Our website is made possible by displaying online advertisements to our visitors. Please consider supporting us by whitelisting our website.

(۱۶) حج و عمرہ

    حج و عمرہ بھی ان اعمال میں سے ہیں جن پر اللہ تعالیٰ اور اس کے رسول صلی اللہ تعالیٰ علیہ واٰلہ وسلم نے جنت کی خوشخبری دی ہے۔چنانچہ حج و عمرہ کے فضائل میں چندحدیثیں حسب ذیل ہیں:
حدیث:۱
    عَنْ اَبِیْ ھُرَیْرَۃَ رَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنْہُ قَالَ قَالَ رَسُوْلُ اللہِ صَلَّی اللہُ عَلَیْہِ وَسَلَّمَ مَنْ حَجَّ لِلّٰہِ فَلَمْ یَرْفُثْ وَلَمْ یَفْسُقْ رَجَعَ کَیَوْمٍ وَلَدَتْہٗ اُمُّہٗ۔متفق علیہ(1)
                     (مشکوٰۃ،ج۱،ص۲۲۱)
    حضرت ابوہریرہ رضی اللہ تعالیٰ عنہ سے مروی ہے،انہوں نے کہاکہ رسول اللہ عزوجل وصلی اللہ تعالیٰ علیہ واٰلہ وسلم نے فرمایا کہ جو اللہ عزوجل کے لیے حج کرے اور جماع کے متعلق کوئی بات نہ کرے اور کوئی فسق نہ کرے تو وہ لوٹے گا اس دن کے مثل کہ اس کی ماں نے اُس کو جنا تھا۔ یہ حدیث بخاری و مسلم میں ہے۔


(adsbygoogle = window.adsbygoogle || []).push({});

حدیث:۲
    عَنْ اَبِیْ ھُرَیْرَۃَ اَنَّ رَسُوْلَ اللہِ صَلَّی اللہُ عَلَیْہِ وَسَلَّمَ قَالَ اَلْعُمْرَۃُ اِلَی الْعُمْرَۃِ کَفَّارَۃٌ لِمَا بَیْنَھُمَا وَالْحَجُّ الْمَبْرُوْرُ لَیْسَ لَہٗ جَزَاءٌ اِلَّا الْجَنَّۃُ(2)
                     (بخاری،ج۱،ص۲۳۸)
    حضرت ابوہریرہ رضی اللہ تعالیٰ عنہ سے مروی ہے ،انہوں نے کہا کہ رسول اللہ عزوجل وصلی اللہ تعالیٰ علیہ واٰلہ وسلم نے فرمایا ہے کہ ایک عمرہ دوسرے عمرہ تک ان دونوں کے درمیان کے گناہوں کا کفارہ ہے اور حج مبرور کے لئے جنت کے سوا کوئی جزاء ہی نہیں۔
حدیث:۳
    عَنْ اَبِیْ ھُرَیْرَۃَ عَنِ النَّبِیِّ صَلَّی اللہُ عَلَیْہِ وَسَلَّمَ اَنَّہٗ قَالَ اَلْحَاجُّ وَالْعُمَّارُ وَفْدُ اللہِ اِنْ دَعَوْہٗ اَجَابَہُمْ وَاِنِ اسْتَغْفَرُ وْہٗ غَفَرَ لَھُمْ(1) (مشکوٰۃ،ج۱،ص۲۲۳)
    حضرت ابوہریرہ رضی اللہ تعالیٰ عنہ نبی کریم صلی اللہ تعالیٰ علیہ واٰلہ وسلم سے روایت کرتے ہیں کہ حج و عمرہ کرنے والے اللہ تعالیٰ کے مہمان ہیں اگر یہ لوگ اس سے دعامانگیں گے تووہ قبول کریگااوراگراس سے بخشش طلب کریں گے تو وہ بخش دے گا۔
حدیث:۴
    عَنْ ابْنِ مَسْعُوْدٍ قَالَ قَالَ رَسُوْلُ اللہِ صَلَّی اللہُ عَلَیْہِ وَسَلَّمَ تَابِعُوْا بَیْنَ الْحَجِّ وَالْعُمْرَۃِ فَاِنَّھُمَا یَنْفِیَانِ الْفَقْرَ وَالذُّ نُوْبَ کَمَا یَنْفِی الْکِیْرُ خَبَثَ الْحَدِیْدِ وَالذَّھَبِ وَالْفِضَّۃِ وَلَیْسَ لِلْحَجَّۃِ الْمَبْرُوْرَۃِ ثَوَابٌ اِلَّا الْجَنَّۃَ(2)
                     (مشکوٰۃ،ج۱،ص۲۲۲)
    حضرت ابن مسعود رضی اللہ تعالیٰ عنہ سے مروی ہے ،انہوں نے کہا کہ رسول اللہ عزوجل وصلی اللہ تعالیٰ علیہ واٰلہ وسلم نے فرمایا ہے کہ حج و عمرہ یکے بعد دیگر کرتے رہو، اس لیے کہ یہ دونوں محتاجی اور گناہوں کو اس طرح دور کردیتے ہیں جیسے کہ بھٹی لوہے اور سونے چاندی کے میل کو دور کر دیتی ہے اور حج کے لیے جنت کے سوا کوئی ثواب ہی نہیں ہے۔
حدیث:۵
    عَنِ ابْنِ عُمَرَ قَالَ قَالَ رَسُوْلُ اللہِ صَلَّی اللہُ عَلَیْہِ وَسَلَّمَ اِذَا لَقِیْتَ الْحَاجَّ فَسَلِّمْ عَلَیْہِ وَصَافِحْہٗ وَمُرْہٗ اَنْ یَّسْتَغْفِرَ لَکَ قَبْلَ اَنْ یَّدْخُلَ بَیْتَہٗ فَاِنَّہٗ مَغْفُوْرٌ لَّہٗ(1)
                     (مشکوٰۃ،ج۱،ص۲۲۳)
    حضرت ابن عمررضی اللہ تعالی عنہماسے روایت ہے،انہوں نے کہاکہ رسول اللہ عزوجل وصلی اللہ تعالیٰ علیہ واٰلہ وسلم نے فرمایا ہے کہ جب تم کسی حج کرنے والے سے ملاقات کرو تواس سے سلام و مصافحہ کرواوراس سے کہوکہ وہ اپنے گھرمیں داخل ہونے سے پہلے تمہارے لیے مغفرت کی دعاکرے کیونکہ اس کی مغفرت ہوچکی ہے۔
حدیث:۶
عَنْ جَابِرٍ اِنَّ اللہَ لَیُدْخِلُ بِالْحَجَّۃِ الوَاحِدَۃِ ثَلٰثَۃَ نَفَرٍ الْجَنَّۃَ اَلْمَیِّتَ وَالْحَاجَّ وَالْمُنَفِّذَ لِذٰلِکَ(2)
 (کنزالعمال،ج۵،ص۲)
    حضرت جابررضی اللہ تعالیٰ عنہ سے روایت ہے، اللہ تعالیٰ ایک حج کے بدلے میں تین شخصوں کوجنت میں داخل فرمائے گا، میت کو اور حج کرنے والے کو اور حج کا سامان کرنے والے کو۔
حدیث:۷
     عَنْ اَبِیْ اُمَامَۃَ اَلْحَاجُّ فِیْ ضَمَانِ اللہِ مُقْبِلًا وَّمُدْبِرًا فَاِنْ اَصَابَہٗ فِیْ سَفَرِہٖ تَعَبٌ اَوْنَصَبٌ غَفَرَ اللہُ لَہٗ بِذٰلِکَ سَیِّئَاتِہٖ وَکَانَ لَہٗ بِکُلِّ قَدَمٍ یَرْفَعُہٗ اَلْفُ  اَلْفِ دَرَجَۃٍ فِی الْجَنَّۃِ وَبِکُلِّ قَطْرَۃٍ تُصِیْبُہٗ مِنْ مَطَرٍ اَجْرُ شَھِیْدٍ(1)
                     (کنزالعمال،ج۵،ص۷)
    حضرت ابوامامہ رضی اللہ تعالیٰ عنہ سے مروی ہے کہ حاجی جاتے اور لوٹتے میں اللہ تعالیٰ کی ضمانت میں ہے لہٰذا اس کو اگر اس کے سفر میں کوئی تھکن یا تکلیف پہنچی تو اللہ تعالیٰ اس کے سبب سے اس کے گناہوں کو بخش دے گا اور اس کے لیے ہر اس قدم کے بدلے جس کو وہ اٹھاتاہے دس لاکھ درجہ جنت میں ملے گااور بارش کے ہر اُس قطرے کے بدلے جو اس کے اوپر پڑے گی ایک شہید کا ثواب ہے۔
حدیث:۸


(adsbygoogle = window.adsbygoogle || []).push({});

    عَنْ اَبِیْ سَعِیْدٍ مَنْ حَجَّ وَاعْتَمَرَ فَمَاتَ مِنْ سَنَتِہٖ دَخَلَ الْجَنَّۃَ وَمَنْ صَامَ رَمَضَانَ ثُمَّ مَاتَ دَخَلَ الْجَنَّۃَ وَمَنْ غَزَا فَمَاتَ مِنْ سَنَتِہٖ دَخَلَ الْجَنَّۃَ (2)
                     (کنزالعمال،ج۵،ص۷)
    حضرت ابوسعید رضی اللہ تعالیٰ عنہ سے مروی ہے کہ جو شخص حج و عمرہ کرے اور اُسی سال مر جائے تو وہ جنت میں داخل ہوگا اور جو روزہ رکھے رمضان کا پھر مرجائے تو وہ جنت میں داخل ہوگا اور جو جہاد کرے پھر اُسی سال مرجائے تو وہ جنت میں داخل ہوگا۔
حدیث:۹
    عَنْ اَبِیْ ھُرَیْرَۃَ مَنْ اَتٰی ھٰذَا الْبَیْتَ فَلَمْ یَرْفُثْ وَلَمْ یَفْسُقْ رَجَعَ کَمَا وَلَدَتْہُ اُمُّہٗ۔(3)  (کنزالعمال،ج۵،ص۴)      حضرت ابوہریرہ رضی اللہ تعالیٰ عنہ سے مروی ہے کہ جو شخص اس بیت اللہ (کعبہ)کے پاس آیا اور کوئی ذکر جماع اور گناہ نہیں کیا تو وہ حج سے ایسا ہو کر لوٹے گا جیسا کہ اس کی ماں نے اس کو جنا تھا۔(یعنی گناہوں سے پاک و صاف ہو کر)
حدیث:۱۰
    عَنْ عَلِیٍّ قَالَ قَالَ رَسُوْلُ اللہِ صَلَّی اللہُ عَلَیْہِ وَسَلَّمَ مَنْ مَلَکَ زَادًا وَّرَاحِلَۃً تُبَلِّغُہٗ اِلٰی بَیْتِ اللہِ وَلَمْ یَحُجَّ فَلَا عَلَیْہِ اَنْ یَّمُوْتَ یَھُوْدِیًّا اَوْ نَصْرَانِیًّا وَذٰلِکَ اَنَّ اللہَ تَبَارَکَ وَتَعَالٰی یَقُوْلُ: وَلِلّٰہِ عَلَی النَّاسِ حِجُّ الْبَیْتِ مَنِ اسْتَطَاعَ اِلَیْہِ سَبِیْلًا۔(1)
             (مشکوٰۃ،ج۱،ص۲۲۲،کنزالعمال،ج۵،ص۱۱)
    حضرت علی رضی اللہ تعالیٰ عنہ سے روایت ہے، انہوں نے کہا کہ رسول اللہ عزوجل وصلی اللہ تعالیٰ علیہ واٰلہ وسلم نے فرمایا ہے کہ جو شخص توشہ اور ایسی سواری کا مالک ہوگیا جو اسے بیت اللہ تک پہنچادے پھر بھی اس نے حج نہیں کیا توکچھ فرق نہیں ہے کہ یہودی ہوتے ہوئے مرے یا نصرانی ہوتے ہوئے۔(یعنی اس کی موت اور یہودی و نصرانی کی موت میں کچھ فرق نہیں کہ وہ لوگ بھی حج نہیں کرتے اور اس نے بھی حج نہیں کیا)اور یہ اِس لیے کہ اللہ تبارک و تعالیٰ فرماتا ہے کہ اللہ ہی کے لیے لوگوں پر بیت اللہ کا حج ہے جو بیت اللہ تک راستہ کی طاقت رکھے۔

تشریحات و فوائد

 (۱) حدیث نمبر ۲ اور حدیث نمبر ۴ میں ”حج مبرور”کی فضیلت کا ذکر آیا ہے حج مبرور
کس کو کہتے ہیں؟ اس کو ملاحظہ کیجئے۔
ــــــــــــــــــــــــــــــــــــــ
1۔۔۔۔۔۔مشکاۃالمصابیح،کتاب المناسک،الفصل الاول،الحدیث:۲۵۰۷،ج۱،ص۴۶۷
2۔۔۔۔۔۔صحیح البخاری،کتاب العمرۃ،باب العمرۃ…الخ،الحدیث:۱۷۷۳،ج۱،ص۵۸۶
1۔۔۔۔۔۔مشکاۃالمصابیح،کتاب المناسک،الفصل الثالث،الحدیث:۲۵۳۶،ج۱،ص۴۷۲
2۔۔۔۔۔۔مشکاۃالمصابیح،کتاب المناسک،الفصل الثانی،الحدیث:۲۵۲۴،ج۱، ص۴۷۰
1۔۔۔۔۔۔مشکاۃالمصابیح،کتاب المناسک،الفصل الثالث،الحدیث:۲۵۳۸،ج۱،ص۴۷۲
2۔۔۔۔۔۔کنزالعمال،کتاب الحج والعمرۃ،الحدیث:۱۱۷۸۷،ج۳،الجزئ۵،ص۴
1۔۔۔۔۔۔کنزالعمال،کتاب الحج والعمرۃ،الحدیث۱۱۸۳۶،ج۳،الجزئ۵،ص۷
2۔۔۔۔۔۔کنزالعمال،کتاب الحج والعمرۃ،الحدیث۱۱۸۴۲،ج۳،الجزئ۵،ص۸
3۔۔۔۔۔۔کنزالعمال،کتاب الحج والعمرۃ،الحدیث۱۱۸۲۵،ج۳،الجزئ۵،ص۶
ــــــــــــــــــــــــــــــــــــــ
1۔۔۔۔۔۔ترجمہ کنزالایمان:ا وراللہ کے لئے لوگوں پراس گھر کاحج کرناہے جواس تک چل سکے۔(پ۴، ال عمرٰن:۹۷) ومشکاۃالمصابیح،کتاب المناسک،الفصل الثانی،الحدیث:۲۵۲۱،ج۱، ص۴۷۰
error: Content is protected !!