جنت کا موسم اور جنت کے درخت

logomaqbooliya

جنت کا موسم :

جنت میں دنیا کی مثل گرمی یا سردی کی شدت کا سامنا نہیں ہوگا بلکہ اس میں انتہائی خوشگوار اور معتدل موسم ہو گا ،قرآن حکیم میں ہے ،

لَا یَرَوْنَ فِیۡہَا شَمْسًا وَّ لَا زَمْہَرِیۡرًا ﴿ۚ۱۳﴾

ترجمہ کنزالایمان : نہ اس میں دھوپ دیکھیں گے نہ ٹھڑ (سخت سردی)۔”

(پ۲۹، سورۃالدھر: ۱۳ )

جنت کے درخت:

حضرت سیدناابوہریرہ رضی اللہ تعالی عنہ سے مروی ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ تعالی علیہ وسلم نے ارشاد فرمایا:”جنت میں ہردرخت کا تنا سونے کا ہے ۔”

(ترمذی، کتاب صفۃ الجنۃ ،رقم الحدیث۲۵۳۳،ج۴، ص۲۳۶)

حضرتِ سیدنا براء بن عازب رضی اللہ تعالی عنہ اللہ عز وجل کے فرمان وَ ذُلِّلَتْ قُطُوۡفُہَا تَذْلِیۡلًا ﴿۱۴﴾ ترجمہ کنزالایمان :اور اس کے گچھے جھکا کرنیچے کردیے گئے ہوں گے۔(پ۲۹،الدھر : ۱۴) ” کی تفسیر میں فرماتے ہیں کہ” اہلِ جنت جنت کے پھل بیٹھے ہوئے اورلیٹ کر کھا سکیں گے۔”

(الترغیب والترھیب ،کتاب صفۃ الجنۃ والنار ، رقم ۶۱، ج۴، ص۱۱)