Our website is made possible by displaying online advertisements to our visitors. Please consider supporting us by whitelisting our website.

حاجیو! آؤ شہنشاہ کا رَوضہ دیکھو

غزَل کہ دَربارَہ عزم سفر اَطہر مدینہ منورہ از مکہ معظمہ بعد ِحج بمحرم  ۱۲۹۶ھ عرض کردہ شد
حاجیو! آؤ شہنشاہ کا رَوضہ دیکھو
حاجیو! آؤ شہنشاہ کا رَوضہ دیکھو
کعبہ تو دیکھ چکے کعبَہ کا کعبَہ دیکھو
رُکنِ شامی سے مِٹی وحشت شامِ غربت
اب مَدینہ کو چلو صبحِ دِل آرا دیکھو
آبِ زمزم تو پِیا خُوب بجھائیں     پیاسیں    
آؤ جُودِ شہِ کوثر کا بھی دریا دیکھو
زیرِ میزاب مِلے خوب کرم کے چھینٹے
ابرِ رحمت کا یہاں     زور برسنا دیکھو
دُھوم دیکھی ہے درِ کعبہ پہ بیتابوں     کی
اُن کے مشتاقوں     میں     حسرت کا تڑپنا دیکھو
مِثلِ پروانہ پِھرا کرتے تھے جس شمع کے گِرد
اپنی اُس شمع کو پَروانہ یہاں     کا دیکھو
خُوب آنکھوں     سے لگایا ہے غلافِ کعبہ
قصرِ محبوب کے پردے کا بھی جلوہ دیکھو
واں     مطیعوں     کا جگر خوف سے پانی پایا
یاں     سِیہ کاروں     کا دامن پہ مچلنا دیکھو 
اوّلیں     خانۂ حق کی تو ضِیائیں     دیکھیں    
آخریں     بَیتِ نبی کا بھی تجلّا دیکھو
زِینتِ کعبہ میں     تھا لاکھ عروسوں     کا بناؤ
جلوہ فرما یہاں     کونین کا دُولہا دیکھو
ایمنِ طُور کا تھا رُکنِ یمانی میں     فروغ
شعلۂ طُور یہاں     انجمن آرا دیکھو
مہرِ مادر کا مزہ دیتی ہے آغوشِ حطیم
جن پہ ماں     باپ فدا یاں     کرم ان کا دیکھو
عرضِ حاجت میں     رہا کعبہ کفیل انجاح
آؤ اب داد رسیِ شہِ طیبہ دیکھو
دھو چکا ظلمتِ دل بوسۂ سنگِ اَسْوَد
خاک بوسیِ مدینہ کا بھی رُتبہ دیکھو
کر چکی رفعتِ کعبَہ پہ نظر پَروازیں    
ٹوپی اب تھام کے خاکِ درِ والا دیکھو
بے نیازی سے وہاں     کانپتی پائی طاعت
جوشِ رحمت پہ یہاں     ناز گنہ کا دیکھو
جمعۂ مکہ تھا عید اہلِ عبادت کے لئے
مجرمو! آؤ یہاں     عید دوشنبہ دیکھو
ملتزم سے تو گلے لگ کے نکالے ارماں    
ادب و شوق کا یاں     باہم اُلجھنا دیکھو
خوب مسعٰے میں     بامید صفا دوڑ لیے 
رہِ جاناں     کی صفا کا بھی تماشا دیکھو
رقصِ بِسمل کی بہاریں     تو مِنٰی میں     دیکھیں    
دلِ خوننابہ فشاں     کا بھی تڑپنا دیکھو
غور سے سُن تو رضاؔ کعبہ سے آتی ہے صَدا
میری آنکھوں     سے مِرے پیارے کا روضہ دیکھو
٭…٭…٭…٭…٭…٭
error: Content is protected !!