رشکِ قمر ہوں رنگ رُخِ آفتاب ہوں

logomaqbooliya

رشکِ قمر ہُوں     رنگ رُخِ آفتاب ہُوں 
ذرّہ تِرا جو اے شہِ گَردُوں     جناب ہُوں 
دُرِّ نجف ہُوں     گوہَرِ پاکِ خوشاب ہُوں 
یعنی تُرابِ رہ گزر بُو تُراب ہُوں 
گر آنکھ ہُوں     تو اَبر کی چشم پُر آب ہُوں 
دِل ہُوں     تو برق کا دلِ پُر اضطراب ہُوں 
خونیں     جگر ہُوں     طائر بے آشیاں     شہا
رنگِ پریدۂ رُخِ گل کا جواب ہُوں 
بے اصل و بے ثبات ہُوں     بحرِ کرم مدد
پَرْوَرْدَۂ کنارِ سُراب و حَباب ہُوں 
عبرت فزا ہے شرمِ گنہ سے مِرا سکوت
گویا لبِ خموشِ لحد کا جواب ہُوں 
کیوں     نالہ سوز لَے کروں     کیوں     خونِ دل پیوں 
سیخِ کباب ہُوں     نہ میں     جامِ شراب ہُوں 
دل بستہ بے قرار، جگر چاک، اشکبار
غنچہ ہوں     گل ہُوں     برق تپاں     ہُوں     سحاب ہُوں 
دعویٰ ہے سب سے تیری شفاعت پہ بیشتر
دفتر میں     عاصیوں     کے شہا اِنتخاب ہُوں 
مولیٰ دُہائی نظروں     سے گِر کر جلا غلام
اشکِ مژہ رسیدۂ چشم کباب ہُوں 
مِٹ جائے یہ خودی تو وہ جلوہ کہاں     نہیں 
دردا میں     آپ اپنی نظر کا حجاب ہُوں 
صَدقے ہوں     اس پہ نار سے دیگا جو مخلصی
بلبل نہیں     کہ آتشِ گل پر کباب ہُوں 
قالب تہی کیے ہمہ آغوش ہے ہلال
اے شہسَوار طیبہ! میں     تیری رکاب ہُوں 
کیا کیا ہیں     تجھ سے ناز تِرے قصر کو کہ میں 
کعبہ کی جان، عرشِ بریں     کا جواب ہُوں 
شاہا بُجھے سقر مِرے اشکوں     سے تانہ میں 
آبِ عبث چکیدئہ چشمِ کباب ہُوں
میں     تو کہا ہی چاہوں     کہ بندہ ہُوں شاہ کا
پر لُطف جب ہے کہدیں     اگر وہ جناب’’ہُوں    ‘‘
حسرت میں     خاک بوسیِ طیبَہ کی اے رضاؔ
ٹپکا جو چشمِ مہر سے وہ خونِ ناب ہوں 
٭…٭…٭…٭…٭…٭