طور نے تو خوب دیکھا جلوۂ شانِ جمال

طور نے تو خوب دیکھا جلوۂ شانِ جمال
اس طرف بھی اِک نظر اے برقِ تابانِ جمال

اِک نظر بے پردَہ ہو جائے جو لمعانِ جمال
مردُمِ دِیدہ کی آنکھوں پر جو احسانِ جمال

چل گیا جس راہ میں سروِ خرامانِ جمال
نقش پا سے کھل گئے لاکھوں گلستانِ جمال

ہے شب غم اور گرفتارانِ ہجرانِ جمال
مہر کر ذَرّوں پہ اے خورشیدِ تابانِ جمال

کر گیا آخر لباسِ لالہ و گل میں ظہور
خاک میں ملتا نہیں خونِ شہیدانِ جمال

ذَرَّہ ذَرَّہ خاک کا ہو جائے گا خورشید حشر
قبر میں لے جائیں گے عاشق جو اَرمانِ جمال

ہوگیا شاداب عالم آگئی فصل بہار
اُٹھ گیا پردَہ کھلا بابِ گلستانِ جمال

جلوۂ موئے محاسن چہرۂ اَنور کے گرد
آبنوسی رحل پر رکھا ہے قرآنِ جمال

اس کے جلوے سے نہ کیوں کافور ہوں ظلماتِ کفر
پیش گاہِ نور سے آیا ہے فرمانِ جمال

کیا کہوں کتنا ہے ان کی رہ گزر میں جوشِ حسن
آشکارا ذَرَّہ ذَرَّہ سے ہے میدانِ جمال

ذَرَّۂ دَر سے تِرے ہمسر ہوں کیا مہر و قمر
یہ ہے سلطانِ جمال اور وہ گدایانِ جمال

کیا مزے کی زندگی ہے زندگی عشاق کی
آنکھیں ان کی جستجو میں دِل میں ارمانِ جمال

رُو سیاہی نے شب دِیجور کو شرما دیا
مونھ اُجالا کر دے اے خورشیدِ تابانِ جمال

اَبروئے پُر خم سے پیدا ہے ہلالِ ماہِ عید
مطلعِ عارِض سے روشن بدرِ تابانِ جمال

دل کشیٔ حُسنِ جاناں کا ہو کیا عالم بیاں
دل فدائے آئنہ آئینہ قربانِ جمال

پیشِ یوسف ہاتھ کاٹے ہیں زَنانِ مصر نے
تیری خاطر سر کٹا بیٹھے فدایانِ جمال

تیرے ذَرَّہ پر شب غم کی جفائیں تابکے
نور کا تڑکا دکھا اے مہر تابانِ جمال

اتنی مدت تک ہو دید َمصحفِ عارِض نصیب
حفظ کر لوں ناظرہ پڑھ پڑھ کے قرآنِ جمال

یا خدا دل کی گلی سے کون گزرا ہے کہ آج
ذَرَّہ ذَرَّہ سے ہے طالع مہر تابانِ جمال

اُن کے دَر پر اِس قدر بٹتا ہے باڑہ نور کا
جھولیاں بھر بھر کے لاتے ہیں گدایانِ جمال

نور کی بارش حسنؔ پر ہو ترے دیدار سے
دِل سے دُھل جائے الٰہی داغِ حرمانِ جمال

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *