ذَوقِ نَعت ۱۳۲۶ھ برادرِ اعلیٰ حضرت شہنشاہِ سخن مولانا حسن رضا خان

ذاتِ والا پہ بار بار دُرود

ذاتِ والا پہ بار بار دُرود بار بار اور بے شمار دُرود رُوئے اَنور پہ نور بار سلام زُلفِ اَطہر پہ مشکبار دُرود اس مہک پر شمیم بیز سلام اس چمک پہ فروغ بار دُرود ان کے ہر جلوہ پر… Read More

سحابِ رحمت باری ہے بارہویں تاریخ

سحابِ رحمت باری ہے بارہویں تاریخ کرم کا چشمۂ جاری ہے بارہویں تاریخ ہمیں تو جان سے پیاری ہے بارہویں تاریخ عدو کے دل کو کٹاری ہے بارہویں تاریخ اسی نے موسم گل کو کیا ہے موسم گل بہار فصل… Read More

جو نور بار ہوا آفتابِ ُحسنِ َملیح

جو نور بار ہوا آفتابِ ُحسنِ َملیح ہوئے زمین و زماں کامیابِ ُحسنِ َملیح زوال مہر کو ہو ماہ کا جمال گھٹے مگر ہے اَوجِ اَبد پر شبابِ ُحسنِ َملیح زمیں کے پھول گریباں دَریدۂ غمِ عشق فلک پہ بدر… Read More

دشتِ مَدینہ کی ہے عجب پربہار صبح

دشتِ مَدینہ کی ہے عجب پربہار صبح ہر ذَرَّہ کی چمک سے عیاں ہیں ہزار صبح مونھ دھو کے جوئے شیر میں آئے ہزار صبح شامِ حرم کی پائے نہ ہرگز بہار صبح لِلّٰہ اپنے جلوۂ عارِض کی بھیک دے… Read More

کیا مژدۂ جاں بخش سنائے گا قلم آج

کیا مژدۂ جاں بخش سنائے گا قلم آج کاغذ پہ جو سو ناز سے رکھتا ہے قدم آج آمد ہے یہ کس بادشہِ عرش مکاں کی آتے ہیں فلک سے جو حسینانِ اِرَم آج کس گل کی ہے آمد کہ… Read More

پڑے مجھ پر نہ کچھ اُفتاد یاغوث

پڑے مجھ پر نہ کچھ اُفتاد یاغوث مدد پر ہو تیری اِمداد یاغوث اُڑے تیری طرف بعد فنا خاک نہ ہو مٹی مری برباد یاغوث مِرے دل میں بسیں جلوے تمہارے یہ وِیرانہ بنے بغداد یاغوث نہ بھولوں بھول کر… Read More

جاں بلب ہوں آ مری جاں اَلْغِیَاث

جاں بلب ہوں آ مری جاں اَلْغِیَاث ہوتے ہیں کچھ اور ساماں اَلْغِیَاث دَرد مندوں کو دَوا ملتی نہیں اے دَوائے دَردمنداں اَلْغِیَاث جاں سے جاتے ہیں بے چارے غریب چارہ فرمائے غریباں اَلْغِیَاث حد سے گزریں دَرد کی بے… Read More

باغ جنت کے ہیں بہرِ مَدح خوانِ اَہلِ بیت

باغ جنت کے ہیں بہرِ مَدح خوانِ اَہلِ بیت تم کو مژدہ نار کا اے دُشمنانِ اَہلِ بیت کس زباں سے ہو بیاں عز و شانِ اَہل بیت مَدح گوئے مصطفی ہے مَدح خوانِ اَہل بیت ان کی پاکی کا… Read More

پرنور ہے زمانہ صبحِ شبِ وِلادت

پرنور ہے زمانہ صبحِ شبِ وِلادت پردہ اُٹھا ہے کس کا صبحِ شبِ وِلادت جلوہ ہے حق کا جلوہ صبحِ شبِ وِلادت سایہ خدا کا سایہ صبحِ شبِ وِلادت فصل بہار آئی شکل نگار آئی گلزار ہے زمانہ صبحِ شبِ… Read More

جانبِ مغرب وہ چمکا آفتاب

جانبِ مغرب وہ چمکا آفتاب بھیک کا مشرق سے نکلا آفتاب جلوہ فرما ہو جو میرا آفتاب ذَرَّہ ذَرَّہ سے ہو پیدا آفتاب عارضِ پرنور کا صاف آئینہ جلوۂ حق کا چمکتا آفتاب یہ تجلی گاہِ ذاتِ بحت ہے زُلف… Read More