Our website is made possible by displaying online advertisements to our visitors. Please consider supporting us by whitelisting our website.

کیا ٹھیک ہو رُخِ نبوی پر مثالِ گل

کیا ٹھیک ہو رُخِ نبوی پر مثالِ گل
پامال جلوئہ کفِ پا ہے جمَالِ گل
جنّت ہے ان کے جلوہ سے جویائے رنگ و بُو
اے گل ہمارے گل سے ہے گل کو سوالِ گل
اُن کے قدم سے سلعۂ(1)غالی ہوئی جِناں    
واللّٰہ میرے  گل  سے  ہے  جاہ  و  جلالِ  گل
سُنتا ہوں     عشقِ شاہ میں     دِل ہو گا خُوں     فشاں    
یاربّ یہ مُژْدَہ سچ ہو مبارک ہو فالِ گل
بُلبل حرم کو چل غمِ فَانی سے فائدہ
کب تک کہے گی ہائے وہ غنج و دَلالِ گل
غمگیں     ہے شوقِ غازَئہ خاکِ مَدینہ میں    
شبنم سے دھل سکے گی نہ گردِ ملال گل
بلبل یہ کیا کہا میں     کہاں     فَصْلِ گل کہاں    
اُمید رکھ کہ عام ہے جود و نوالِ گل
بلبل! گِھرا ہے ابر ولا مژدَہ ہو کہ اب
گِرتی ہے آشیانہ پہ بَرقِ جمالِ گل
یاربّ ہرا بھرا رہے داغِ جگر کا باغ
ہر مہ مہِ بہَار ہو ہر سال سالِ گل
رنگِ مژہ سے کر کے خَجِل یادِ شاہ میں    
کھینچا ہے ہم نے کانٹوں     پہ عطرِ جمالِ گل
میں     یادِ شہ میں     رووں     عنادِل کریں     ہجوم
ہر اشک لالہ فام پہ ہو احتمالِ گل
ہیں     عکسِ چہرہ سے لبِ گلگوں     میں     سُرخیاں    
ڈُوبا ہے بدرِ گل سے شَفَق میں     ہلالِ گل
نعتِ حضور میں     مُتَرَنّم ہے عندلیب
شاخوں     کے جُھومنے سے عیاں     وجد و حالِ گل
بلبل گلِ مدینہ ہمیشہ بہار ہے
دو دن کی ہے بہار فنا ہے مآلِ گل
شیخین اِدھر نثار، غنی و علی اُدھر
غُنچہ ہے بلبُلوں     کا یمین و شمالِ گل
چاہے خدا تو پائیں     گے عشقِ نبی میں     خلد
نِکلی ہے نامۂ دلِ پُرخوں     میں     فالِ گل
کر اُس کی یاد جس سے ملے چین عندلیب
دیکھا نہیں     کہ خارِ اَلم ہے خیالِ گل
دیکھا تھا خوابِ خارِ حرم عندلیب نے
کھٹکا کیا ہے آنکھ میں     شب بھر خیالِ گل
اُن دو کا صدقہ جن کو کہا میرے پُھول ہیں    
کیجے  رضاؔ  کو  حشر  میں      خنداں      مِثالِ  گل
٭…٭…٭…٭…٭…٭
error: Content is protected !!