Our website is made possible by displaying online advertisements to our visitors. Please consider supporting us by whitelisting our website.

نارِ دوزخ کو چمن کر دے بہار عارِض

نارِ دوزخ کو چمن کر دے بہار عارِض
ظلمتِ حشر کو دِن کر دے نہارِ عارِض
میں     تو کیا چیز ہوں     خود صاحبِ قرآں     کو شہا
لاکھ مصحف سے پسند آئی بہارِ عارِض
جیسے قرآن ہے وِرد اس گلِ محبوبی کا
یُوں     ہی قرآں     کا وظیفہ ہے وقارِ عارِض
گرچہ قرآں     ہے نہ قرآں     کی برابر لیکن
کچھ تو ہے جس پہ ہے وہ مَدح نگارِ عارِض
طُور کیا عرش جلے دیکھ کے وہ جلوئہ گرم
آپ عارِض ہو مگر آئینہ دارِ عارِض
طرفہ عالم ہے وہ قرآن اِدھر دیکھیں     اُدھر
مصحفِ پاک ہو حیران بہارِ عارض
ترجمہ ہے یہ صفت کا وہ خود آئینۂ ذات
کیوں     نہ مصحف سے زیادہ ہو وقارِ عارض
جلوہ فرمائیں     رخِ دل کی سیاہی مِٹ جائے
صبح ہو جائے الٰہی شبِ تارِ عارض
نامِ حق پر کرے محبوب دل و جاں     قرباں    
حق کرے عرش سے تا فرش نثارِ عارض
مشک بو زلف سے رُخ چہرہ سے بالوں     میں     شعاع
معجزہ ہے حلبِ زلف و تتارِ عارض
حق نے بخشا ہے کرم نذرِ گدایاں     ہو قبول
پیارے اِک دِ ل ہے وہ کرتے ہیں     نثارِ عارض
آہ بے مایگیِ دل کہ رضاؔئے محتاج
لے کر اِک جان چلا بہر نثارِ عارض
٭…٭…٭…٭…٭…٭
error: Content is protected !!