حدائق بخشش

دُشمنِ احمد پہ شدّت کیجیے

دُشمنِ احمد پہ شدّت کیجیےمُلحِدوں     کی کیا مروَّت کیجیےذِکر اُن کا چھیڑیے ہر بات میں    چھیڑنا شیطاں     کا عادت کیجیےمثلِ فارس زلزلے ہوں     نجد میں    ذکرِ آیاتِ وِلادت کیجیےغیظ میں     جل جائیں     بے دِینوں   … Read More

حرزِ جاں ذِکرِ شفاعت کیجیے

حرزِ جاں     ذِکرِ شفاعت کیجیےنار سے بچنے کی صورت کیجیےاُن کے نقشِ پا پہ غیرت کیجیےآنکھ سے چھپ کر زیارت کیجیے اُن کے حسنِ با ملاحت پر نثارشیرئہ جاں     کی حلاوت کیجیےاُن کے در پر جیسے ہو مِٹ جائیےناتوانو!… Read More

سنتے ہیں کہ محشر میں صرف اُن کی رسائی ہے

سُنتے ہیں     کہ محشر میں     صرف اُن کی رَسائی ہےگر اُن کی رَسائی ہے لو جب تو بن آئی ہےمچلا ہے کہ رحمت نے اُمید بندھائی ہےکیا بات تِری مجرم کیا بات بَنائی ہےسب نے صف محشر میں … Read More

نہ عرشِ ایمن نہ اِنِّیْ ذَاھِبٌ میں میہمانی ہے

نہ عرشِ ایمن نہ  اِنِّیْ ذَاھِبٌ(1) میں     میہمانی ہےنہ لطف اُدْنُ یَا اَحْمَد(2)نصیب لَنْ تَرَانِی(3)ہےنصیبِ دوستاں     گر اُن کے دَر پر مَوت آنی ہےخدا یُوں     ہی کرے پھر تو ہمیشہ زِندگانی ہےاُسی دَر پر تڑپتے ہیں   … Read More

نبی سرورِ ہر رسول و ولی ہے

نبی سرورِ ہر رسول و ولی ہےنبی   راز     دارِ      مَعَ    اللّٰہ   لِی   ہےوہ نامی کہ نامِ خُدا نام تیرارؤف و رحیم و علیم و علی ہےہے بیتاب جس کے لئے عرشِ اعظم وہ اس رہروِ لامکاں   … Read More

سُونا جنگل رات اندھیری چھائی بدلی کالی ہے

سُونا جنگل رات اندھیری چھائی بدلی کالی ہےسونے والو! جاگتے رہیو چوروں     کی رکھوالی ہےآنکھ سے کاجل صَاف چُرا لیں     یاں     وہ چور بلا کے ہیں    تیری گٹھری تاکی ہے اور تُو نے نیند نکالی ہےیہ جو… Read More

گنہ گاروں کو ہا ِتف سے نوید خوش مآلی ہے

گنہ گاروں     کو ہاتِف سے نوید خوش مآلی ہےمُبارک ہو شفاعت کے لئے احمد سا والی ہےقضا حق ہے مگر اس  شوق  کا  اللّٰہ  والی ہےجو اُن کی راہ میں     جائے وہ جان اللّٰہوالی ہےتِرا قدِّ مبارک گلبنِ… Read More

اندھیری رات ہے غم کی گھٹا عصیاں کی کالی ہے

اندھیری رات ہے غم کی گھٹا عصیاں     کی کالی ہےدلِ بے کس کا اِس آفت میں     آقا تُو ہی والی ہےنہ ہو مایوس آتی ہے صَدا گورِ غریبَاں     سےنبی اُمّت کا حامی ہے خدا بندوں     کا… Read More

اُٹھا دو پردہ دِکھا دو چہرہ کہ نورِباری حجاب میں ہے

اُٹھا دو پردہ دِکھا دو چہرہ کہ نُورِ باری حجاب میں     ہےزمانہ تاریک ہورہا ہے کہ مہر کب سے نقاب میں     ہےنہیں     وہ میٹھی نگاہ والا خدا کی رحمت ہے جلوہ فرماغضب سے اُن کے خدا بچائے… Read More

عرش کی عقل دنگ ہے چرخ میں آسمان ہے

عرش کی عقل دنگ ہے چرخ میں     آسمان ہےجانِ مُراد اب کدھر ہائے تِرا مکان ہےبزمِ ثنائے زُلف میں     میری عروسِ فکر کوساری بہارِ ہشت خلد چھوٹا سا عِطر دان ہےعرش پہ جا کے مرغِ عقل تھک کے… Read More