حضرت امامِ اعظم کا استغاثہ

logomaqbooliya

اگر ہم اس کی مثالیں تحریر کریں تو کتاب بہت طویل ہو جائے گی مثال کے طور پر ہم صرف امام اعظم ابو حنیفہ رضی اﷲ تعالیٰ عنہ کے قصیدہ میں سے تین اشعار تبرکاً نقل کرتے ہیں جن میں حضرت امام موصوف نے کس طرح درباررسالت میں اپنا استغاثہ پیش کیا ہے اس کو بہ نگاہ عبرت دیکھئے اور انہی اشعار پر ہم اپنی کتاب کو ختم کرتے ہیں ملاحظہ فرمائے۔
یَا سَیِّدَ السَّادَاتِ جِئْتُکَ قَاصِدًا
اَرْجُوْا  رِضَاکَ  وَاَحْتَمِیْ  بِحِمَاکَ
اَنْتَ الَّذِیْ  لَوْلَاکَ  مَا خُلِقَ  امْرَؤٌ
کَلًّا   وَّ لَا    خُلِقَ   الْوَرٰی   لَوْلَاکَ
اَنَا طَامِعٌ  بِالْجُوْدِ  مِنْکَ  وَلَمْ یَکُنْ
لِاَ بِیْ  حَنِیْفَۃَ  فِی الْاَنَامِ    سِوَاکَ
                             (قصیدۂ نعمانیہ)
  ترجمہ: اے سید السادات! میں آپ کے پاس قصد کرکے آیا ہوں میں آپ کی خوشنودی کا امیدوار ہوں اور آپ کی پناہ گاہ میں پناہ گزین ہوں۔ آ پ کی وہ ذات ہے کہ اگر آپ نہ ہوتے تو کوئی آدمی پیدا نہ کیا جاتا اور نہ کوئی مخلوق عالم وجود میں آتی۔ میں آپ کے جود و کرم کا امیدوار ہوں۔ آپ کے سوا تمام مخلوق میں ابو حنیفہ کا کوئی سہارا نہیں!
واخر دعوٰنا ان الحمد ﷲ رب العٰلمین واکرم الصلوٰۃ وافضل السلام
علی سید المرسلین واٰلہ الطیبین اصحابہ المکرمین وعلٰی اھل طاعتہ
اجمعین برحمتہ وھو ارحم الراحمین اٰمین یارب العالمین .