Our website is made possible by displaying online advertisements to our visitors. Please consider supporting us by whitelisting our website.

تابِ مرآتِ سحر گردِ بیابانِ عرب

تابِ مرآتِ سحر گردِ بیابانِ عرب
غازئہ رُوئے قمر دُودِ چراغانِ عرب
اللّٰہ  اللّٰہ بہارِ    چَمَنِستانِ      عرب
پاک ہیں     لوثِ خزاں     سے گل و رَیحانِ عرب
جوشِش اَبر سے خونِ ُگلِ فردوس کرے
چھیڑ دے رَگ کو اگر خارِ بیابانِ عرب
تشنۂ نہرِ جناں     ہر عربی و عجمی!
لب ہر نہرِ جناں     تشنۂ نیسانِ عرب
طوقِ غم آپ ہوائے پرِ قُمری سے گرے
اگر آزاد کرے سروِ خرامانِ عرب
مہر میزاں     میں     چھپا ہو تو حمل میں     چمکے
ڈالے اِک بُوند شبِ دَے میں     جو بارانِ عرب
عرش سے مژدئہ بلقیسِ شفاعت لایا
طائر سِدْرَہ نشیں     مرغِ سلیمانِ عرب
حُسنِ(1)یوسُف پہ کٹیں     مِصْر میں     اَنگُشتِ زَناں    
سَر کٹاتے ہیں     تِرے نام پہ مردانِ عرب
کوچہ کوچہ میں     مہکتی ہے یہاں     بوئے قمیص
         یوسُفِستاں     ہے ہر اِک گوشۂ کنعانِ عرب
بزمِ قدسی میں     ہے یادِ لب جاں     بخش حضور
عالمِ نور میں     ہے چشمۂ حیوانِ عرب
پائے جبریل نے سرکار سے کیا کیا القاب
خُسرو خَیلِ ملک، خادمِ سلطانِ عرب
بلبل و نیلپر و کبک بنو پروانو!
مہ و خورشید پہ ہنستے ہیں     چراغانِ عرب
حُور سے کیا کہیں     موسیٰ سے مگر عرض کریں    
کہ ہے خود حُسنِ اَزَل طالب جانانِ عرب
کرمِ نعت کے نزدیک تو کچھ دُور نہیں    
کہ رضاؔئے عجمی ہو سگِ حسّانِ عرب
٭…٭…٭…٭…٭…٭
________________________________
1 – ۔۔۔ :اس شعر کے دونو ں     مصرعوں     میں     ایک ایک لفظ ایسے تقابل سے ہے کہ مفید تفضیل حضور اَنورِ سید ِعالم  صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمہے (۱) وہاں     حسن یہاں     نام (۲) وہاں     کٹنا کہ عدمِ قصد پر دلالت کرتا ہے یہاں     کٹانا کہ قصد و اِرادہ بتاتا ہے (۳) وہاں    مصر یہاں     عرب کہ زمانۂ جاہلیت میں     اس کی سرکشی و خود سری مشہور تھی (۴)وہاں     اَنگشت یہاں     سر (۵) وہاں     زَنان یہاں     مردان (۶)وہاں     انگلیاں     کٹیں     کہ ایک بار وقوع بتاتا ہے اور یہاں     کٹاتے ہیں     کہ اِستمرار پر دلیل ہے ۱۲
 کتنی محبت ہے؟
     حضرت علی کَرَّمَ اللَّٰہُ تَعَالٰی وَجْہَہُ الْکَرِیْم سے کسی نے سوال کیا کہ آپ کو رسول اللّٰہ صلَّی اللّٰہ تعالٰی عَلَــیْہِ وَسَلَّم  سے کتنی محبت ہے؟ آپ نے فرمایا: خدا کی قسم!حضور صلَّی اللّٰہ تعالٰی عَلَــیْہِ وَسَلَّم ہمارے مال، ہماری اولاد،ہمارے باپ ،ہماری ماں    اورسخت پیاس کے وقت پانی سے بھی بڑھ کر ہمارے نزدیک محبوب ہیں    ۔ (الشفاء،ج۲،ص۲۲)
error: Content is protected !!