Our website is made possible by displaying online advertisements to our visitors. Please consider supporting us by whitelisting our website.

ذاتِ والا پہ بار بار دُرود

ذاتِ والا پہ بار بار دُرود
بار بار اور بے شمار دُرود

رُوئے اَنور پہ نور بار سلام
زُلفِ اَطہر پہ مشکبار دُرود

اس مہک پر شمیم بیز سلام
اس چمک پہ فروغ بار دُرود

ان کے ہر جلوہ پر ہزار سلام
ان کے ہر لمعہ پر ہزار دُرود

ان کی طلعت پہ جلوہ ریز سلام
ان کی نکہت پہ عطر بار دُرود

جس کی خوشبو بہارِ خلد بسائے
ہے وہ محبوبِ گل عذار دُرود

سر سے پا تک کرور بار سلام
اور سراپا پہ بے شمار دُرود

دل کے ہمراہ ہوں سلام فدا
جان کے ساتھ ہو نثار دُرود

چارۂ جان درد مند سلام
مرہمِ سینۂ فگار دُرود

بے عدد اور بے عدد تسلیم
بے شمار اور بے شمار دُرود

بیٹھتے اٹھتے جاگتے سوتے
ہو الٰہی مرا شعار دُرود

شہریارِ رُسل کی نذر کروں
سب دُرودوں کی تاجدار دُرود

گورِ بیکس کو شمع سے کیا کام
ہو چراغِ سرِ مزار دُرود

قبر میں خوب کام آتی ہے
بیکسوں کی ہے یارِ غار دُرود

انہیں کس کی دُرود کی پروا
بھیجے جب ان کا کردِگار دُرود

ہے کرم ہی کرم کہ سنتے ہیں
آپ خوش ہو کے بار بار دُرود

جان نکلے تو اس طرح نکلے
تجھ پر اے غمزدوں کے یار دُرود

دل میں جلوے بسے ہوئے تیرے
لب سے جاری ہو بار بار دُرود

اے حسنؔ خارِ غم کو دِل سے نکال
غمزدوں کی ہے غمگسار دُرود

error: Content is protected !!