Our website is made possible by displaying online advertisements to our visitors. Please consider supporting us by whitelisting our website.

ساعۃ مع العارف الکبیر الشیخ العلامۃ محمد انوار اللّٰہ الفاروقی رحمہ اللّٰہ

ساعۃ مع العارف الکبیر
الشیخ العلامۃ محمد انوار اللّٰہ الفاروقی رحمہ اللّٰہ

فضیلۃ الشیخ الدکتور المقری محمد غوث الحیدرآبادی،موسس دارالعلوم الاسلامیۃ بأمریکا

کان الشیخ محمد أنوار اللہ رحمہ اللہ قندھاري الأصل، شریف النسب، فأســرۃ أنوار اللہ لم تنبت إلا أنوار اللہ، ذلک فضل اللہ یؤتیہ من یشاء واللّہ ذو الفضل العظیم۔
تعلم الشیخ کما کان یتعلم شباب زمانہ فی بلادہ اللغۃ الفارسیۃ والعربیۃ علی نھج الدروس النظامیۃ ولم یمیّز بھا إلاّ بدارسۃ واسعۃ فی الفلسفۃ الاسلامیۃ والتصوف وغیرھما، ودرس بالصبا فی حیدرآباد وفاز بمناصب جلیلۃ وساح سیاحۃ طویلۃ فی الأقطار الاسلامیۃ وراح إلی مکۃ المکرمۃ، فاکتسب بذلک تجارب علمیۃ واسعۃ وخبرۃ عریضۃ بمعاشرۃ العرب، ولما وقعت فی بلاد حیدرآباد متنازعات سیاسیۃ عمن یتولی الوزارۃ  الدینیۃ قام مقام وزیر الشؤون الدینیۃ ففاق أقرانہ وصار صدر الصدور وشیخ الاسلام فی عھد الحکومۃ الاسلامیۃ وخوطب لفضلہ بلقب ’’فضیلت جنغ‘‘ وکان أحق بہ۔
فی ذاک الوقت کان الأدب والثقافۃ ملکا علی الولاۃ والحکام فکل حاکم کان سید الوجود  فی زمانہ یأکل مال الناس غصبا ولایلام علیہ من غضب، ولکن یمدح علی ما أنفق، فالفن والأدب والشعر والنثر کل ھذا کان موسیقی لطربہ، الأدیب الصغیر مداح للغنی الصغیر، والأدیب الکبیر مداح للأمیر الکبیر، فطلع أنوار اللہ رحمہ اللہ فسخّر الأدب لخدمۃ الشعب یطالب بحقوقہ ویدفع الظلم عنہ ویحرض الناس أن یخرجوا من الظلمات إلی النور، أراد الشیخ أن ینادي إلی إصلاح المسلمین دینا وسیاسۃ واجتماعا علی غراز المسلمین المصلحین فی عھد الخلفاء الراشدین رضی اللہ عنھم من حیث العقیدۃ والصفات الحمیدۃ۔
إن حیــاۃ الشیخ مملوء ۃ بالدعوۃ الحــارۃ إلی الدین و التوحید، إنہ من کبار أولیاء اللہ ومن عظام العارفین۔
تشرفت بولادتہ بلاد حیدرآباد رابع ربیع الآخر سنۃ أربع وستین ومائتین بعد الألف (۱۲۶۴ ھ) فی ناندیر من أعمال حیدرآباد ان ذاک، وحکم علی القلوب والأرواح بینما کان الملوک فی عصرہ یحکمون الناس علی أجسامھم و أموالھم، وأعرض عن الدنیا فسقطت علی قدمیہ۔
وھکذا شأن العارفین فی کل زمان أنھم یزھدون فی الدنیا ونعیمھا فتنھال علیھم الدنیا بنعیم لا یتصورہ الملوک والاغنیاء، ویرغبون عن المناصب والأموال، فتأتی إلیھم المناصب والأموال طائعۃ مذللۃ بطریق لا یعرفہ أھل المناصب العظیمۃ وأصحاب العزۃ الرفیعۃ من أھل الدنیا، وکلما قطع الانسان علاقتہ عن المظاھر والأسباب المادیۃ ورجع إلی اللہ بقلبہ وقالبہ رجع اللہ إلیہ قائلا:
سل! تعطہ، استغفر! تغفر! ادع! تستجب۔ انقطع الشیخ محمد انوار اللہ رحمہ اللہ إلی تزکیۃ الروح وتصفیۃ القلب کما أتاہ اللہ من الحکمۃ والمعرفۃ نصیبا وافرا۔
وقد رزقہ اللہ أستاذا من کبار أسـاتذۃ ھذا الطریق مثل الشیخ عبدالحي الفرنجی محلی فقد مدحہ بھامش شرح السلم لملامبین وذکرہ بلفظ ’’الولد الذکي‘‘ وأعطاہ اللہ مرشدا فلم یوجد لہ نظیر فی المعرفۃ الألھیۃ والتزکیۃ الروحیۃ، أعنی بہ الشیخ إمداد اللہ رئیس المشایخ فی عصرہ الذی بلغ الدرجۃ العلیا من الحکمۃ والمعرفۃ، فاستفاد منہ الشیخ أنوار اللہ ما أوصلہ إلی اللہ وبلغ بہ إلی قمۃ العز والمجد والشرف وإن الطریقۃ التی یتصل بھا الشیخ کانت تھدف إلی قیادۃ دینیۃ للملک سلطان العلوم ومربی ھذہ الجامعۃ النواب میر عثمان علی خان۔ متعنا اللہ بطول حیاتہ زمنا طویلا حتی تقوم الدولۃ الاسلامیۃ علی أساس الدین والعقیدۃ وینشأ المجتمع الاسلامی صحیحا، یحمل فی أبنائہ وأعضائہ روحا وثابۃ للسیطرۃ علی الأوضاع الفاسدۃ۔
قام الشیخ باصلاح نزعات الدولۃ الفاسدۃ فی عصرہ والقضاء علی الشبھات والفتن الجدیدۃ التی ثارت حول الاسلام وجرحت روح الدین والتفکیر فی مستقبل الاسلام والمسلمین فی ھذہ البلاد۔ وفی ناحیۃ أخری ما قطع صلتہ عن الملوک والأمراء وما أعرض عنھم لکی یفھموا کلامہ ویعملوا بنصائحہ۔
وقدوجد الشیخ عصر ملکین تتابعا فی عرش حیدرآباد واحد ا إثر آخر، وکان الشیخ أستاذھما الشفیق۔ إن الشیخ أنواراللہ رحمہ اللہ اھتم بأمور الدولۃ وأحوال المسلمین بالغ الاھتمام، وکان دائم التفکیر فی مستقبل الاسلام والمسلمین شدید الحرص علی أن یری للاسلام دولۃ تقام فیھا الحدود وتنفذ فیھا الشرائع الاسلامیۃ وتکون فیھا للمسلمین کلمۃ نافـذۃ، وکان یحب أن یقبل تلمیذہ السلطان النواب میر عثمان علی خان علی إصلاح الأحوال و أن یبسط نـفوذہ حسبما یأمرہ الاسلام، ویفھم أنہ خلیفۃ اللہ فی أرضہ بالعدل فلا یعلو ولا یطغی بل یتبع آثار خلفاء الاسلام ویتخذھم أسوۃ ویصوغ حیاتہ فی قالبھم حتی یعود للاسلام شوکتہ المثلومۃ وللمسلمین مجدھم السالف۔ إنہ أراد تربیۃ الملوک والأمراء وأراد أن یریھم أن الدنیا وکل ما فیھا شیٔ تافہ لا قیمہ لہ فی جنب ما ھیأ اللہ تعالی من نعیم الجنۃ لمن استخدم الدنیا کوسیلۃ، ولم یتخذھا غایۃ۔
إن المنصب الذی کان یشتغل بہ الشیخ أزال من قلبہ دوافع العــداوۃ والانتقام بتاتا و استوی فی نظرہ الصدیق والعدو، فکان یدعو لأعدائہ الذین یتربصون بہ الدوائر علی الدوام۔
وقد رزقہ اللہ عاطفۃ جیاشۃ من الحب والشفقۃ وخاصۃ کان یحب المسلمین ومریدیہ وطلابہ حبا یفوق حب الأم الحنون لولدھا، ولیس مصدر ھذا الحب لدی ھؤلاء المشایخ والعارفین إلا مما ورثوہ من الأنبیاء علیھم الصلاۃ والسلام۔
ألف الشیخ کتبا کثیرۃ  فی أحکام الاسلام والرد علی الباطل وھی: ۱۔مقاصد الاسلام،  ۲۔وإفادۃ الأفھام،  ۳۔وحقیقۃ الفقہ،  ۴۔والکلام المرفوع فیما یتعلق بالحدیث الموضوع،  ۵۔وشمیم الأنوار،  ۶۔وأنوار اللہ الودود فی مسألۃ وحدۃ الوجود۔ وغیرھا۔
ومن کلماتہ:۔ قال مرۃ! إن الزھد فی الدنیا لیس معناہ أن یخلع الانسان ملابسہ ویلف خرقۃ فیجلس فی مکان متعزل عن الناس، وإنما الزھد فی الدنیا أن یتمتع الانسان بلذائذھا حق التمتع ولکن لا یقبل علی جمعھا، ولا یعلق قلبہ بشیٔ منھا۔
وقال: إن الطاعۃ علی نوعین: لازم ومتعد، فاللازم: ما یحصر نفعہ فی حیاۃ المطیع مثل الصلاۃ، والصیام، والحج، والأوراد، والأذکار، وأما الطاعۃ المتعدیۃ: فھی ما یتعدی نفعہ إلی غیر المطیع کالاصلاح بین الخصمین والشفقۃ علی الناس، وھذا النوع من الطاعۃ لیس لثوابہ حد ولا نھایۃ۔
إن لتربیۃ الشیخ رحمہ اللہ تأثیرا واسعا عمیقا فی النفوس والقلوب حتی تجاوز ھذا التأثیر حیدرآباد مقر الشیخ إلی أرجاء الھند وخارجھا علی السواء۔
واستفاد الناس من ھذہ النفحات العلیۃ والبرکات القدسیۃ عظیم الاستفادۃ، ووجدوا فیھا ضالتھم فأمنوا بعد الخوف، واھتدوا إلی سبیل الرشد بعد أن کانوا یتخبطون فی سبیل الغی، وعلموا أن النجاح کلمۃ فی أن یتصل الانسان باللہ ویوثق معہ صلتہ۔
إن للشیخ رحمہ اللہ فضلا عظیما مجتمع إسلامی رشید فی ھذہ البلاد الفاخرۃ، والذی نراہ الیوم من وعی دینی فی القلوب واھتمام بالشعائر الدینیۃ والعمل بھا فی أکثر طبقات المسلمین والذی نراہ الیوم من آثار إسلامیۃ من المدارس والمعاھد والجوامع والزوایا، ومن احترام مظاھر الاسلام وقوانینہ، إنما یرجع الفضل فی ذلک إلی جھودہ الضخمۃ التی بذلھا فی إصلاح المجتمع بحیدرآباد، وقد بعث الروح الدینیۃ فی القلوب، وتلک خصال لاینساھا التأریخ علی مر العصور والأجیال۔
ومن أعمالہ الأخری
أن الشیخ أسس الجامعۃ النظامیۃ فی ھذہ البلاد۔ وأراد بدرسہ النظامی توسیع عقول الطلبۃ وتعلیم الحربۃ فی البحث۔
وقبل وفاتہ بشھر أخذتہ حالۃ من الحیرۃ والإستغراق وجس الطبیب نبضہ وقال: إن الشیخ مریض بمرض السرطان، وبعد ذلک جرحہ الطبیب وقال: لا باس طھور إن شاء اللہ، وإذا أفاق قلیلا کان یقول: ھذایوم الجمعۃ یتذکر فیہ الحبیب وعد حبیبہ، وکان یسأل فی نفس ھذہ الحالۃ : ألم یدخل وقت الصلاۃ، وھل صلیت أنا! وھکذا یردد ذلک ویقرأ أورادہ، واستمرت ھذہ الحالۃ إلی وقت وفاتہ (۳۰/ ربیع الآخر/ ۱۳۳۶ھ)۔ 
والحقیقۃ أن الحیاۃ التی عاشھا الشیخ تمثل حیاۃ المسلم المؤمن وتصور السلوک الانسانی والسیرۃ المثالیۃ التی یتوخاھا الاسلام فی أتباعہ ویطلبھا من کل من یؤمن بکلمۃ اللہ العلیا، ولا شک فی أن مصدر ذلک کلہ إنما ھی الصلۃ الوثیقۃ باللہ تعالی والرجوع إلیہ بجمیع قلبہ وقالبہ فی کل عمل مبتغیا وجھہ متوخیا رضاہ۔
وبالجملۃ ! کان رحمہ اللہ قلیل الاحتفال بالمآ کل والمشارب، قلیل النوم کثیر السھر، قوی العارضۃ فی الرد علی فرق الضلال، کان لہ مذھب فی الکلام، ھو رفیع النسب عزیز الحسب، عظیم الجاہ عالی المنزلۃ فی دینہ وشرفہ، وفی ناحیۃ أخری کان قائدا ممتازا وفاز بمناصب جلیلۃ أصلح بلاد الدکن إصلاحا تاما۔
ویحلو لی فی ھذہ المناسبۃ أن أختتم کلامی ھذا بما کتبہ الامام الغزالی رحمہ اللہ فی کتابہ ’’المنقذ من الضلال‘‘ وھو یتحدث عن حقیقۃ التصوف وطریق السعادۃ والیقین فیقول۔
’’إنی علمت یقینا أن الصوفیۃ ھم السالکون لطریق اللہ تعالی خاصۃ، وأن سیرتھم أحسن السیر وطریقتھم أصوب الطرق وأخلاقھم أزکی الأخلاق، بل لو جمع عقل العقلاء وحکمۃ الحکماء وعلم الواقفین علی أسرار الشرع من العلماء لیغیروا شیأ من سیرھم وأخلاقھم ویبدلوہ بما ھو خیر منہ لم یجدوا إلیہ سبیلا، فان جمیع حرکاتھم وسکناتھم فی ظاھرھم وباطنھم مقترسۃ من نور مشکاۃ النبوۃ ولیس وراء نور النبوۃ علی وجہ الأرض نور یستضاء بہ‘‘۔
وقد فاز الشخ أنواراللہ بأنوار ھذہ المشکاۃ الفاخرۃ نور اللہ مرقدہ بالأنوار الساطعۃ۔
وختاما، أشکر سلطان العلوم النواب میر عثمان علی خان لا زالت شموس أفضالہ طالعۃ۔ علی  ما أعان ھذہ الجامعۃ وصار مربیا و وقاھا حوادث ھذا الزمان الذی ثارت فیہ الفتن وأرجوہ أن یکرم أستاذہ ویزید فی نظر مایحکم مالیتھا إحکاما تاما۔
وأتشرف بخطابہ، وأقول أیھا الملک الماجد الھمام! أبقاکم اللہ حرزا للإسلام والمسلمین، وسیفا مسلولا علی الباطل یمحی بہ الظلام، فی عیش رغید، وظل ظلیل، وعز وشرف، وتکلأکم عین اللہ تعالی وینصرکم بتأییدہ۔
وأدعواللہ أن یبقیکم علی أبناء ھذہ الجامعۃ ویرفع شأنکم فی ھذہ البلاد۔
وأھنئکم علی جھودکم البالغۃ ویجعل اللہ سعیکم مشکورا۔ وتفضلوا بقبول لائق التحیۃ وفائق الاحترام والإجلال۔ 
٭٭٭ 
error: Content is protected !!