شیخ الاسلام امام محمد انوار اللہ فاروقی کی سند حدیث و سند مصافحہ

logomaqbooliya

شیخ الاسلام امام محمد انوار اللہ فاروقی
کی سند حدیث و سند مصافحہ

از: حضرت علامہ ابو علی محمد اعظم حسین صدیقی حنفی خیرآبادی رحمۃ اللہ علیہ(۱)

الاسناد الأعظم بأعلی سند یوجد فی العالم (۲)

الحمدللہ رافع من استند بصحیح العمل الی علیّ بابہ و واصل من انقطع بحسن الأمل الی عزیز جنابہ ــ والصلوۃ والسلام علی سیدنا محمدن المرسل رحمۃ للعالمین وعلی اٰلہ المسلسل فضلھم وشرفہم علی ممر السنین واصحابہ الذین اقاموا الدین والتابعین لھم باحسان الی یوم الدین وعلینا معھم برحمۃ اللہ اٰمین اما بعد! فیقول العبد الضعیف الراجی الی رحمۃ ربہ الھادی ابوعلی محمد اعظم حسین الصدیقی الحنفی الخیراٰبادی نزیل بوفال والمتمنی ان یکون بمنہ سبحانہ مدنینا فی المال غفراللہ تعالی لہ ولوالدیہ ووفقہ للصدق فی الحال والقال: لما کان العلم اقوی سبب یتوصل بہ العاقل اللبیب الی الکمالات واسنی طرق یسلکھا الفاضل الادیب الی معرفۃ رب الأرض والسموات ــ لاسیما علم الحدیث منہ فانہ المقتبس من مشکوۃ مصباح صاحب الرسالۃ والھدی الذی اشرقت شمسہ من سماء الجلالۃ وکان الاسناد فی العلوم من اجل ما بہ یعتنی وانفس مایدخر ویقتنی لکونہ کما ورد الاسناد من الدین و سننا ماثوراالسلف والخلف المھتدین وقد خص اللہ تعالی ھذہ الامۃ المحمدیۃ بھذہ الخصوصیۃ کما خصھم بمراتب الاقربیۃ فکان کل من سندہ اقرب ولو برجل واحد اجل ممن فاتہ ذلک فی المبادی والمقاصد فقد ــ رحل جابر بن عبداللہ الانصاری رضی اللہ عنہما مسیرۃ شھر الی عبداللہ بن انیس رضی اللہ عنہ فی حدیث واحد وقال یحیی بن معین: الاسناد والعالی قربۃ الی اللہ والی رسولہ سید الانبیاء والمرسلین۔ وقد طلب من الفقیر الحقیر الذی لیس فی العیرو لا  فی النفیر الاجازہ بجمیع مرویاتی و مسموعاتی ومقروء اتی العارف العلامۃ والکامل الفھامۃمولانا محمد انواراللہ ادام اللہ تعالی ظلہ واوصلہ الی مایتمناہ فاجبتہ لما طلب واسعفتہ فیما رغب طلبا للنفع العام ورجاء للدعاء منہ بدو ام التوفیق وحسن الختام فی جوار سید الانام علیہ وعلی اٰلہ افضل الصلوۃ والسلام یعد ان سمع منی الحدیث المسلسل بالاولیۃ بالاولیۃ الحقیقۃ فاقول مستعینا بذی الطول متبرا من القوۃ الحوال اجزت العارف الکامل المرشد الواصل ………اجازۃ تامۃ مطلقۃ عامۃ بشرطہاالمعتبر لدی اھل الحدیث والاثر و ھو کمال  الضبط والتحری وان یقول فیما لا یدریہ :’’لا ادری‘‘ کما اجازنی بذلک المشائخ الأعلام والأساتذۃ الکرام ــ ولی ــ وللہ الحمد ــ فی جمیع العلوم مشائخ اجلۃ، ھم فی سماء العلوم بدور واھلۃ وساذکر بعض اسانیدی العالیۃ لکونہ سنۃ مطلوبۃ والقرب من سیدنا رسول اللہ ﷺ خصلۃ مرغوبۃــ اما القراٰن المجید والفرقان الحمید، کلام رب العلمین جل ذکرہ نشأت فی خدمتہ عزائمی من قبل ان تناط عنی تمائمی وللہ الحمد علی ذلک ــ أماتنا اللہ تعالی علیہ وأحیانا علیہ من کرمہ ــ تلقیتہ عمن لا تحصی کثرتھم ولا یعد عددھم منہم شیخی واستاذی ومرشدی الثقۃ الثبت الرحلۃ مولانا شاہ عبدالقیوم ــ قدس سرہ ــ وھو تلا علینا من الفاتحۃ الشریفۃ الی سورۃ الناس بطریق الاسناد والتحدیث فسمعتہ من لسانہ المنیف فی جمع کثیر من العلماء والفضلاء کاملا مکملا وھو یرویہ کذلک عن شیخہ الشیخ محمد اسحاق المحدث وھو عن شیخہ العلامۃ مولانا شاہ عبدالعزیز المحدث الدھلوی وھو عن شیخہ و والدہ العلامۃ مولانا شاہ ولی اللہ المحدث الدھلوی الی اٰخر ما ھو مذکور فی مسلسلاتہ و مؤلفاتہ ومنہم الشیخ الاجل الامام العلامۃ مولانا السید محمد علی ظاہر الوتری المدنی ــ قدس سرہ ــ حضرت فی دروسہ للتفسیر وسمعت الفرقان الحمید خلفہ فی التراویح وسمعت منہ سورۃ الصف واکثر السور الشریفۃ بطریق التحدیث وھو یرویہ عن شیخہ العلامۃ البرکۃ الشیخ احمد منۃ اللہ المالکی الی اٰخر اسنادہ ومنھم الشیخ سلیم البشری الازھری مفتی المالکیۃ فی مصر وھو یرویہ عن شیخہ الشیخ محمد الصفتی وھو ایضا عن شیخہ الاکبر السید محمد الامیر الکبیر صاحب الثلث الشھیر ومنھم السید عبداللہ السکری الدمشقی وھو یرویہ عن شیخہ التمیمی شیخ عباس باشا خدیوی مصر وھو یرویہ عن السید الامیر الکبیر الموصوف وھو یقول فی ثبتہ قرأت علی الامام ابی عبداللہ محمد بن حسن المنیر السمانودی ثلاث ختمات من طریق الشاطبیۃ و الدرۃ والطیبیۃ کما ھو قرأ علی شیخہ نور الدین الشیخ علی الرملی المالکی وھو أخذ عن الشیخ محمد البقری الکبیر وھو أخذ عن الشیخ عبدالرحیم الیمنی وھو أخذ عن والدہ الشیخ شحاذی الیمنی وھو عن الشیخ أحمد الطلاوی وھو عن شیخ الاسلام زکریا الانصاری وھو عن العلامۃ النویری وھو عن الامام ابی الفرج عبدالرحمن بن علی الجوزی الحافظ واسانیدہ مشہورۃ فی کتبہ الی سیدنا رسول اللہ ﷺ منھا ما ھو یروی عن الشیخ اسمعیل بن ابی صالح النیسابوری وھو عن العلامۃ الشیخ ابی طاھر محمد بن محمدبن محمش الزیادی وھو عن الشیخ ابی حامد احمد بن محمد بن یحیی البزاز وھو عن الشیخ عبدالرحمن بن بشر بن الحکم النیسابوری عن سفیان بن عیینۃ عن عمرو بن دینار عن ابی قابوس مولی عبداللہ بن عمرو بن العاص وعن عدۃ من التابعین عن عبداللہ بن عمرو بن العاص وعن الجم الغفیر من الصحابۃ الکرام علیہم الرضوان عمن انزل علیہ القراٰن سیدنا رسول اللہ ﷺ وشرف وکرم۔

الحدیث المسلسل بالأولیۃ

فانی ارویہ بالاولیۃ الحقیقیۃ والاضافیۃ بطرق متعددۃ بعضھا اعلی من بعض ــ فمنھا ما ارویہ بالاولیۃ الحقیقیۃ عن الشیخ الاجل المعمر الثقۃ الثبت الرحلۃ مولانا الشیخ فضل رحمن الملّاوی قدس سرہ وھو اول حدیث سمعتہ منہ وھو یرویہ بالاولیۃ الحقیقیۃ عن شیخہ العلامۃ مولانا شاہ عبدالعزیز المحدث الدھلوی قدس سرہ وھو یرویہ بالاولیۃ الحقیقیۃ عن والدہ القطب الشھیر مولاناشاہ ولی اللہ المحدث الدھلوی وھو یرویہ بالاولیۃ الحقیقیۃ عن شیخہ واستاذہ السید عمر المدنی الی اٰخرما ذکرہ فی مسلسلاتہ ــ ومنھا ما ارویہ عن شیخی واستاذی ومرشدی العلامۃ الثقۃ الثبت الرحلۃ سند الدھر وامام العصر مولاناشاہ عبدالقیوم ــ روح اللہ تعالی روحہ وعطر ضریحہ ــ وھو اول حدیث قرأت علیہ فی اول درس المسلسلات وھو یرویہ عن شیخہ واستاذہ مولانا شاہ محمد اسحاق المحدث بالاولیۃ الحقیقیۃ وھو یرویہ عن شیخہ واستاذہ وجدہ مولانا شاہ عبدالعزیز المحدث الدھلوی وھو یرویہ عن شیخہ و والدہ مولانا شاہ ولی اللہ المحدث الدھلوی الی اٰخر السند المذکور فی مسلسلاتہ ــ ومنھا ما ارویہ عن شیخی واستاذی الثقۃ الثبت الرحلۃ استاذ العلماء وملاذ العرفاء ــ مولانا السید محمد علی ظاھر الوتری المدنی ــ قدس سرہ ــ وھو اول حدیث قرأت علیہ فی درس المسلسلات وھو یرویہ بالاولیۃ الحقیقیۃ عن شیخہ البرکۃ العلامۃ الشیخ احمد منۃ اللہ المالکی الازھری تلمیذ الشیخ الاکبر الامیر الکبیر صاحب الثبت الشھیر قال: ھو اول حدیث سمعتہ منہ قال حدثنا بہ محدث الشام العلامۃ الشیخ عبدالرحمن بن محمد الکزبری وھو اول حدیث سمعتہ منہ قال حدثنا بہ البدر محمد بن بدیر المقدسی وھو اول حدیث سمعتہ منہ قال حدثنی بہ ابوالنصر مصطفی الدمیاطوی وھو اول حدیث سمعتہ منہ قال حدثنی بہ العلامۃ الشیخ محمد بن احمد عقیلۃ المکی صاحب المسلسلات وھو اول حدیث سمعتہ منہ ومنھا ما ارویہ عن الشیخ الاجل العلامۃ المعمر شیخ الوقت فی علماء الازھر الشیخ سلیم البشری مفتی المکیۃ وھو اول ما قرأت علیہ فی دارہ فی القاھرۃ وھو یرویہ بالاولیۃ الحقیقیۃ عن شیخہ العلامۃ الشیخ محمد الصفتی وھو یرویہ بالاولیۃ الحقیقیۃ عن شیخہ الاکبر الامیر الکبیر المتقدم ذکرہ ولہ فی ھذا الحدیث اشیاخ کثیرۃ کما ھو مذکور فی ثبتہ ومنھا ما ارویہ عن الشیخ المعمر السید عبداللہ الرکابی السکری الدمشقی فی دارہ بدمشق وھو اول حدیث سمعتہ منہ بالاولیۃ الحقیقیۃ وھو یرویہ بأسانیدہ المتعددۃ العالیۃ ــ منھا ما یرویہ بالاولیۃ الحقیقیۃ عن شیخہ الشیخ التمیمی شیخ عباس باشا خدیوی مصر وھو یرویہ بالاولیۃ الحقیقیۃ عن العلامۃ الشیخ الامیر الکبیر المتقدم وکذلک یرویہ عن شیخہ العالم الفاضل الشیخ محمد القاؤقجی بسندہ المذکور فی ثبتہ فمن جملۃ ھذہ الطرق اقتصر علی السند  الذی ذکرہ الشیخ العلامۃ مولانا السید محمد علی ظاھر الوتری المدنی من طریق الشیخ محمد بن احمد عقیلۃ المکی قال حدثنی بہ العلامۃ الشیخ احمد بن محمد الدمیاطی المشھور بابن عبدالغنی وھو اول حدیث سمعتہ منہ قال حدثنا بہ الشیخ المعمر محمد بن عبدالعزیز المنوفی وھو اول حدیث سمعتہ منہ قال حدثنی بہ الشیخ المعمر ابو الخیر ابن غموس الرشیدی وھو اول حدیثہ قال حدثنی بہ شیخ الاسلام القاضی زکریا وھو اول حدیثہ قال اخبرنی بہ الحافظ احمد بن حجر العسقلانی وھو اول حدیث سمعتہ منہ قال حدثنی بہ الحافظ ابو الفضل زین الدین عبدالرحیم بن الحسین العراقی وھو اول حدیثہ قال حدثنی بہ الشیخ محمد بن المیدومی وھو اول حدیثہ قال حدثنی بہ النجیب ابوالفرج عبداللطیف بن عبدالمنعم الحرانی وھو اول حدیثہ قا ل حدثنی بہ ابو الفرج عبدالرحمن بن علی بن علی الجوزی  الحافظ وھو اول حدیثہ قال حدثنی بہ ابوسعید اسمعیل بن ابی صالح المؤذن النیسابوری وھو اول حدیثہ قال حدثنی بہ والدی ابوصالح وھو اول حدیثہ قال حدثنا ابوطاھر محمد بن محمد بن محمش الزیادی وھو اول حدیثہ قال حدثنا ابوحامد احمد بن محمد بن یحیی البزاز ــ بزائٍ مکررۃ ــ وھو اول حدیثہ قال حدثنا عبدالرحمن بن بشر بن الحکم النیسابوری وھو اول حدیث سمعتہ منہ قا ل حدثنا بہ سفیان بن عیینۃ وھو الحدیث سمعتہ منہ (والیہ ینتھی التسلسل بالاولیۃ علی الاصح) عن عمرو بن دینار عن ابی قابوس مولی عبداللہ بن عمرو بن العاص عن عبداللہ بن عمرو بن العاص رضی اللہ عنھما ان رسول اللہ ﷺ قال: الرّاحمون یرحمھم الرحمن تبارک وتعالی، ارحموا من فی الارض یرحمکم من فی السماء ــ قال الترمذی حسن صحیح وجمع طرقہ جماعۃ وھو اصح المسلسلات ــ وأیضا اخرجہ الامام البخاری فی الکنی والأدب المفرد، و الحمیدی فی مسندہ ابویعلی الزعفرانی وابوداؤد فی سندہ واخرجہ الامام احمد وابوبکر بن ابی شیبۃ وصححہ الحاکم وفیہ تحریک السلسلۃ الرحمۃ من اول وھلۃ  اما صحیح الامام الھمام ابی عبداللہ محمد بن اسمعیل البخاری علیہ رحمۃ اللہ الباری فانی ارویہ ــ وللہ الحمد ــ باعلی سند یوجد فی الدنیا الاٰن عن جملۃ من المشائخ الاعیان منھم شیخی واستاذی مولانا السید محمد علی ظاھری الوتری المدنی المتقدم ذکرہ وھو یرویہ عن شیخہ الشیخ عبدالمغنی المتقدم بن العلامۃ الحافظ الشیخ محمد عابد الانصاری السندی ثم المدنی عن خاتمۃ المحدثین الشیخ صالح العمری الفلّانی ثم المدنی عن المعمر العلامۃ الشیخ محمد بن سنّۃ العمری الفلّانی عن العلامۃ ابی الوفا احمد بن العجل الیمنی المکی عن مفتی مکۃ العلامۃ قطب الدین محمد بن احمد النھر والی عن العلامۃ ابی الفتوح الطاؤسی عن المعمر العلامۃ بابایو سف الھروی المشہور بسہ صد سالہ ای المعمر ثلث مائۃ سنۃ عن المعمر محمد بن شاذ بخت الفارسی الفرغانی عن المعمر الابدال بسمرقند ابی لقمان یحیی بن عمّار بن مقبل بن شاھان الختّلانے عن ابی عبداللہ محمد بن یوسف بن مطر الفربری عن الامام الھمام البخاری وھذہ طریقۃ المعمر ین فیکون بینی  وبینہ اثنتا عشرۃ واسطۃ فتقع لی ثلاثیا لہ بستۃ عشر وھذا اعلی مایوجد وللہ الحمد ومنھم الشیخ الاجل والامام الاکمل قطب الارشار رحلۃ العباد من اقصی البلاد مجدد المائۃ الحاضرۃ حجۃ اللہ تعالی علی العالمین حافظ الحدیث مولانا الشیخ محمد بدرالدین الدمشقی مدظلہ العالی تبرک بنقل الفاظ الشریفۃ ملخصا من اجازاتہ المنیفۃ افتخارا بانتسابی الیہ واشعارا ببذل افضالہ واکرامہ علی بمالا مزید علیہ فقال مداللہ تعالی ظلالہ اما بعد! فان الاسناد من الدین والاٰخذ بہ متمسک بالحبل المتین ــ فمن ثم عکف اھل العلم علیہ وتوجھت مطایا ھممھم الیہ ــ ولما کان منھم مولانا الشیخ محمد اعظم حسین الصدیقی الخیرآبادی نزیل بوفال ــ وفقہ اللہ تعالی لارشاد العباد وسھل اللہ لنا ولہ طریق السداد ــ فطلب منی الاجازۃ التی ھی امان عند اقتخام المفازۃ وانی لمثلی ان یستجاز وھل یقال بھذا الجوار الا انہ حسن فی ظنہ ــ اثابہ اللہ تعالی علی قصدہ الجنۃ ــ فاجزتہ بالمعقول والمنقول من فروع واصول کما اجازنی بذلک فضلاء العصر وجھابذۃ مصر منھم بحر الفضلاء ومغترف الفحول والنبلاء افضل من عنہ یتلقی العلامۃ الشیخ ابراھیم السقا عن الامام المھذب العلامۃ الشیخ ثعیلب عن العلامۃ الشھاب الملوی ذی النور فی الدیجور عن الامام الشیخ عبداللہ بن سالم صاحب الثبت المشھود وعن العلامۃ الشیخ محمد الامیر عن والدہ الشیخ الکبیر وقد ذکر فی ثبتہ الاسانید مفصلۃ لاتحتاج الی مزید ۔ فروی صحیح البخاری عن العلامۃ الشیخ علی الصعیدی حال قراء تہ بالجامع الازھر عن العلامۃ الشیخ محمد ابن احمد عقیلۃ المکی عن الشیح حسن بن علی العجیمی عن الشیخ احمد بن محمد العجلی الیمنی عن الامام یحیی الطبری قال اخبرنا البرھان ابراہیم بن محمد بن صدقۃ الدمشقی عن الشیخ عبد الرحمن بن عبد الاول الفرغانی عن ابی عبدالرحمن محمد بن شاذان بخت الفرغانی الی اخر السند المتقدم ــ ضاعف اللہ تعالی لہ الاجور ونورا العالم بطول بقائہ ــ الی ممر الاعوام والشھورــ  واما بقیہ اسانیدی فی باقی الکتب الستۃ وغیرھا من کتب الحدیث وسائر الفنون النقلیۃ والعقلیۃ، فانھا مذکورۃ فی اثبات مشائخی و مشائخھم کالمسلسلات الوتریۃ و ثبت شیخ شیخناالمسمی بالیانع الجنی من اسانید الشیخ عبدالغنی وثبت شیخہ المسمی بحصر الشارد من اسانید محمد عابد وثبت شیخ مشائخی العلامۃ محمد الامیر الکبیرــ وقد اجزت العارف باللہ المرشد الواصل مولانا محمد انواراللہ ــ ادام ظلہ وابقاہ ــ بشرطھا المعتبر لدی اھل الحدیث والاثر،موصیالی ولہ بتقوی اللہ تعالی سرا وعلنا وان یخشی اللہ تعالی ولا یعجب بنفسہ فقد قالﷺ ــ کفی بالمرء علما ان یخشی اللہ وکفی بالمرء اثما ان یعجب بنفسہ ــ واوصیہ ان لا ینسانی من صالح دعواتہ فی خلواتہ وجلواتہ ــ نفعہ اللہ تعالی ونفع بہ ووصل سببنا اجمعین بسببہ انہ علی ذلک قدیر وبالاجابۃ جدیر ــ وصلی اللہ تعالی علی سیدنا ومولانا محمد وعلی جمیع اخوانہ من الانبیاء والمرسلین وآلہ و صحبہ والتابعین وعلینا معھم اجمعین۔

الحد یث المسلسل بالضیافہ

واماالحدیث المسلسل بالضیافہ علی الاسودین التمر والماء فکذلک ارویہ بالطرق المتعددۃ بعضھا اعلی من بعض۔ منھا ما اضافنی شیخی واستاذی ومرشدی مولانا شاہ عبدالقیوم ــقدس سرہ ــ فی دارہ علی الاسودین التمر والماء وحدث بہ وقال اضافنی علی الاسودین التمر والماء مولانا الشیخ محمد اسحق المحدث وحدث بہ قال حدثنابہ واضافنا علی الاسودین التمر والماء شیخنا ومولانا شاہ عبدالعزیز المحدث الدھلوی قال اضافنا وحدثنا بہ الشیخ الاجل مولانا شاہ ولی اللہ المحدث الدھلوی الی اٰخر ما ھو مذکور فی مسلسلاتہ عن شیخہ مولانا الشیخ ابی طاھر المدنی و منھا ما ارویہ مع الضیافۃ عن شیخی واستاذی العلامۃ المحقق الفھامۃ مولانا السید محمد علی ظاھر الوتری المدنی ــ قدس سرہ ــ فاقتصر علی سندہ و احیل الباقی علی ماھو مفصل فی اثبات شیوخ شیوخنا ــ روح اللہ تعالی ارواحھم ــ واقول اضافنا علی الاسودین التمر والماء شیخنا العلامۃ السید محمد علی ظاھر الوتری المدنی مرتین فی دارہ عند باب الرحمۃ فی المدینۃ المنورۃ ــ زادھا اللہ تعالی شرفا ونورا ــ وحدث بحدیث الضیافۃ وقال اضافنا علیھما شیخنا العلامۃ مولانا الشیخ عبد الغنی المجددی الفاروقی النقشبندی الدھلوی ثم المدنی وھو یروی الحدیث مع الضیافۃ علیھما عن شیخہ الشیخ اسمعیل اٰفندی الرومی وھو عن شیخہ محمد بن عبدالرحمن الکزبری مع الضیافۃ علیھما وھو عن والدہ الشیخ عبدالرحمن الکزبری مع الضیافۃ علیھما وھو عن الشیخ العلامۃ الشیخ محمد بن عقیلۃ المکی صاحب لمسلسلات مع الضیافۃ علی الاسودین التمر الماء قال الشیخ محمد بن احمد عقیلۃ اخبرنا بہ واضافنا الشیخ الصالح الناسک حسین بن عبدالرحیم رحمہ اللہ تعالی ــ علی الاسودین التمر والماء۔ قال اخبرنی بہ العلامۃ الشیخ احمد بن محمد بن ناصر واضافنی علی الاسودین التمر والماء قال اخبرنی بہ العلامۃ عبداللہ العیاشی واضافنی کذلک وقال اخبرنی بہ سیدی ابومھدی عیسی بن محمد الثعالی الجعفری واضافنی کذلک وقال اضافنی سیدی سعید بن ابراہیم الجزائری الشھیر بقدورہ واضافنی کذلک قال اخبرنی بہ ابوعثمان سعید المقری واضافنی کذلک قال اخبرنی بہ سیدی الشیخ محمد ابوھرانی واضافنی کذلک قال اخبرنی بہ سیدی الامام ابراہیم التازی واضافنی کذلک قال اخبرنی ابوالفتح محمد بن الحسین المراغی بالمدینۃ المشرفۃ وقرء علینا قال اخبرنی الحافظ نفیس الدین سلیمان بن ابراہیم العلوی الیمنی بقراء تی علیہ بتغرہ قال اخبرنی بہ والدی اجازۃ قال اخبرنیہ تقی الدین عمر بن علی الشعبی قال اضافنی القاضی فخرالدین الظیری بمنزلہ بربید علی الاسودین التمر والماء  قال اضافنی فخرالدین محمد ابراہیم الجبرتی الفاسی قال اضافنا الحافظ ابوالعلاء الھمدانی بھما اضافنی ابوبکر عبدالفرج الکاتب المعروف بابن اخت الطویل الھمدانی قال اضافنا ابو جعفر محمد بن الحسین بن احمد الصوفی علیھما قال اضافنی علی بن الحسین الواعظ علیھما قال اضافنا ابوشیبۃ احمد بن احمد بن ابراہیم العطار المخزومی بالبردان علیھما قا ل اضافنی جعفر بن محمد بن عاصم الدمشقی علیھما قال اضافنا نوفل بن اھاب علیھما قال اضافنی عبداللہ بن میمون القداح علیھما قال اضافنا الامام جعفر الصادق ــ رضی اللہ تعالی عنہ ــ علیھما۔ قال اضافنا ابو جعفر محمد باقر ــ رضی اللہ تعالی عنہ ــ علیھما ــ قال اضافنا ابی علی بن الحسین ــ رضی اللہ تعالی عنہما ــ علیھما ــ قال اضافنی ابی الحسین بن علی بن ابی طالب ــ کرم اللہ تعالی وجہہ ــ علی الاسودین التمر والماء ــ قال اضافنی رسول اللہ ﷺ ۔ علی الاسودین التمر والماء ــ ثم قال من اضاف مؤمنا فکانما اضاف اٰدم علیہ السلام ــ ومن اضاف مؤمنین فکانما اضاف اٰدم وحواء ــ ومن اضاف ثلثۃ فکانما اضاف جبرائیل ومیکائیل واسرافیل ــ ومن اضاف اربعۃ فکانما قرأ التوراۃ والانجیل والزبور والفرقان ــ ومن اضاف خمسۃ فکانما صلی الصلوات الخمس فی الجماعۃ من یوم خلق اللہ الخلق الی یوم القیمۃ ــ ومن اضاف ستۃ فکانما اعتق ستین رقبۃ من ولد اسماعیل ــ ومن اضاف سبعۃ غلقت عنہ سبعۃ ابواب جھنم ــ ومن اضاف ثمانیۃ فتحت لہ ثمانیۃ ابواب الجنۃ ــ ومن اضاف تسعۃ کتب اللہ لہ حسنات بعدد من عصاہ من اول یوم خلق اللہ الخلق ای یوم القیمۃ ــ ومن اضاف عشرۃ کتب اللہ لہ اجر من صلی وصام وحج واعتمر الی یوم القیمۃ۔

ا لحدیث ا لمسلسل با لمصا فحۃ

اما الحدیث المسلسل بالمصافحۃ فکذلک ارویہ عن اشیاخ کثیرۃ منھا ما ارویہ مع المصافحۃ عن شیخی ومرشدی واستاذی مولانا الشیخ عبدالقیوم قدس سرہ وھو یرویہ مع المصافحۃ عن شیخہ مولانا الشیخ محمد اسحاق المحدث وھو عن شیخہ مولانا شاہ عبدالعزیز المحدث الدھلوی وھو عن شیخہ وابیہ مولانا شاہ ولی اللہ المحدث الدھلوی الی اٰخر ما ذکر فی مسلسلاتہ ــ ومنھا ما ارویہ مع المصافحۃ عن شیخی واستاذی الثقۃ الثبت الرحلۃ مولانا السید محمد علی ظاھر الوتری المدنی ــ قدس سرہ ــ وھو یرویہ مع المصافحۃ عن شیخہ العلامۃ مولانا الشیخ عبدالغنی المتقدم ذکرہ وھو عن شیخہ الشیخ اسمعیل اٰفندی الرومی مع المصافحۃ وھو عن شیخہ الشیخ محمد بن عبدالرحمن الکزبری مع المصافحۃ وھو عن والدہ وھو عن شیخہ العلامۃ الشیخ محمد بن احمد عقیلۃ المکی صاحب المسلسلات الی  اٰخر ما ذکرہ فی مسلسلاتہ ومنھا ما ارویہ عن الشخ المعمر السید عبداللہ بن درویش الرکابی السکری الدمشقی و صافحتہ بکفی ھذا کفہ الشریف وسمعت منہ حدیث المصافحۃ فکتب ھو فی اجازتہ وقا ل بلسانہ صافحت الشیخ محمد اعظم حسین حین مجیئہ الی دمشق الشام ذاھبا الی الحج الشریف بکفی ھذا الذی ھو احد عشر کفا إلی سیدنا رسول اللہﷺ فانی قد صافحت بکفی ھذا کلا من شیخنا فقیہ النفس من یکنی بابی حنیفۃ الصغیر سیدی الشیخ سعید الحلبی وشیخنا المحدث الکبیر والعلامۃ النحریر سیدی الشیح عبدالرحمن الکربزی وھما یرویانہ عن والد الثانی العلامۃ الشیخ محمد بن عبدالرحمن الکزبری و ھو یرویہ عن والدہ العلامۃ الشیخ عبدالرحمن الکزبزی وھو یرویہ عن المسند المحدث الشیخ محمد بن احمد عقیلۃ المکی قال فی مسلسلاتہ وقد صافحنی الشیخ البرکۃ الشیخ احمد بن محمد النخلی قال ــ قد صافحنا العارف باللہ الکبیر مولانا الشیخ تاج الدین النقشبندی قا ل صافحنی الشیخ عبدالرحمن الشھیر بحاجی رمزمی قال صافحنی الشیخ الحافظ علی الا وھی قال صافحنا الشیخان الشیخ محمود الاسفزازی والسید امیر علی الھمدانی قالاصافحنا ابوسعید الحبشی الصحابی المعمر قال صافحنی النبیﷺ ثم قال الشیخ محمد بن احمد عقیلۃ المکی فی مسلسلاتہ ھذا السند کلہ مشتمل علی النقاۃ الاجلاء العلماء العرفاء ــ وعلی ھذا السند رونق القبول فتکون ید العبد الفقیر سابع ید الی رسول اللہﷺ ــ فحینئذ تکون ید العبد الفقیر محمد اعظم حسین الصدیقی ثانی عشر ید الی سیدنا رسول اللہ ﷺ ــ ویروی السید عبداللہ السکری الموصوف بسند اٰخر متصل بالمعمر الی العباس المُلَثَّم قال کذلک صافحنی رسول اللہﷺ قال من صافحنی او صافح من صافحنی الی یوم القیامۃ دخل الجنۃ فاجزت بھا واذنت لہ ان یصافح ویجیز اھل الصلاح ۔

سند دلائل الخیرات

واما دلائل الخیرات فانی ارویھا بطرق متعددۃ بعضھا اعلی من بعض نازلۃ وعالیۃ اما النازلۃ فانی ارویھا عن شیخی واستاذی السید محمد بن السید احمد بن السید رضوان شیخ الدلائل فی الحرم الشریف النبوی علی صاحبھا الف صلوۃ وسلام زکی بقراء تی علیہ من اولھا الی اٰخرھا وعن شیخی واستاذی امام العصر مولانا السید محمد علی ظاھر الوتری المدنی المتقدم وھما یرویان عن شیخھما العلامۃ البرکۃ الصالح السید علی افندی بن یوسف ملک باشلی الحریری المدنی عن العلامۃ السید محمد بن احمد الشریف المدغری عن ابی البرکات سیدی محمد بن احمد بن احمد المثنی عن العلامۃ سیدی احمد بن الحاج عن العلامۃ سیدی عبدالقادر الفاسی عن العلامۃ سیدی احمد المقری عن سیدی احمد بن ابی العباس الصمعی عن سیدی احمد بن موسی السملانی عن سیدی عبدالعزیز التباع عن مؤلفھا سیدی السید محمد بن الجزولی الشریف الحسنی ــ واما العالیۃ وھی اعلی بدرجتین وھو اعلی سند یوجد فی الدنیا الاٰن کما اخبربذلک ارباب ھذا الشان فعن شیخنا العلامۃ مولانا السید محمد علی ظاھر الوتری المدنی المتقدم عن شیخہ العلامۃ الشیخ عبدالغنی المجددی المتقدم عن العلامۃ الشیخ اسمعیل افندی المدنی عن العلامۃ محمد افندی اخسخوی عن العلامۃ السید مرتضی الزبیدی شارح الاحیاء والقاموس عن العلامۃ محی الدین نور الحق بن عبداللہ الحسینی عن السید سعداللہ بن محمد الھندی عن المعمر الشیخ عبدالشکور الحسنی عن مؤلفھا ــ قدس اللہ تعالی سرہ ــ
سند البردۃ الشریفۃ
واما البردۃ الشریفۃ فانی ارویھا ایضا بطریق متعددۃ عن الشیوخ الکثیرۃ بعضھم ارباب المجاھدات والدعوات فیھا بترک الحیوانات والاقتصار علی اللقیمات من خبز الشعیرات الی اثنتی عشرۃ سنۃ جالسا شط البحار فی الفلوات وبعضھم من العاملین فیھا متورعا من الشبھات واقتصر منھا علی السند الذی فیہ العلولقلۃ الوسائط وتوثیق الرواۃ فانی ارویھا عن الشیخ الاجل الامام الاکمل العارف باللہ تعالی مولانا السید محمد علی ظاھر الوتری المدنی المتقدم ذکرہ وھو یرویھا عن شیخہ العلامۃ المحقق الفھامۃ المدقق الشیخ احمد منۃ اللہ المالکی الازھری تلمیذ الامیر الکبیر صاحب الثبت الشھیر عن العلامۃ الشیخ ممد البھییٔ المالکی عن العلامۃ الشیخ یوسف الشباسی الصریر عن الاستاذ السکندری المعروف بالصباغ عن سیدی محمد الزرقانی عن العلامۃ سیدی علی الاجھوری عن العلامۃ سیدی النور القرافی عن الامام الحافظ جلال الدین السیوطی عن العلامۃ سیدی العز عبدالرحیم بن الفرات عن العلامۃ سیدی العزبن جماعہ عن ناظمھا العلامۃ الامام محمد بن سعید بن حماد البوصیری ــ روح اللہ تعالی روحہ وعطر ضریحہ ونفعنا بأسرارہ ــ آمین۔

سندالحزب الأعظم

واما الحزب الاعظم والورد الافخم فانی ارویہ عالیا عن شیخی واستاذی مولانا السید محمد علی ظاھر الوتری المتقدم عن شیخہ الشیخ عبدالغنی المتقدم عن العلامۃ الشیخ اسمعیل اٰفندی عن المحدث العلامۃ الشیخ صالح العمری الفلّانی ثم المدنی عن المعمر العلامۃ الشیخ محمد بن سنۃ العمری الفلّانی عن المعمر مولای الشریف محمد بن عبداللہ ولولاتی المغربی عن مفتی مکۃ العلامۃ الشیخ عبدالقادر الطبری الحسینی المکی عن جامعہ الملاعلی القاری ح ویرویہ عالیا مولای الشریف محمد عن جامعہ الملاعلی القاری نفعنا اللہ تعالی بعلومھم آمین واما احزاب الامام الشاذلی العشرۃ ومنھا حزب البحر وغیرہ فانی ارویھا عن شیخی وسیدی مولانا السید محمد علی ظاھر الوتری الموصوف بالاسناد المتقدم فی البردۃ الشریفۃ الی النور القرافی عن الحافظ القلقشندی عن الامام الواسطی عن الامام المیدومی عن سیدی ابی العباس المرسی عن العارف باللہ تعالی الامام الشاذلی ــ روح اللہ تعالی روحہ وعطرضریحہ واما حزب الامام النووی  وسائر تالیفاتہ فانی ارویھا عن شیخی واستاذی مولانا السید محمد علی ظاھر الوتری المتقدم عن شیخہ العلامۃ الشیخ احمد منۃ اللہ المالکی الازھری عن العلامۃ محمد الامیر الکبیر عن العلامۃ الاستاذ محمد الحفنی عن العلامۃ البدری عن البرھان ابراہیم الکورانی عن العارف سیدی احمد القشاشی عن العارف سیدی احمد بن علی الشناوی عن والدہ عن سیدی عبدالوھاب الشعرانی عن البرھان بن ابی شریف المقدسی عن البدر القبابی سیدی محمد بن الخبّاز عن مؤلفہ الامام محی الدین محمد النووی ـ روح اللہ تعالی روحہ و عطر ضریحہ ــ
سند المناولۃ بالسبحۃ
واما سند المناولۃ بالسبحۃ فقد ناولنی السبحۃ الشیخ الکامل العارف باللہ تعالی مولانا السید محمد علی ظاھر الوتری المدنی المتقدم مرتین فی المدینۃ المنورۃ زادھا اللہ تعالی شرفا ونورا اولا فی السنۃ الخامسۃ وثانیا فی السنۃ الاحدی والعشرین بعد الف وثلثمائۃ ورأیت فی یدہ السبحۃ قال ناولنی العارف باللہ تعالی الشیخ عبدالغنی المتقدم ورأیت فی یدہ السبحۃ قال ناولنی الشیخ اسمعیل افندی الرومی ورأیت فی یدہ السبحۃقال :ناولنی لشیخ محمدبن عبدالرحمن الکزبری ورأیت فی یدہ السبحۃ قال ناولنی والدی الشیخ عبدالرحمن الکزبری ورأیت فی یدہ السبحۃ قال ناولنی الشیخ محمد بن احمد عقیلۃ المکی جامع السلسلات السبحۃ قال : ناولنی شیخنا الشیخ عبداللہ بن سالم البصری المکی ورأیت فی یدہ السبحۃ قال: ناولنی سیخناابوعثمان المقری رأیت فی یدہ السبحۃ اخبرنا سید احمد حجّی وفی یدہ سبحۃ اخبرنا السید ابراہیم الشناوی وفی یدہ سبحۃ عن ابی الفتح المراغی وفی یدہ سبحۃ عن ابی العباس احمد بن ابی بکر الردادی وفی یدہ سبحۃ عن مجد الدین محمد بن یعقوب بن محمد الفیروزآبادی اللغوی وفی یدہ سبحۃ عن جمال الدین یوسف بن محمد القرمزی وفی یدہ سبحۃ عن تقی الدین ابی الثنا محمود بن علی وفی یدہ سبحہ عن مجدالدین عبدالصمد بن ابی ن الجیش ابی الحسن وفی یدہ سبحۃ عن ابیہ وفی یدہ سبحۃ عن ابی الفضل محمد بن الناصر وفی یدہ سبحۃ عن محمد بن عبداللہ بن احمد السمرقندی وفی یدہ سبحۃ عن ابی بکر محمد بن علی السلامی الحدادوفی یدہ سبحۃ عن ابی نصر عبدالوھاب بن عبداللہ بن عمرو وفی یدہ سبحۃ عن ابی الحسن علی بن الحسن بن قاسم الصوفی وفی یدہ سبحۃ قال سمعت ابا الحسن المالکی وقد رأیتہ وفی یدہ سبحۃ فقلت یا اُستاذو انت الی الاٰن مع السبحۃ فقال کذا رأیت استاذی الجنید وفی یدہ سبحۃ فقلت یا استاذو انت الی الاٰن مع السبحۃ قال کذا رأیت استاذی السری بن مفلس السقطی و فی یدہ سبحۃ فقلت یا استاذ وانت الی الاٰن مع السبحۃ ــ قال کذا رأیت استاذی معروف الکرخی وفی یدہ سبحۃ فسئلتہ عما سئلتنی عنہ فقال کذا رأیت استاذی بشر الحافی وفی  یدہ سبحۃــ فسئلتہ عما سئلتنی عنہ فقال رأیت استاذی عمر المکی وفی یدہ سبحۃ فسئلتہ عما سئلتنی عنہ فقال رأیت استاذی الامام الحسن البصری وفی یدہ سبحہ فقلت یااستاذ مع عظم شانک وحسن عبادتک وانت الی الاٰن مع السبحۃ فقال ھذا شیٔ کنا استعملناہ فی البدایات ما کنا لنترکہ فی النھایات انا احب ان اذکراللہ بقلبی ویدی ولسانی فقط

أعظم الإجازات فی الطرق العالیات

بسم اللہ الرحمن الرحیم
الحمدللہ رب العالمین والعاقبۃ للمتقین والصلوۃ والسلام علی اشرف المرسلین سیدنا ونبینا ومولانا محمد وعلی اٰلہ واصحابہ اجمعین اما بعد! فیقول العبد الضعیف المعترف بالعجز والتقصیر الراجی عفو ربہ العزیز القدیر محمد اعظم حسین الصدیقی الحنفی الخیراٰبادی مولداً والداعی بمنہ سبحانہ ان یجعلہ المدنی اخرہ عھداً ھذہ عدۃ من الافاضات الشریفۃ والاجازات اللطیفۃ التی من اللہ سبحانہ بمنحہ علیّ مع ما فیّ من النقص والعجز و التقصیر بغیرالجد والاجتھاد والتشمیر من السادۃ العظام والشیوخ الکرام ائمۃ السلوک والمعارف والحقائق والتفسیر جمعتھا فی ھذہ الاوراق تحدیثا لنعمۃ الرب المنعم الکبیر وتذکرۃ للاخلاف ووردا باسماء السادۃ الصالحین تنزیلا للرحمۃ +وطلبا للکرامۃ+کماورد من احادیث سیدنا البشیر النذیرﷺ تنزل الرحمۃ عند ذکر الصالحین وتوسلا فی الدعوات الصالحات امتثا لا وانقیاد المانطق بہ الکتاب المنیر یا ایھا الذین اٰمنوا اتقواللہ وابتغوا الیہ الوسیلۃ من اجلھا واولھا ما وصل الی الحقیر من الشیخ الاستاذ والسند الملاذ مرشد الحقائق شیخ الطرائق بقیۃ السلف الصالحین مسلک المریدین الی مقامات العارفین مولانا شاہ عبدالقیوم قدس اللہ تعالی ـــ سرہ العزیزـــ فھو فی الحقیقۃ شیخی ومرشدی فی السلوک والطریقۃ اصل نسبتی الیہ وجلّ انتفاعی لدیہ بایعت بیعۃ الارادۃ علی یدیہ ودخلت فی المشغولیۃ بطرق الصوفیۃ الصافیۃ مع قرأۃ بعض الکتب من السلوک علیہ وکان ــ قدس سرہ ــ قطب دائرۃ الارشاد ونخبۃ اھل التحقیق فی الطریق من العباد فاجازنی ھو ــ قدس سرہ ــ عند السفرالی الاوطان الذی سافر فیہ من ھذہ الدار الی دار الجنان اجازۃ باللسان مصرحا فیھا بالاجازہ التامۃ المطلقۃ العامۃ فی ارشاد الطرق العالیۃ والقاء الذکر وتدریس العلوم الظاھریۃ والباطنیۃ واعطانی الشجرۃ الطیبۃ القادریۃ ٓــ علی ساداتھا السلام والتحیۃــ مرتبۃ باللسان الفارسیۃ فناسبنی ان اوردھا بحروفھا من غیر تبدیل اللسان والھیئۃ وبھا یجنی اثمار الاتصال والانسلال لی سیدنا ومولانا سید العالمین خیر البریۃ علیہ افضل الصلوۃ واکمل التحیۃ۔

حواشی و حوالہ جات

(۱)مولانا آعظم حسین الخیر آبادی:الشیخ العالم الصالح اعظم حسین بن لطف حسین الحنفی الخیر آبادی احد کبار العلماء، ولد ونشا بخیر آباد، وقرأ العلم علی العلامۃ عبدالحق ابن فضل حق العمری الخیرآبادی وعلی غیرہ من العلماء ، ثم سافر إلی بھوپال وقرأ الصحاح والسنن علی مولانا عبدالقیوم بن عبدالحی البکری البرہانوی وأخذ عنہ الطریقۃ ولازمہ مدۃ، ولم یزل موظفا في بھوپال إلی أن توفی وفی کل عصر کان مشارا إلیہ في الفقہ والدیانۃ مع الاستقامۃ علی الطریقۃ والصلاح الظاہر، لقیتہ غیر مرۃ في بھوپال، وکان ہاجر إلی الحجاز في آخر عمرہ وأقام بہا نحو عشر سنین۔مات فی سنۃ سبع وثلاثین وثلاثمائۃ والف بالمدینۃ المنورۃ۔
(عبد الحی الحسنی، نزہۃ الخواطر جلد۸، ص۶۳، دائرۃ المعارف العثمانیہ حیدرآباد ۱۹۵۹ء)
(۲) یہ سند حدیث نبوی و دیگر اسنادات عظیم تر کتب خانہ جامعہ نظامیہ حیدرآباد دکن میں موجود ہیں۔ (مرتب)
٭٭٭