۔۔۔۔۔۔تاکید کا بیان ۔۔۔۔۔۔

تاکید کی تعریف:
    تاکیدوہ تابع ہے جو متبوع کی طرف کسی چیزکی نسبت کو پختہ کرنے کے لئے لایا جائے۔ جیسے جَاءَ نِیْ زَیْدٌ نَفْسُہ،  (میرے پاس زید بذات خود آیا) یا اس بات کوواضح کرنے کیلئے لایا جاتا ہے کہ حکم متبوع کے تمام افراد کو شامل ہے ۔جیسے فَسَجَدَ الْمَلٰئِکَۃُ کُلُّھُمْ أَجْمَعُوْنَ  (تو تمام ملائکہ نے ایک ساتھ سجدہ کیا)۔پہلی مثال میں زید کے آ نے کی نسبت کو نفسُہ نے پختہ کیاجبکہ دوسری مثال میں کلّھم نے تما م ملائکہ کے سجدہ کرنے کو واضح کیا۔جسکی تاکید بیان کی جائے اسے مؤکَّد کہتے ہیں ۔ یاد رہے کہ مؤکَّد اور تاکید کا اعراب ایک جیسا ہوتاہے۔ 
Advertisement
تاکید کی اقسام
تاکید کی دو قسمیں ہیں۔
۱۔تاکید لفظی         ۲۔تاکید معنوی
۱۔تاکید لفظی:
    وہ تاکید ہے جس میں لفظ تکرار کے ساتھ لایا جائے ۔جیسے جَاءَ نِیْ زَیْدٌ زَیْدٌ ،اِنَّ اِنَّ زَیْدًا قَائِمٌ۔
۲۔تاکید معنوی:
    وہ تاکید ہے جو چند مخصوص الفاظ کے لانے سے حاصل ہو ۔وہ الفاظ یہ ہیں۔
    نَفْسٌ ،عَیْنٌ ، کِلاَ ،کِلْتَا ،کُلٌّ ،أَجْمَعُ ،أَکْتَعُ ، أَبْتَعُ، أَبْصَعُ
                            اِن کی تفصیل
۱۔نفس اور عین:
    صیغے اور ضمیر کی تبدیلی کے ساتھ واحد ،تثنیہ اور جمع تینوں کے لیے استعمال ہوتے ہیں۔ جیسے
جَاءَ نِیْ زَیْدٌ نَفْسُہ،، جَاءَ نِیَ الزَّیدانِ أَنْفُسُھُمَا، اور جَاءَ نِیَ الزَّیْدُوْنَ أَنْفُسُھُمْ ۔ اسی طرح عَیْنٌ کی مثال جیسے عَیْنُہ،، أَعْیُنُھُمَا، أَعْیُنُھُمْ ۔ مونث کیلئے مونث کی ضمیر لگا کر استعمال کرتے ہیں۔ جیسے جَاءَ نِیْ ھِنْدٌ نَفْسُھَا ،جَاءَ نِی ھِنْدَانِ أَنْفُسُھُمَا، جَاءَ نِی ھِنْدَاتٌ أَنْفُسُھُنَّ اسی پر لفظ عَیْنٌ کو قیاس کریں۔ 
۲۔ کلا و کلتا :
    صرف تثنیہ مذکرو مونث کیلئے استعمال ہوتے ہیں جیسے جَاءَ الرَّجُلاَنِ کِلاَھُمَا ، اور جَاءَ تِ الْمَرْءَ تَاِن کِلْتَاھُمَا۔ 
۳۔کل ، اجمع ، اکتع، ابتع، اور ابصع:
    واحد اور جمع کیلئے آتے ہیں ۔ فرق صرف اتنا ہے کہ کُلٌّ میں ضمیر متصل کو بدلنا پڑتا ہے جبکہ باقی الفاظ میں صیغوں کو ۔جیسے سَمِعْتُ الْکَلَامَ کُلَّہ،،جَاءَ نِیَ الْقَوْمُ کُلُّھُمْ أَجْمَعُوْنَ أَکْتَعُوْنَ أَبْتَعُوْنَ أَبْصَعُوْنَ،اِشْتَرَیْتُ الرِّزْمَۃَکُلَّھَا جَمْعَاءَ ،کَتْعَاءَ، بَتْعَاء، بَصْعَاءَ، قَامَتِ النِّسَاءُ کُلُّھُنَّ ،جُمَعُ ، کُتَعُ ،بُصَعُ ،بُتَعُ۔
نوٹ :
    أَجْمَعُ ،أَکْتَعُ ، أَبْتَعُ اور أَبْصَعُ بھی کُلٌّ کے معنیٰ میں ہیں ۔
تاکید کے چند ضروری قواعد:
    ٭۔۔۔۔۔۔ضمیر متصل بارز یا مستتر کی تاکید ضمیر مرفوع منفصل سے لائی جاتی ہے خواہ ضمائر موکدہ مرفوع ہوں یا منصوب یا مجرور ، جیسے ضمیر متصل بارز کی مثال ۔ قُمْتُ أَ نَا، مَارَاکَ أَنْت أَحَدٌ ، سَلَّمْتُ عَلَیْہِ ھُوَ اور ضمیر متصل مستتر کی مثال أَنْصَحُ أَنَا زَیْدًا۔
    ٭۔۔۔۔۔۔أَکْتَعُ، أَبْتَعُ، اور أَبْصَعُ یہ تینوں أَجْمَعُ کے تابع ہیں یعنی نہ تو أَجْمَعُ کے بغیر آتے ہیں اور نہ ہی أَجْمَعُ سے پہلے آتے ہیں۔
    ٭۔۔۔۔۔۔اگر ضمیر مرفوع متصل بارز ومستتر کی تاکید معنوی نَفْسٌ یاعَیْنٌ سے لانی ہوتو پہلے ضمیر مرفوع منفصل سے تاکید لائی جاتی ہے اسکے بعد نَفْسٌ یا عَیْنٌ کا ذکر کیا جاتاہے۔ جیسے قُمْتُ أَنَا نَفْسِیْ ،ضَرَبَ ھُوَ نَفْسُہ،۔     ٭۔۔۔۔۔۔اگر انکے بجائے ضمیر منصوب یا مجرور ہوتو اب نَفْسٌ یا عَیْنٌ کو تاکیدکیلئے براہ راست لا یا جا ئے گا۔ جیسے ضَرَبْتُھُمْ أَنْفُسَھُمْ ،مَرَرْتُ بِہٖ نَفْسِہٖ۔     ٭۔۔۔۔۔۔اسم ظاہر کو ضمیر کے ساتھ مؤکد نہیں کر سکتے ۔لہذا یوں کہنا غلط ہو گا، جَاءَ زَیْدٌ ھُوَ۔
    ٭۔۔۔۔۔۔لیکن ضمیر ، ضمیر اور اسم ظاہر دونوں سے مؤکد کی جاسکتی ہے جیسے جِئْتَ أَنْتَ نَفْسَکَ ،أَحْسَنْتَ اِلَیْھِمْ أَنْفُسِھُمْ ۔ ٭۔۔۔۔۔۔عموما أَجْمَعُ کا استعمال کُلٌّ کے بعد ہوتا ہے جیسے سَجَدَ الْمَلٰئِکَۃُ کُلُّھُمْ أَجْمَعُوْنَ اور بعض اوقات اکیلا بھی آتاہے۔ جیسے جَاءَ الْقَوْمُ أَجْمَعُ ۔
    ٭۔۔۔۔۔۔نَفْسٌ یا عَیْنٌ سے تثنیہ کی تاکید کرنی ہو تو انکی جمع سے کرینگے، جیسے جَاءَ الرَّجُلاَنِ أَنْفُسُھُمَا یا أَعْیُنُھُمااور نَفْسَاھُمْا یا عَیْنَاھُمَا نہیں کہیں گے۔
    ٭۔۔۔۔۔۔نَفْسٌ کی جگہ عَیْنٌ بھی بولا جاتاہے۔کُلٌّ کی جگہ جَمِیْعٌ بھی آسکتاہے ،جیسے
رَأَیْتُ زَیْدًا نَفْسَہ، ،عَیْنَہ،، اور جَاءَ الْقَوْمُ کُلُّھُمْ، جَمِیْعُھُمْ ۔
    ٭۔۔۔۔۔۔کبھی جَمِیْعٌ بغیر اضافت کے استعمال ہوتا ہے اسوقت وہ بجائے تاکید کے حال واقع ہوتاہے ۔جیسے جَاءَ الْمُسْلِمُوْنَ جَمِیْعًا ۔
    ٭۔۔۔۔۔۔تاکید لفظی میں بعینہ سابقہ لفظ کا اعادہ ضروری نہیں ۔بلکہ ما قبل کا ہم معنی لفظ بھی لایا جاسکتاہے۔ جیسے أَتیٰ جَاءَ زَیْدٌ، اور
ضَرَبْنَا نَحْنُ۔
    ٭۔۔۔۔۔۔اگر کسی اسم ظاہر کے بعد نَفْسٌ یا عَیْنٌ حر ف جر باء کی وجہ سے مجرور نظر آئے تو وہ باء ہمیشہ زائدہ ہوگی ، اور مابعد اسم براہ راست تاکید بنے گا۔جیسے
جَاءَ زَیْدٌ بِنَفْسِہٖ، بِعَیْنِہٖ۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

error: Content is protected !!