بِیسی (کمیٹی)کی رقم پرزکوٰۃ

logomaqbooliya

بیسی (کمیٹی )کا معاملہ بھی قرض کی طرح ہے ،لہٰذا دیکھا جائے گاکہ اس کو بیسی(کمیٹی) مل چکی ہے یا نہیں ؟پوری کمیٹی ملنے کی صورت میں اس کی بھری ہوئی رقم پر زکوٰۃ ہوگی جتنی رقم بھرنا باقی ہے وہ نصاب میں شامل نہیں ہوگی کیونکہ یہ اس پر ایک طرح سے قرض ہے ۔
  اور اگر بیسی (کمیٹی ) نہیں ملی تو نصاب پورا ہونے اور دیگرشرائط ِ زکوٰۃ پائے جانے کی صورت میں سال گزرنے پر زکوٰۃ فرض ہوجائے گی لیکن ادائیگی اس وقت لازم ہو گی جب مقدارِ نصاب کاکم از کم پانچواں حصہ وصول ہوجائے، لہذا! اس وصول شدہ حصے کی زکوٰۃ ادا کی جائے گی ۔(فتاویٰ اہلِ سنت،سلسلہ نمبر۴،ص۱۰،ملخصاً)
حساب کا طریقہ
  بیسی بھرنے والے کو چاہے کہ اگر وہ بیسی وصول کرچکا ہے تو زکوٰۃ کا حساب اس طرح کرے :
وصول ہونے والی رقم
:۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
بقیہ اقساط کی رقم (خارج کرے )
:۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کل رقم
:۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اب اس کل رقم کا اڑھائی فیصد 2.5%بطورِ زکوٰۃ ادا کرے ۔