Naatiya Shayeri

وہ سرورِ کشورِ رسالت جو عرش پر جلوہ گر ہوئے تھے

معراج نظم نذر گدا بحضور سلطان الانبیا عَلَیْہ اَفْضَلُ الصَّلٰوۃِ وَالثَّنَادَر تہنیت شادی اَسراوہ سرورِ کشورِ رسالت جو عرش پر جلوہ گر ہوئے تھےوہ سرورِ کشورِ رسالت جو عرش پر جلوہ گر ہوئے تھےنئے نِرالے طرب کے ساماں     عرب… Read More

بھینی سُہانی صبح میں ٹھنڈک جِگر کی ہے

حاضری درگاہ ابدی پناہ وَصل دوم رنگ عشقی۱۳۲۴ھبھینی سُہانی صبح میں     ٹھنڈک جِگر کی ہےبھینی سُہانی صبح میں     ٹھنڈک جِگر کی ہےکلیاں     کِھلیں     دِلوں     کی ہوا یہ کِدھر کی ہےکھبتی ہوئی نظر میں     ادا… Read More

شکر خدا کہ آج گھڑی اُس سفر کی ہے

حاضریِ بارگاہ بہیں    جاہ وَصل اَوّل رنگ علمی حضور جان نور ۱۳۲۴ھشکر خدا کہ آج گھڑی اُس سفر کی ہےشکر خدا کہ آج گھڑی اُس سفر کی ہےجس پر نِثار جان فلاح و ظفر کی ہےگرمی ہے تپ ہے درد… Read More

دُشمنِ احمد پہ شدّت کیجیے

دُشمنِ احمد پہ شدّت کیجیےمُلحِدوں     کی کیا مروَّت کیجیےذِکر اُن کا چھیڑیے ہر بات میں    چھیڑنا شیطاں     کا عادت کیجیےمثلِ فارس زلزلے ہوں     نجد میں    ذکرِ آیاتِ وِلادت کیجیےغیظ میں     جل جائیں     بے دِینوں   … Read More

حرزِ جاں ذِکرِ شفاعت کیجیے

حرزِ جاں     ذِکرِ شفاعت کیجیےنار سے بچنے کی صورت کیجیےاُن کے نقشِ پا پہ غیرت کیجیےآنکھ سے چھپ کر زیارت کیجیے اُن کے حسنِ با ملاحت پر نثارشیرئہ جاں     کی حلاوت کیجیےاُن کے در پر جیسے ہو مِٹ جائیےناتوانو!… Read More

سنتے ہیں کہ محشر میں صرف اُن کی رسائی ہے

سُنتے ہیں     کہ محشر میں     صرف اُن کی رَسائی ہےگر اُن کی رَسائی ہے لو جب تو بن آئی ہےمچلا ہے کہ رحمت نے اُمید بندھائی ہےکیا بات تِری مجرم کیا بات بَنائی ہےسب نے صف محشر میں … Read More

نبی سرورِ ہر رسول و ولی ہے

نبی سرورِ ہر رسول و ولی ہےنبی   راز     دارِ      مَعَ    اللّٰہ   لِی   ہےوہ نامی کہ نامِ خُدا نام تیرارؤف و رحیم و علیم و علی ہےہے بیتاب جس کے لئے عرشِ اعظم وہ اس رہروِ لامکاں   … Read More

نہ عرشِ ایمن نہ اِنِّیْ ذَاھِبٌ میں میہمانی ہے

نہ عرشِ ایمن نہ  اِنِّیْ ذَاھِبٌ(1) میں     میہمانی ہےنہ لطف اُدْنُ یَا اَحْمَد(2)نصیب لَنْ تَرَانِی(3)ہےنصیبِ دوستاں     گر اُن کے دَر پر مَوت آنی ہےخدا یُوں     ہی کرے پھر تو ہمیشہ زِندگانی ہےاُسی دَر پر تڑپتے ہیں   … Read More

سُونا جنگل رات اندھیری چھائی بدلی کالی ہے

سُونا جنگل رات اندھیری چھائی بدلی کالی ہےسونے والو! جاگتے رہیو چوروں     کی رکھوالی ہےآنکھ سے کاجل صَاف چُرا لیں     یاں     وہ چور بلا کے ہیں    تیری گٹھری تاکی ہے اور تُو نے نیند نکالی ہےیہ جو… Read More

گنہ گاروں کو ہا ِتف سے نوید خوش مآلی ہے

گنہ گاروں     کو ہاتِف سے نوید خوش مآلی ہےمُبارک ہو شفاعت کے لئے احمد سا والی ہےقضا حق ہے مگر اس  شوق  کا  اللّٰہ  والی ہےجو اُن کی راہ میں     جائے وہ جان اللّٰہوالی ہےتِرا قدِّ مبارک گلبنِ… Read More