Our website is made possible by displaying online advertisements to our visitors. Please consider supporting us by whitelisting our website.

واہ کیا مرتبہ اے غوث ہے بالا تیرا

واہ کیا مرتبہ اے غوث ہے بالا تیرا
اُونچے اُونچوں     کے سَروں     سے قدَم اعلیٰ تیرا
سر بھلا کیا کوئی جانے کہ ہے کیسا تیرا
اولیا ملتے ہیں     آنکھیں     وہ ہے تلوا تیرا
 کیا دَبے جس پہ حِمایت کا ہو پنجہ تیرا
 شیر کو خطرے میں     لاتا نہیں     کُتّا تیرا
تُو حُسینی حَسَنی کیوں نہ محی الدّیں     ہو
اے خِضَرمَجْمَعِ بَحْرَیْن ہے چشمہ تیرا
قسمیں (1)دے دے کے کھلاتا ہے پلاتا ہے تجھے
پیارا    ا  للّٰہ   تِرا   چاہنے   والا  تیرا 
مصطفیٰ کے تن ِبے سایہ کا سایہ دیکھا 
جس نے دیکھامری جاں     جلوۂ زیبا تیرا
اِبنِ زَہرا کو مبارک ہو عَروسِ قدرت 
قادِری پائیں     تصدّق مرے دُولہا تیرا
کیوں     نہ قاسِم ہو کہ تُو ابنِ ابی القاسم ہے 
کیوں     نہ قادِر ہو کہ مختار ہے بابا تیرا 
نبوی مینھ علوی فصل بتولی گلشن 
حَسنی پھول حُسینی ہے مہکنا تیرا 
نبوی ظِل عَلوی برج بتولی منزل 
حَسنی چاند حُسینی ہے اُجالا تیرا 
نبوی خُور عَلَوی کوہ بتولی مَعْدِن 
حَسنی لعل حُسینی ہے تجلّا تیرا 
بحروبر(1)شہر و   قُریٰ سہل و حُزُن دشت و چمن
کون سے چَک پہ پہنچتا نہیں     دعویٰ تیرا
حُسنِ نیّت ہو خطا پھر کبھی کرتا ہی نہیں     
آزمایا ہے یگانہ ہے دوگانہ تیرا 
عرضِ اَحوال کی پیاسوں     میں     کہاں     تاب مگر
آنکھیں     اے اَبر ِکرم تکتی ہیں     رَستا تیرا 
موت نزدیک گناہوں     کی تَہیں     مَیل کے خول
آ برس جا کہ نہا دھو لے یہ پیاسا تیرا 
آب آمد وہ کہے اور میں     تیمم برخاست
مُشتِ خاک اپنی ہو اور نُور کا اَہلا تیرا 
جان تو جاتے ہی جائے گی قیامت یہ ہے
کہ یہاں     مرنے پہ ٹھہرا ہے نظّارہ تیرا
تجھ  سے در درسے سگ اور سگ سےہےمجھکونسبت
میری گردن میں     بھی ہے دُور کا ڈورا تیرا
اس نشانی کے جو سگ ہیں     نہیں     مارے جاتے
حَشْر تک میرے گلے میں     رہے پٹّا تیرا
میری قسمت کی قَسَم کھائیں     سگانِ بغداد
ہِند میں     بھی ہُوں     تو دیتا رہوں     پہرا تیرا
تیری عزّت کے نثار اے مِرے غیرت والے
آہ صد آہ کہ یُوں     خوار ہو   ِبروا تیرا
بد سہی، چور سہی، مجرم و ناکارہ سہی 
اے وہ کیسا ہی سہی ہے تو کریما تیرا 
مجھ کو رُسوا بھی اگر کوئی کہے گا تو یوں     ہی
کہ وہی نا، وہ رضاؔ بندۂ رُسوا تیرا 
ہیں    رضاؔ یُوں     نہ بلک تو نہیں     جَیِّ(1)تو نہ ہو
سیِّدِ جَیِّدِ ہر دَہر ہے مولیٰ تیرا 
فخرِ آقا میں     رضاؔ اور بھی اِک نظمِ رفیع 
چل لکھا لائیں     ثنا خوانوں     میں     چہرا تیرا
خاکِ   مَدینہ
  فرمانِ مصطفی صلَّی اللّٰہ تعالٰی عَلَــیْہِ وَسَلَّم: ’’ غُبَارُ الْمَدِیْنَۃِ شِفَائٌ مِّنَ  الْجُذَامِ۔‘‘
یعنی مَدینہ مُنوَّرہ کی خاکِ پاک جُذام کے لیے شِفا ہے۔
(الجامع الصغیرللسیوطی،   الحدیث:۵۷۵۳،ص۳۵۵،دارا  لکتب العلمیۃ بیروت)
________________________________
امام احمدرضا خان
________________________________
1 – ۔۔۔ سیّدنا  رَضِیَ اللّٰہُ تَعَالٰی عَنْہُ فَرمُود کہ مَرامی فرمایَنْدْ: یَا عَبْدَ الْقَادِر بِحَقِّیْ عَلَیْکَ کُلْ وَ بِحَقِّیْ عَلَیْکَ اِشْرِبْ۔۔۔ الخ۔۱۲منہ
1 – ۔۔۔ حضرتِ شیخ مُحِیُّالدّین عبدالقادررَضِیَ اللّٰہُ تَعَالٰی عَنْہُ دَر اَوائل ِعمر اَصحاب رامی فَرمود کہ َاولیاءِ عِراق مَرا تسلیم کردَہ اَند ، بعد اَز مُدَّتے فَرمود کہ اِیں     زمانِ جمیع زمین ِشَرْق و غَرب و بَرو بَحروسَہل و جَبل مَرا تسلیم کردَہ اَند، وہیچ ولی اَزاَولیاء نَمانْد دَرا ن وقت مگرآں     کہ بَرشیخ آمْد و تسلیم کَرْد اُ و رَا        بَہ قُطبِیَّت ۔۱۲تحفہ قادریہ۔
1 – ۔۔۔ اشارہ بقولِ او   رَضِیَ اللّٰہُ تَعَالٰی عَنْہُ  ’’ وَ اِنْ لَّمْ یَکُنْ مُرِیْدِیْ جَیِّدًا فَاَنَا جَیِّدٌ ‘‘۔۱۲
error: Content is protected !!