Our website is made possible by displaying online advertisements to our visitors. Please consider supporting us by whitelisting our website.

یاد میں جس کی نہیں ہوشِ تن و جاں ہم کو

یاد میں     جس کی نہیں     ہوشِ تن و جاں     ہم کو
پھر دِکھا دے وہ رُخ اے مہرِ فروزاں    ! ہم کو
دیر سے آپ میں     آنا نہیں     ملتا ہے ہمیں    
کیا ہی خُود رفتہ کیا جلوئہ جاناں    ! ہم کو
جس تبسّم نے گلستاں     پہ گرائی بجلی
پھر دِکھا دے وہ ادائے گلِ خنداں     ہم کو
کاش آویزئہ قندیلِ مدینہ ہو وہ دِل
جس کی سوزش نے کیا رشکِ چراغاں     ہم کو
عرش جس خوبیِ رفتار کا پامال ہوا
دو قدم چل کے دِکھا سروِ خراماں    ! ہم کو
شمعِ طیبہ سے میں     پروانہ رہوں     کب تک دُور
ہاں     جلا دے شررِ آتشِ پنہاں    ! ہم کو
خوف ہے سمع خراشیِ سگِ طیبہ کا
ورنہ کیا یاد نہیں     نالہ و اَفغاں     ہم کو
خاک ہوجائیں     درِ پاک پہ حسرت مِٹ جائے
یاالٰہی  نہ  پِھرا  بے  سر  و  سَاماں      ہم  کو
خارِ صحرائے مدینہ نہ نکِل جائے کہیں    
وحشتِ دل نہ پِھرا کوہ و بیاباں     ہم کو
تنگ آئے ہیں     دو عالم تری بیتابی سے
چین لینے دے تپِ سینۂ سوزاں     ہم کو
پاؤں     غِربال ہوئے راہِ مدینہ نہ ملی
اے جنوں    ! اب تو مِلے رُخصت زِنداں     ہم کو
میرے ہر زخمِ جگر سے یہ نکلتی ہے صَدا
اے مَلیحِ عربی! کر دے نمکداں     ہم کو
سیرِ گلشن سے اسیرانِ قَفَس کو کیا کام
نہ دے تکلیفِ چمن بلبلِ بُستاں     ہم کو
جب سے آنکھوں     میں     سمائی ہے مدینہ کی بہار
نظر آتے ہیں     خَزاں     دیدہ گلستاں     ہم کو
گر لب پاک سے اقرارِ شفاعت ہو جائے
یوں     نہ بے چین رکھے جوشِشِ عصیاں     ہم کو
نیّر حشر نے اِک آگ لگا رکھی ہے!
تیز ہے دھوپ ملے سایۂ داماں     ہم کو
رحم فرمائیے یا شاہ کہ اب تاب نہیں    
تابکے خون رُلائے غمِ ہجراں     ہم کو
چاکِ داماں     میں     نہ تھک جائیو اے دستِ جنوں    
پُرزے کرنا ہے ابھی جیب و گریباں     ہم کو
پَردہ اُس چہرئہ انور سے اُٹھا کر اِک بار
اپنا آئینہ بنا اے مہِ تاباں     ہم کو
اے رضاؔ وصفِ رُخِ پاک سُنانے کے لئے
نذر دیتے ہیں     چمن، مُرغِ غزل خواں     ہم کو
٭…٭…٭…٭…٭…٭
error: Content is protected !!