عظمت وہ ہے کہ تیرا

اللّٰہ   کرے     وقار    آقا

اللّٰہ   کے   لاکھوں  کارخانے

سب کا تمہیں اختیار آقا

کیا بات تمہارے نقش پا کی

ہے تاجِ سرِ وقار آقا

خود بھیک دو خود کہو بھلا ہو

اس دَین کے میں نثار آقا

وہ شکل ہے وہ ادا تمہاری

اللّٰہ   کو    آئے    پیار   آقا

جو مجھ سے مجھے چھپائے رکھے

وہ جلوہ کر آشکار آقا

جو کہتے ہیں بے زباں تمہارے

گونگوں کی سنو پکار آقا

وہ دیکھ لے کربلا میں جس نے

دیکھے نہ ہوں جاں نثار آقا

آرام سے شش جہت میں گزرے

غم دل سے نہ ہو دو چار آقا

ہو جانِ حسنؔ نثار تجھ پر

ہو جاؤں تِرے نثار آقا