Our website is made possible by displaying online advertisements to our visitors. Please consider supporting us by whitelisting our website.

نبی سرورِ ہر رسول و ولی ہے

نبی سرورِ ہر رسول و ولی ہے
نبی   راز     دارِ      مَعَ    اللّٰہ   لِی   ہے
وہ نامی کہ نامِ خُدا نام تیرا
رؤف و رحیم و علیم و علی ہے
ہے بیتاب جس کے لئے عرشِ اعظم 
وہ اس رہروِ لامکاں     کی گلی ہے
نکیرین کرتے ہیں     تعظیم میری
فِدا ہو کے تجھ پر یہ عزّت ملی ہے
طلاطم ہے کشتی پہ طوفانِ غم کا
یہ کیسی ہوائے مخالف چلی ہے
نہ  کیوں      کر  کہوں       یا حبیبی  اَغِثْنِی(1)
اِسی نام سے ہر مصیبت ٹلی ہے
صبا ہے  مجھے صرصرِ دشتِ طیبہ 
اِسی سے کلی میرے دِل کی کِھلی ہے
تِرے چاروں     ہمدم ہیں     یک جان یک دِل
ابوبکر فاروق عثمان علی ہے
خدا نے کیا تجھ کو آگاہ سب سے
دو عالم میں     جو کچھ خفی و جلی ہے
کروں     عرض کیا تجھ سے اے عالِم السِّر
کہ تجھ پر مری حالتِ دِل کُھلی ہے
تمنّا ہے فرمایئے روزِ محشر
یہ تیری رِہائی کی چِٹھی مِلی ہے
جو مقصد زِیارت کا بر آئے پھر تو
نہ  کچھ  قصد  کیجے  یہ  قصدِ  دِلی  ہے
تِرے در کا دَرباں     ہے جبریلِ اعظم
تِرا مدح خواں     ہر نبی و ولی ہے
شفاعت کرے حشر میں     جو رضاؔ کی
سِوا تیرے کس کو یہ قُدرت مِلی ہے
٭…٭…٭…٭…٭…٭
________________________________
1 – ۔۔۔ :  میرے پیارے میری فریاد کو پہنچو۔۱۲
error: Content is protected !!