خوشبوئے دشت ِطیبہ سے بس جائے گر دِماغ

خوشبوئے دشت ِطیبہ سے بس جائے گر دِماغ
مہکائے بوئے خلد مرا سر بسر دِماغ

پایا ہے پائے صاحب معراج سے شرف
ذَرَّاتِ کوئے طیبہ کا ہے عرش پر دِماغ

مومن فدائے نور و شمیم حضور میں
ہر دِل چمک رہا ہے مُعَطَّر ہے ہر دِماغ

ایسا بسے کہ بوئے گل خلد سے بسے
ہو یادِ نقش پائے نبی کا جو گھر دِماغ

آباد کر خدا کے لئے اپنے نور سے
ویران دِل ہے دل سے زیادہ کھنڈر دِماغ

ہر خارِ طیبہ زینتِ گلشن ہے عندلیب
نادان ایک پھول پر اتنا نہ کر دِماغ

زاہد ہے مستحق کرامت گنہگار
اللّٰہ اکبر اتنا مزاج اس قدر دِماغ

اے عندلیب خارِ حرم سے مثالِ گل
بک بک کے ہرزہ گوئی سے خالی نہ کر دِماغ

بے نور دِل کے واسطے کچھ بھیک مانگتے
ذَرَّاتِ خاکِ طیبہ کا ملتا اگر دِماغ

ہر دَم خیالِ پاک اِقامت گزیں رہے
بن جائے گھر دِماغ نہ ہو رہ گزر دِماغ

شاید کہ وصف پائے نبی کچھ بیاں کرے
پوری ترقیوں پہ رَسا ہو اگر دِماغ

اس بد لگام کو خر دَجَّال جانئے
منہ آئے ذِکر پاک کو سن کر جو خر دِماغ

اُن کے خیال سے وہ ملے امن اے حسنؔ
سر پر نہ آئے کوئی بلا ہو سپر دِماغ

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *