Our website is made possible by displaying online advertisements to our visitors. Please consider supporting us by whitelisting our website.

زمین و زماں تمہارے لئے مَکِین و مکاں تمہارے لئے

زمین و زماں     تمہارے لئے مَکِین و مکاں     تمہارے لئے
چُنین و چُناں     تمہارے لئے بنے دو جہاں     تمہارے لئے
دَہن میں     زباں     تمہارے لئے بدن میں     ہے جاں     تمہارے لئے
ہم آئے یہاں     تمہارے لئے اٹھیں     بھی وہاں     تمہارے لئے
فرشتے خِدَم رسول حِشم تمامِ اُمَم غلامِ کرم
وُجُود و عَدم حُدوث و قِدم جہاں     میں     عِیاں     تمہارے لئے
کَلِیم و نَجی مَسیح و صَفی خلیل و رَضی رسول و نبی
عَتیق و وَصی غَنی و علی ثَنا کی زباں     تمہارے لئے
اِصالتِ کل امامتِ کل سِیادَتِ کل اِمارتِ کل
حکومتِ کل وِلایتِ کل خدا کے یہاں     تمہارے لئے
تمہاری چمک تمہاری دمک تمہاری جھلک تمہاری مہک
زمین و فلک سِماک و  سمک میں     سکہ نشاں     تمہارے لئے
وہ کَنزِ نِہاں     یہ نورِ فَشاں     وہ کُن سے عِیاں     یہ بزمِ فَکاں    
یہ ہر تن و جاں     یہ باغِ جناں     یہ سارا سماں     تمہارے لئے
ظُہورِ نِہاں     قیامِ جہاں     رکوعِ مِہاں     سجودِ شَہاں    
نیازیں     یہاں     نمازیں     وہاں     یہ کس لئے ہاں     تمہارے لئے
یہ شمس و قمر یہ شام و سحر یہ بَرگ و شَجر یہ باغ و ثَمر
یہ تِیغ و سِپر یہ تاج و کمر یہ حکم رواں     تمہارے لئے
یہ فیض دیے وہ جُود کیے کہ نام لیے زمانہ جیے
جہاں     نے لیے تمہارے دیے یہ اِکرَمیاں     تمہارے لئے
سحابِ کرم روانہ کیے کہ آبِ نِعَم زمانہ پیے
جو رکھتے تھے ہم وہ چاک سیے یہ سترِ بداں     تمہارے لئے
ثَنا کا نشاں     وہ نور فَشاں     کہ مِہروَشاں     بآنہمہ شاں    
بَسایہ کَشاں     مَواکِب شاں     یہ نام و نشاں     تمہارے لئے
عطائے اَرَب جلائے کَرب فُیوضِ عجب بغیر طلب
یہ رحمتِ ربّ ہے کس کے سبب بَربِّ جہاں     تمہارے لئے
ذُنوب فنا عُیوب ہَبا قلوب صَفا خُطوب رَوا
یہ خوب عطا کُروب زُدا پئے دل وجاں     تمہارے لئے
نہ جنّ و بشر کہ آٹھوں     پہر ملائکہ در پہ بَستہ کمر
نہ جُبّہ و سَر کہ قلب و جگر ہیں     سجدہ کُناں     تمہارے لئے
نہ رُوحِ امیں     نہ عرشِ بَریں     نہ لَوحِ مُبیں     کوئی بھی کہیں    
خبر ہی نہیں     جو رَمزیں     کھلیں     ازل کی نِہاں     تمہارے لئے
جِناں     میں     چمن، چمن میں     سمن، سمن میں     پھبن، پھبن میں     دلہن
سزائے محن پہ ایسے مِنَن یہ امن و اَماں     تمہارے لئے
کمالِ مہاں     جلالِ شہاں     جمالِ حِساں     میں     تم ہو عِیاں    
کہ سارے جہاں    میں     روزِفَکان ظِلِ آئینہ ساں     تمہارے لئے
یہ طُور کُجا سِپِہر تو کیا کہ عرشِ عُلا بھی دور رہا
جِہت سے ورا وِصال ملا یہ رفعتِ شاں     تمہارے لئے
خلیل و نجی، مسیح و صَفی سبھی سے کہی کہیں     بھی بنی
یہ بے خبری کہ خَلق پھری کہاں     سے کہاں     تمہارے لئے
بَفَورِ صدا سماں     یہ بندھا یہ سدرہ اٹھا وہ عرش جھکا
صُفوفِ سَما نے سجدہ کیا ہوئی جو اذاں     تمہارے لئے
یہ مَرحمتیں     کہ کچی مَتیں     نہ چھوڑیں     لَتیں     نہ اپنی گَتیں    
قصور کریں     اور ان سے بھریں     قصورِ جناں     تمہارے لئے
فَنا بَدَرَت بَقا بَبرَتْ ز ہر دو جِہت بگردِ سَرَتْ
ہے مَرکزِیَّت تمہاری صفت کہ دونوں     کماں     تمہارے لئے
اشارے سے چاند چیر دیا چھپے ہوئے خور کو پھیر لیا
گئے ہوئے دن کو عصر کیا یہ تاب و تَواں     تمہارے لئے
صبا وہ چلے کہ باغ پھلے وہ پھول کھلے کہ دن ہوں     بھلے
لِوا کے تلے ثنا میں     کھلے رضاؔکی زباں     تمہارے لئے
٭…٭…٭…٭…٭…٭
error: Content is protected !!