Our website is made possible by displaying online advertisements to our visitors. Please consider supporting us by whitelisting our website.

صدقۂ فطر کیا ہے ،اس کا شرعی حکم کیا ہے ،اور یہ کس پرواجب ہے؟ نصاب اور مالک نصاب سے کیا مراد ہے؟

سوال: فطرانہ کیا ہوتا ہے؟❤️♡︎
جواب:☜︎︎︎ رمضان کے بعد اور نماز عید ادا کرنے سے پہلے دیا جانے والا صدقہ واجبہ کو فطرانہ کہتے ہیں (فیضان زکوۃ ، ص 111)

سوال: صدقۂ فطر اور فطرانہ میں کیا فرق ہے؟
جواب:☜︎︎︎کوئی فرق نہیں ، ایک ہی چیز کے دو مختلف نام ہیں ، بلکہ اس کو فطرہ ، زکٰوۃ الفطر ، زکٰوۃ رمضان ، زکٰوۃ صوم کے نام سے بھی تعبیر کیا جاتا ہے۔(فیروزالغات ، ص933)🌻

سوال: صدقۂ فطر پہلی بار کب شروع ہوا؟
جواب:۞☜︎︎︎ صدقۂ فطر ادا کرنے کا پہلی بار حکم 2 ہجری میں عید سے دو دن پہلے دیا گیا تھا۔(در مختار)🌸

سوال: صدقۂ فطر کا شرعی حکم کیا ہے؟
جواب: ۞☜︎︎︎صدقۂ فطر دینا واجب ہے۔(درمختار)🌹✫
سوال: صدقۂ فطر کس پر واجب ہے؟
جواب:☜︎︎︎ صدقۂ فطر ہر اس آذاد مسلمان پر واجب ہے جو مالکِ نصاب ہو ، اور اس کا نصاب حاجت اصلیہ سے فارغ ہو۔
👈(باپ پر واجب ہے کہ وہ اپنے چھوٹے بچوں کا فطرانہ ادا کرے جبکہ وہ مالک نصاب ہو).

سوال: نصاب سے کیا مراد ہے؟
جواب: ☜︎︎︎ساڑھے سات تولے سونا(87.48گرام) ، یا ساڑھے باون تولے چاندی(612.41 گرام) ، یا اتنی مالیت کی رقم۔(بہار شریعت)📚꧁

سوال: مالکِ نصاب سے کیا مراد ہے؟🧡
جواب:۞☜︎︎︎ وہ شخص جس کے پاس ساڑھے سات تولے سونا یا ساڑھے باون تولے چاندی یا اتنی مالیت کی رقم ، یا اتنی مالیت کا مالِ تجارت یا اتنی مالیت کا حاجاتِ اصلیہ سے ذائد سامان ہو اس کو صاحب نصاب یا مالک نصاب کہتے ہیں۔(بہار شریعت)🕋

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

error: Content is protected !!