پھر کے گلی گلی تباہ ٹھو کریں سب کی کھائے کیوں

پھر کے گلی گلی تباہ ٹھو کریں     سب کی کھائے کیوں    
دِل کو جو عقل دے خدا تیری گلی سے جائے کیوں    
رُخصتِ قافلہ کا شور غش سے ہمیں     اُٹھائے کیوں    
سوتے ہیں     اُن کے سایہ میں     کوئی ہمیں     جگائے کیوں    
Advertisement
بار نہ تھے حبیب کو پالتے ہی غریب کو
روئیں     جو اَبْ نصیب کو چین کہو گنوائے کیوں    
یادِ حُضور کی قسم غفلتِ عیش ہے سِتم
خُوب ہیں     قیدِ غم میں     ہم کوئی ہمیں     چُھڑائے کیوں    
دیکھ کے حضرتِ غنی پھیل پڑے فقیر بھی
چھائی ہے اب تو چھاؤنی حشر ہی آنہ جائے کیوں    
جان ہے عشقِ مصطفٰے روز فَزوں     کرے خدا
جس کو ہو درد کا مزہ نازِ دوا اُٹھائے کیوں    
ہم تو ہیں     آپ دِل فِگار غم میں     ہنسی ہے ناگوار
چھیڑ کے گُل کو نوبہار خون ہمیں     رُلائے کیوں    
یا تو یوں     ہی تڑپ کے جائیں     یا وہی دام سے چھڑائیں    
مِنّت غیر کیوں     اُٹھائیں     کوئی ترس جتائے کیوں
اُن کے جلال کا اثر دل سے لگائے ہے قمر
جو کہ ہو لوٹ زخم پر داغِ جگر مٹائے کیوں    
خوش رہے گُل سے عندلیب خارِ حرم مجھے نصیب
میری بَلا بھی ذِکر پر پھول کے خار کھائے کیوں    
گردِ ملال اگر دُھلے دِل کی کلی اگر کِھلے
بَرق سے آنکھ کیوں     جلے رونے پہ مسکرائے کیوں    
جانِ سفر نصیب کو کس نے کہا مزے سے سو
کھٹکا اگر سحر کا ہو شام سے موت آئے کیوں    
اب تو نہ روک اے غنی عادتِ سگ بگڑ گئی
میرے کریم پہلے ہی لقمہ تر کھلائے کیوں    
راہِ نبی میں     کیا کمی فرشِ بیاض دِیدہ کی
چادرِ ظل ہے  مَلْگجی زیرِ قدم بچھائے کیوں    
سنگِ درِ حضور سے ہم کو خدا نہ صبر دے
جانا ہے سر کو جا چکے دل کو قرار آئے کیوں    
ہے تو رضاؔ نِرا سِتَم جُرم پہ گر لجائیں     ہم
کوئی بجائے سوزِ غم سازِ طَرَب  بجائے کیوں    
٭…٭…٭…٭…٭…٭

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

error: Content is protected !!