بہتر پیشہ:

logomaqbooliya

  افضل پیشہ جہاد ، پھر تجارت ، پھر کھیتی باڑی ، پھر صنعت وحرفت ہے ، علمائے کرام نے فرمایا کہ جا ئز پیشو ں میں تر تیب ہے کہ بعض سے بعض اعلیٰ ہیں ۔
  جن پیشو ں سے دین ودنیا کی بقا ہے دو سرے پیشو ں سے افضل ہیں چنا نچہ بہترصنعت دینی تصنیف اور کتا ب ہے کہ اس سے قرآ ن وحدیث او رسارے دینی علوم کی بقا ہے ۔ پھر آٹے کی پسائی اور چاول کی صاف کرائی کہ اس سے نفس انسان کی بقا ہے ۔ پھر روئی دھنائی،سو ت کتا ئی اور کپڑا بننا ہے کہ اس سے ستر پوشی ہے پھر درزی گر ی کا پیشہ بھی کہ اس کا بھی یہی فا ئدہ ہے ۔ پھر رو شنی کا سامان بنانا کہ دنیا کو اس کی بھی ضرورت ہے۔ پھر معماری ، اینٹ بنانا(بھٹہ) اورچونے کی تیاری ہے کہ اس سے شہر کی آبادی ہے ۔ رہی زرگری ، نقاشی ، کار چو بی ، حلوہ سازی ، عطر بنانا یہ پیشے جائزہیں مگر ان کا کوئی خاص درجہ نہیں کیونکہ فقط زینت کے سامان ہیں ۔ خلاصہ یہ ہے کہ بیکاررہنا بڑاجرم ہے اور ناجائز پیشے کرنا اس سے بڑھ کر جرم،رب تعالیٰ نے ہاتھ پاؤں وغیرہ بر تنے کے لئے دیئے ہیں نہ کہ بیکار چھوڑنے کے لئے۔  (تفسیر نعیمی،تفسیر عزیزی)