Our website is made possible by displaying online advertisements to our visitors. Please consider supporting us by whitelisting our website.

والدین کی رضا کے خلاف شادی کے نقصانات

والدین کی رضا کے خلاف شادی کے نقصانات

لہٰذا لڑکے یا لڑکی کا اپنی مرضی سے والدین اور خاندان والوں سے چُھپ کر نکاح کرنا کسی طرح بھی مناسب نہیں بلکہ بعض صورتوں میں ولی کی اجازت کے بغیر نکاح کرنے سے نکاح مُنعَقِد ہی نہیں ہوتا(2)اور اگر کسی صورت میں نکاح شَرْعاً دُرُست ہوبھی جائے تو اس میں بہت سے نقصانات ہیں ۔ آئیے اس کےچند نقصانات مُلاحَظہ کیجئے : 
٭پہلا یہ کہ شادی میں  ماں باپ بہن بھائی اور رشتے داروں کے شریک ہونے کی صورت میں جو خوشی حاصل ہوتی ہے اُس سے محرومی۔ 
٭دوسرا یہ کہ جس شادی میں والدین کی رِضا شامل نہیں ہوتی وہ شادیاں عموماً نا کام ہو جاتی ہیں ۔ 
٭تیسرا یہ کہ اپنوں سے تعلُّق ختم ہوجاتا ہے اور لڑکا لڑکی زندگی میں اکیلے ہو جاتے ہیں نہ والدین وغیرہ اُن سے مِلنا گوارا کرتے ہیں اور نہ وہ والدین وغیرہ سے مِلنا چاہتے ہیں اور  چاہتے بھی ہیں تو جُرأَت نہیں کرپاتے۔ 
٭چوتھا یہ کہ اگر میاں بیوی کے درمیان لڑائی جھگڑا ہوجائے تو اُن کے پاس اپنے بڑوں میں سے کوئی ایسا نہیں ہوتا جو صُلح کروائے۔ 
٭پانچواں یہ کہ میاں بیوی کو کسی ناخُوشگوار موقع پر ایک دوسرے سے اِس قسم کے طعنے سُننے کو ملتے ہیں کہ تم اپنے ماں باپ کے نہ ہوئے تو میرے کیا ہوگے وغیرہ  ۔ 
٭چھٹا یہ کہ اُن کا یہ اِقْدام اُن کے چھوٹے بہن بھائیوں کیلئے مصیبت بن جاتا ہے اور اُن کے رشتوں کی راہ میں رُکاوٹیں کھڑی کرتا ہے۔ 
٭ساتواں اور سب سے بڑھ کر نقصان یہ ہے کہ والدین کی مرضی کے خِلاف شادی کرنا اُن کی اَذِیّت  و ناراضی کا باعث  بنتا ہے۔ 
2 –   اس کی تفصیل جاننے کیلئے شیخِ طریقت ، امیرِ اہلسنّت دَامَتْ بَـرَکاتُہُمُ الْعَالِیَہ کی کتاب “ پردے کے بارے میں سوال جواب “ کے صفحہ 357 تا 384 کا مطالعہ کیجئے۔ 
error: Content is protected !!