Our website is made possible by displaying online advertisements to our visitors. Please consider supporting us by whitelisting our website.

مناقب حضرت شاہ بدیع الدین مدار قُدِّسَ سِرُّہٗ الشَّرِیْف

مناقب حضرت شاہ بدیع الدین مدار قُدِّسَ سِرُّہٗ الشَّرِیْف

ہوا ہوں دادِ ستم کو میں حاضرِ دَربار
گواہ ہیں دلِ مخزون و چشمِ دَریا بار
طرح طرح سے ستاتا ہے زُمرۂ اَشرار
بدیع بہرِ خدا حرمت شہِ اَبرار
مدار چشم عنایت ز من دَریغ مدار
نگاہِ لطف و کرم از حسن دریغ مدار
ادھر اَقارب عقارب عدو اَجانب خویش
اِ د ھر ہوں جوشِ معاصی کے ہاتھ سے دل ریش
بیان کس سے کروں ہیں جو آفتیں دَر پیش
پھنسا ہے سخت بلاؤں میں یہ عقیدت کیش
مدار چشم عنایت ز من دریغ مدار
نگاہِ لطف و کرم از حسن دریغ مدار

نہ ہوں میں طالب افسر نہ سائل دِیہیم
کہ سنگ منزلِ مقصد ہے خواہش زَر و سیم
کیا ہے تم کو خدا نے کریم ابن کریم
فقط یہی ہے شہا آرزوئے عبدِ اَثیم
مدار چشم عنایت ز من دریغ مدار
نگاہِ لطف و کرم از حسن دریغ مدار
ہوا ہے خنجرِ اَفکار سے جگر گھائل
نفس نفس ہے عیاں دَم شماریٔ بسمل
مجھے ہو مرحمت اَب دارُوئے جراحتِ دِل
نہ خالی ہاتھ پھرے آستاں سے یہ سائل
مدار چشم عنایت ز من دریغ مدار
نگاہِ لطف و کرم از حسن دریغ مدار

تمہارے وصف و ثنا کس طرح سے ہوں مرقوم
کہ شانِ اَرفع و اعلیٰ کسے نہیں معلوم
ہے زیر تیغِ اَلم مجھ غریب کا حلقوم
ہوئی ہے دِل کی طرف یورشِ سپاہِ ہموم
مدار چشم عنایت ز من دریغ مدار
نگاہِ لطف و کرم از حسن دریغ مدار
ہوا ہے بندہ گرفتارِ پنجہء صیاد
ہیں ہر گھڑی ستم ایجاد سے ستم ایجاد
حضور پڑتی ہے ہر روز اک نئی اُفتاد
تمہارے دَر پہ میں لایا ہوں جور کی فریاد
مدار چشم عنایت ز من دریغ مدار
نگاہ لطف و کرم از حسن دریغ مدار

تمام ذَروں پہ کالشمس ہیں یہ جود و نوال
فقیرِخستہ جگر کا بھی رَد نہ کیجے سوال
حسن ہوں نام کو پر ہوں میں سخت بد اَفعال
عطا ہو مجھ کو بھی اے شاہ جنس حسن مآل
مدار چشم عنایت ز من دریغ مدار
نگاہ لطف و کرم از حسنؔ دریغ مدار

دردِ سر کا علاج
قیصررُوم نے امیرالمؤمنین حضرت سیدناعمرفاروقِ اعظم رَضِیَ اللّٰہُ تَعَالٰی عَنْہ کو خط لکھاکہ مجھے دائِمی دردِسرکی شکایت ہے اگرآپ کے پاس اِس کی دوا ہو تو بھیج دیجئے ۔حضرت سیدناعمرفاروقِ اعظم رَضِیَ اللّٰہُ تَعَالٰی عَنْہ نے اُس کو ایک ٹوپی بھیج دی، قیصررُوم اُس ٹوپی کوپہنتاتو اسکا دردِ سر کافور ہو جاتا اور جب سر سے اُتارتا تودردِ سر پھرلوٹ آتا۔اسے بڑا تعجب ہوا ۔ آخرکاراُس نے اس ٹوپی کو اُدھیڑا تو اس میں سے ایک کاغذ برآمدہوا جس پر ’’ بِسْمِ اللّٰہِ الرَّحْمٰنِ الرَّحِیْم ‘‘ لکھاتھا۔
(تفسیر کبیر ، ۱ / ۱۵۵، داراحیاء التراث العربی بیروت)

error: Content is protected !!