Our website is made possible by displaying online advertisements to our visitors. Please consider supporting us by whitelisting our website.

نہ بھلادوں گا میں تازیست کہانی تیری

Ghazal

نہ بھلادوں گا میں تازیست کہانی تیری

 وہ ادا، غمزہ، وہ آشفتہ بیانی تیری

رات تل میں ہے تو رخسار میں صبح

 روشن رات دن دل میں ہے صورت وہ سہانی تیری​

تری تصویر کو آتش کے حوالے تو کیا

پھر بھی کاغذ پہ رہی باقی نشانی تیری

توتخیل میں مرے رہتا ہے شاہیں کی طرح

 ہے بلند مرتبہ شاہانہ پیشانی تیری

 غلام ربانی فدا

Ghazal

نہ بھلادوں گا میں تازیست کہانی تیری

 وہ ادا، غمزہ، وہ آشفتہ بیانی تیری

رات تل میں ہے تو رخسار میں صبح

 روشن رات دن دل میں ہے صورت وہ سہانی تیری​

تری تصویر کو آتش کے حوالے تو کیا

پھر بھی کاغذ پہ رہی باقی نشانی تیری

توتخیل میں مرے رہتا ہے شاہیں کی طرح

 ہے بلند مرتبہ شاہانہ پیشانی تیری

 غلام ربانی فدا

Ghazal

نہ بھلادوں گا میں تازیست کہانی تیری

 وہ ادا، غمزہ، وہ آشفتہ بیانی تیری

رات تل میں ہے تو رخسار میں صبح

 روشن رات دن دل میں ہے صورت وہ سہانی تیری​

تری تصویر کو آتش کے حوالے تو کیا

پھر بھی کاغذ پہ رہی باقی نشانی تیری

توتخیل میں مرے رہتا ہے شاہیں کی طرح

 ہے بلند مرتبہ شاہانہ پیشانی تیری

 غلام ربانی فدا

error: Content is protected !!