شخصیۃ شیخ الإسلام الفارو قیؒ فی ضوء ماٰثرہ العلمیۃ ’’ھیھات أن یأتی الزمان بمثلہ‘‘

شخصیۃ شیخ الإسلام الفارو قیؒ
فی ضوء ماٰثرہ العلمیۃ
’’ھیھات أن یأتی الزمان بمثلہ‘‘

فضیلۃ الاستاذ الحافظ محمد لطیف احمد،اُستاذ اللغۃ العربیۃ بالجامعۃ النظامیۃ،وباحث الدکتوراۃ بالقسم العربی، الجامعۃ العثمانیۃ 

           الحمد للہ الذی لہ الاسماء الحسنی والصفات العلِیّۃ، والصلاۃ والسلام علی خیر البریۃ وأ کرم البشریۃ، وعلی اٰلہ ذوی النفوس القدسیۃ وأصحابہ نجوم الھدی النیرۃ، وعلی کل من أشرق منار العلوم وأنار سراج المعارف بأنوارہ البھیۃ، وبعد!
الحدیث عن شخصیۃ شیخ الإسلام فی ضوء ماٰثرہ العلمیۃ حدیث ذوشجون ویحتاج إلی دراسۃ مستفیضۃ۔
      ھو الإمام الجلیل الفقیہ المحدّث شیخ الإسلام الحافظ محمد أنوار اللّٰہ بن أبی محمد شجاع الدین بن القاضی سراج الدین الفاروقی الحنفی الملقب بفضیلت جنک وخان بھادرابن الشھاب فرخ شاہ الکابلی، مؤسس الجامعۃ النظامیۃ الإسلامیۃ فی حیدرآباد الدکن۔ 
ولد رحمہ اللّٰہ تعالی فی قریۃ قندھار بمدیریۃ ناندیرھ  من بلاد الدکن فی ۴/ربیع الثاني سنۃ أربع وستین ومائتین بعد الالف من الھجرۃ۔
وکان والدہ الشیخ أبو محمد شجاع الدین عالما متدیّناً، ذامکانۃ عالیۃ فی قریتہ (قندھار) کما کانت أمہ سیدۃ فاضلۃ ذات دین تنتسب إلـی أسـرۃ کریمۃ للشیخ الروحی أحمد کبیر الرفاعی رحمہ اللّٰہ تعالی۔ وینتمی سلالۃ أبیہ إلی الخلیفۃ الثانی سیدنا عمر الفاروق رضی اللہ عنہ، حیث انتزح اٰباؤہ عن بلاد العرب من طریق أفغانستان إلی الھند۔ وظھرت علیہ علائم النبوغ ومظاھر النجابۃ منذ صغرہ بل وقبل ولادتہ فی المبشّرات التی أریت لہٗ فی المنام‘ فأتمّ حفظ القرآن الکریم وعمرہ إحدٰی عشـرۃ سنۃ بقندھار۔ وتلقّی دروسہ الدینیۃ الأوّلیۃ علی أبیہ وتفقّہ علی الشیخ فیاض الدین الاورنک آبادی۔ ولمّا انتقل إلی حیدرآباد فاتصل بالعلماء الأعلام فقرأ التفسیر والحدیث علی الشیخ عبداللّٰہ الیمنی وتلمذ فی العلوم النـقلیۃ والعقلیۃ للشیخ عبدالحلیم الفرنجی محلی وابنہ الشیخ عبدالحی الفرنجی محلی لارواء غلتہ العلمیۃ۔ 
ومن أبرز تلامیذہ: جلالۃ الملک میر محبوب علی خان آصفجاہ السادس وجلالۃ الملک میر عثمان علیخان آصفجاہ السابع وابناہ أعظم جاہ ومعظم جاہ والشیخ محمد مظفر الدین المعلّی والقاضی محمد شریف الدین الفالمی ناظر دائرۃ المعارف النظامیۃ ومولانا عبدالجبار خان الآصفی مصنف ’’تذکرۃ أولیاء الدکن‘‘ والمفتی محمد رکن الدین مفتی الجامعۃ النظامیۃ والأدیب السید ابراھیم الرضوی أستاذ اللغۃ العربیۃ وآدابھا بالجامعۃ العثمانیۃ ومحدث الدکن الشیخ عبداللہ شاہ النقشبندی صاحب ’’زجاجۃ المصابیح‘‘ و المفتی السید احمد علی الصوفی القادری والشیخ السید محمود مفتی الشافعیۃ والشیخ السید غوث الدین القادری شیخ الفقہ بالجامعۃ النظامیۃ والمفتی محمد رحیم الدین مدیر الجامعۃ النظامیۃ والطبیب مولانا محمود الصمدانی مدیر المستشفی الیونانی المرکزی والشیخ ابوالوفاء الافغانی مؤسس لجنۃ ’’احیاء المعارف النعمانیۃ‘‘ والشیخ محمد ولی الدین مدیر مجلس اشاعۃ العلوم ۔رحمہم اللہ تعالی۔
أنشأ الجامعۃ النظامیۃ فی ۱۹؍ذی الحجۃ ۱۲۹۲ھـ ۔ ۱۸۷۵م و لجنۃ للتألیف والنشر باسم ’’مجلس اشاعۃ العلوم‘‘، ولا یذھب علینا أنہ أحدُ من یرجع الفضل إلیہ فی تأسیس دائرۃ المعارف العثمانیۃ والمکتبۃ الآصفیۃ المرکزیۃ‘ فعمّ نفعھا فی الناس وذاع صیتُھا فی الأقطار وأصبحت شخصیتہ علماً من أعلام الإسلام وأعیانہ حتی برز إماماً یقتدٰی‘ لا یقادٰی ولا یمادٰی ورائدالفکر الإسلامی الوحید فی مناطق الدکن علی الاطلاق‘ واستولت علیھا فکرتہ المعتدلۃ البنّائۃ وأخذ الولاۃ والقضاۃ والعلماء والزعمائُ یسیرون تحت رایتہ ویستنیرون بأفکارہ النیّرۃ ویسترشدون بإرشاداتہ الرشیدۃ۔
سافر للحج اربعا فتعرف الی رجال العلم والفقہ والحدیث فی مصر والحجاز والعراق۔
توفّی رحمہ اللّٰہ تعالی فی ۲۹/ جمادٰی الأولی ۱۳۳۶ھـ ۱۳؍مارس ۱۹۱۸م، یوم الأربعاء ودفن بأمر الملک عثمان علیخان فی رحاب الجامعۃ النظامیۃ۔(۱)
وھذہ حقیقۃ لا یختلف فیھا اثنان ولا ینتطح فیھا عنزان أن ھذا الموضوع لا یمکن لمثلی أن یستوعب جمیع زوایاہ ویحیط بخبایاہ‘ وانّٰی یمکن ذلک لأحد إذ أثنی علیہ الأعلام والمشاھیر و شھدوا بفضلہ‘ فعلی رأسھم شیخہ فی الطریقۃ قدوۃ السالکین الحاج امداد اللّٰہ المھاجر الی مکۃ علیہ سحائب الرحمۃ والرضوان‘ کما فی مقدمۃ کتاب ’’الانوار الأحمدیۃ‘‘ فقال فی شعرہ:
جاء بالنور فوقہ نور
المصنف کإسمہ أنوار
أرجو ان تنـفع دلائلہ
تطمئن القلوب بالأذکار(۲)
وذکرہ أستاذہ العلامۃ ابوالحسنات اللکنوی فی رسالتہ ’’حل المغلق فی بحث المجھول المطلق‘‘ ونصّہ کما یلی:
الّفتھا حین قرا ئۃ الذکی المتوقّد المولوی الحافظ محمد انواراللہ بن المولوی شجاع الدین الحیدرآبادی (۳)
وأخبرنا فضیلۃ الشیخ المفتی محمد ولی اللہ ــرحمہ اللہ تعالٰی ــ مفتی الجامعۃ النظامیۃ الاسبق’’سمعت تلمیذہ الملک عثمان علی خان آصفجاہ السابع یقول حینما یزور قبرہ: أتعرفون من ھذا؟ ھذا شیخی واستاذی، لم ترعینی نظیرہ وقلما تلد نسائُ الھند مثلہ‘‘۔(۴)
وکما کان جمّاعۃ للکتب ومغریً بجمع المخطوطات فاستنسخ من علماء داغستان (۵) علی نفقتہ الخاصّۃ ــ حینما زار المدینۃ المنورۃ سنۃ ۱۳۰۵ھــ نوادر مکتباتھا من المکتبۃ المحمودیۃ ومکتبۃ شیخ الاسلام عارف حکمت بک(۶) وتوفّرت لدیہ مالم تتوفّر لدی غیرہ وذخرت خزانتہ بالنفائس من ’’جامع مسانید الامام الاعظم ابی حنیفۃؒ‘‘ لأبی المویّد الخوارزمی، ’’کنزالعمال‘‘ لعلی المتقی الھندی، ’’الجواھر المکلّلۃ فی الاخبار المسلسلۃ‘‘ للحافظ السخاوی، ’’الجوھر النقی فی الردّ علی البیھقی‘‘ لابن الترکمانی، ’’الاتحافات السنیۃ فی الاحادیث القدسیۃ‘‘ للشیخ محمد بن محمود المدنی الطربزونی الحنفی، ’’افتتاح القاری لصحیح البخاری‘‘، و’’تحفۃ الأخباری بترجمۃ البخاری‘‘ لمحمد ابن ناصر الدین القیسی الدمشقی، تسھیل السبیل الی کشف الالتباس لابن غرس الدین الخلیلی، لقط اللآلی المتناثرۃ فی الاحادیث المتواترۃ للسید محمد مرتضی الحسینی الزّبیدی وحیٰوۃ  الأنبیاء للبیھقی ـــ رحمہم اللہ تعالی ــ ولم یطلع علی بعض منھا اھل الھند بل واھل العالم من قبل، فاعتنی بطبع بعض منھا ونشرہ۔ واما کتاب’’الجواھر المکلّلۃ فی الاخبار المسلسلۃ فیقوم بتحقیقہ کاتب ھذہ المقالۃ تحت اشراف فضیلۃ الشیخ المفتی خلیل احمد مفتی الدیار الدکنیۃ فی الھند بقسم البحث والتحقیق فی الجامعۃ النظامیۃ۔
تأییداً لما اسلفنا وتاکیداً لما بیّنا نذکر انطباعات نخبۃ الأفاضل ممّن عاصروہ وأثنوا علیہ وأشادوا بذکرہ واعترفوا بفضلہ:
٭یقول الشیخ أبوالحسن الأمروھیّؒ، المصحّح بدائرۃ المعارف النظامیۃ (العثمانیۃ) فی خاتمۃ الطبع علی ’’کنز العمال‘‘:
وکانت النسخ من ھذا الکتاب ’’کنزالعمال‘‘ قلیلۃ جدّا متفرقۃ فی البلاد حتی کان من قلّۃ وجودہ کالاسم یسمّّٰی ولایوجد لہ المسمّٰی، فوفّق اللہ لاستخراج ھذا الکنز المدفون واشھار ذلک الجوھر المکنون… واتفق بدایۃ ھذا الأمر بأنہ سافر العالم الفاضل قدوۃ العلماء، زبدۃ الفضلاء المویّد بامداد اللہ مولانا المولوی الحافظ محمد انواراللہ (خان بھادر) زاد مجدہ ودام فضلہ ــ الی حج البیت الحرام، وزیارۃ المدینۃ الطیبۃ علی صاحبھا افضل الصلوات والسلام، وجد ھناک نسخۃ واحدۃ من ’’کنزالعمال‘‘ فاھتمّ فی تحصیلھا وبذل فی انتساخھا کثیرالمال۔ شکراللہ جھدہ وأسعد جدّہ۔ (۷)
٭وکتب سماحۃ الشیخ السید ابراھیم الادیب الرضویؒ فی تقریظہ علی ’’جامع مسانید الامام الأعظم‘‘:
والحمدللہ علی طبعہ فی القرن الحمید والعصر السدید زمن الملک الرشید نظام الملک آصف جاہ میر عثمان علی خان بھادر بادشاہ، وکان ذلک بأمرقدوۃ الاماثل وأسوۃ الافاضل شیخ الاسلام والمسلمین حضرۃ الحافظ الحاج مولانا الشیخ محمد انواراللہ معین المھامّ بالأمور المذھبیۃ دامت جلابیب ظلالہ تشمل الضاحین وشاٰبیب افضالہ تغمر العافین۔ (۸)
٭ویقول الشیخ الحسن بن أحمد الحنفیؒ مدیر مطبعۃ دائرۃ المعارف فی خاتمۃ الطبع علی’’الجوھر النقی‘‘ لابن الترکمانی:
تمّ طبع ھذا الکتاب بعون اللہ الملک الوھاب … قد بذلنا الجھد فی التصحیح والمقابلۃ لکن لم یتیسّر فی أوان الطبع الا نسخۃ واحدۃ للشیخ مولانا الحافظ الحاج المولوی محمد انواراللہ خان بھادر سلمہ اللہ۔ (۹)
٭ وذکر الشریف عبدالحی الحسنیؒ فی ’’نزھۃ الخواطر‘‘ فقال:
’’وکان أوحد زمانہ فی العلوم العقلیۃ والنقلیۃ، شدید التعبد، مدیم الاشتغال، أسّس المدرسۃ النظامیۃ بحیدرآباد سنۃ ثلاث وتسعین ومائتین وألف ـــ (فیہ تسامح، والأصح سنۃ اثنتین وتسعین) ـــ وأسّس مجمعا علمیّا للتألیف والنشر، سمّاہ اشاعۃالعلوم۔
وفی آخر حیاتہ کان یقضی لیلہ فی الاشتغال العلمی، وکان ینام بعد صلوۃ الفجر الی أن یتعالی النھار، وکان مشغوفا بجمع الکتب النادرۃ۔
ولہ مصنفات کثیرۃ بالاردویۃ والعربیۃ‘‘۔ (۱۰)
فأقدم الیکم بعض الجوانب والملامح المھمّۃ من الموضوع مقتبسا من تصانیفہ القیمۃ۔ إننا علی معرفۃ تامّۃ بأن الدکن قبل قرن والنصف کانت شاعت فیھا المنکرات والأثام و اعتقد المسلمون فی بعض اوھام الھندوس واتبعوا أھوائھم وتـقالیدھم کما أن الأنجلیز المحتلّۃ کانت تحیط بدولۃ حیدرآباد الدکن فتتسرّب شرورھم ومکائدھم من الحدود المـجـاورۃ لھا وکانت تھبّ علی أھلھا عواصف الفسوق والضلالۃ وفساد العقیدۃ من الرافضیۃ  والوھابیۃ والسلفیۃ والدھریۃ والعلمانیۃ والقادیانیۃ۔
وکان شیخ الإسلام عُني أعظم عنایۃ بصیانۃ الدین المتین فثارت غیرتہ الفاروقیۃ وحمیتہ الإسلامیۃ وشحامتہ الدینیۃ فرفع القلم وحرک البنان‘ وردّ علیھم ردّا قاطعا شافی البیان‘ مویّدا بالبرھان وکتب مؤلفات قیمۃ جمۃ المنافع وترک مأٰثر علمیۃ أثریٰ بھا المکتبۃ الإسلامیۃ، وھو یسلک فیھا مسلک علماء الحق العاملین ویسیر فیھا مسیر القصد والإعتدال من غیر افراط ولا تفریط۔ وھذا ھو المنھج السلیم الذی دعا الإسلام الیہ کما فی قولہ تعالی {وکذلک جعلٰنکم امۃ وسطا} وقال علیـہ الـصلوۃ والسلام ’’خیر الامور أوسطھا‘‘ فھو یختار فی الأمور الخلافیۃ والفروع المختلف فیھا أسلوبا حکیما وجانبا لیّنا متمسّکا بقولہ علیہ الصلوۃ والسلام ’’یسّروا ولا تعسّروا وبشّروا ولا  تنفّروا‘‘۔ ویتبع السواد الأعظم ولا یتـفرد فیھا تفردا مائلا عن إجماع الامۃ۔(۱۱)
أولًا أسرد أسماء مؤلفاتہ ومن ثمّ أعرّف بعضا منھا بالإیجاز وھی کما یلی:
۱)المجموعۃ المنتخبۃ من الصحاح الستۃ باللغۃ العربیۃ
۲) المجموعۃ المنتخبۃ من الفتوحات المکیۃ باللغۃ العربیۃ
۳) حاشیۃ علی ’’مسلّم الثبوت‘‘ لمحبّ اللہ البھاریؒ باللغۃ العربیۃ
۴) الاربعون فی فضل العلم والعلماء باللغۃ العربیۃ
۵) انوار اللہ الودود بالاردیّۃ
۶) مقاصد الإسلام(فی أحد عشر جزء ا) بالأردیۃ
۷) الأنوار الأحمدیۃ بالاردیۃ
۸) الکلام المرفوع بالاردیۃ
۹) إفادۃ الأفھام فی إزالۃ الأوھام (جزئان) بالاردیۃ
۱۰) کتاب العقل بالاردیۃ
۱۱) انوارالحق بالاردیۃ
۱۲) حقیقۃ الفقہ (جزئان) بالاردیۃ
۱۳) مسئلۃ الربٰو بالاردیۃ
۱۴) خدا کی قدرت بالاردیۃ
۱۵) أنوار التمجید فی أدلۃ التوحید بالفارسیۃ
۱۶) شمیم الأنوار ۔ (دیوان شعرہ ) بالفارسیۃ والأردیۃ 
۱۷) رسالۃ ’’خلق افعال‘‘ بالاردیۃ
۱۸) مفاتیح الأعلام باللغۃ الاردیۃ
۱۹) بشری الکرام باللغۃ الاردیۃ
کما رأیت علی شتّی الکتب من شرح المواھب للزرقانیؒ وارشاد الساری للقسطلانیؒ والفتوحات المکّیۃ وغیرھا تعلیقات بخطہ لِتنبیہ الی فوائد فیھا۔
ویدلّ ھذا التنوع علی علم غزیر‘ وفھم عمیق ووعی بصیر۔ وکان عالما متفنّنا مجیدا فی اللغات الثلاث ومتضلّعا منھا ویعتبر أدیبا ناثرا ناظما یشار إلیہ۔ ولکنہ اختار لإبلاغ رسالتہ وعموم نفعھا فی المجتمع الھندی اللغۃ الأردیۃ  المحلیۃ نظرا إلی قول اللّٰہ تعالی {وما ارسلنا من رسول إلا بلسان قومہ لیبین لھم}۔ فکان شیخ الإسلام کما یبدولنا فی مرآۃ من تصانیفہ عارفا کبیرا‘ عالماً ربّانیا‘ داعیۃ اسلامیا ومجدّدا عظیما وکان بارعا فی العلوم النـقلیۃ من التفسیر والحدیث والفقہ والأصول والتصوف والتاریخ ومتبحرا فیھا کما کان لہ باع طویل ونظر دقیق فی العلوم الآلیۃ والعقلیۃ من الأدب واللغۃ والمنطق والکلام والفلسفۃ والحکمۃ وعلم الاکتشافات الحدیثۃ وإلی غیر ذلک فیبحث عما یتعلق بھا من خلال تصانیفہ واذا تکلم علی قضیۃ او مسئلۃ سرد و ذکر من دلائل العقل والنـقل علی التتابع والتوالی ما تجعل القراء مطمئنین مرتوین‘ فکان قوی الحفظ‘ واسع الاطلاع علی کتب السلف‘ خصب الفکر ودقیق النظر فیھا۔ فلنـتعرض ھنا لتعریف بعض من مؤلفاتہ:
۱۔ المجموعۃ المنتخبۃ من الصحاح الستّۃ: یتکوّن الکتاب من نخبۃ أحادیث الکتب الستۃ‘ إنتخبھا الإمام الفاروقی لفوائد کامنۃ و معانی مکنونۃ۔ وترجم لھا تراجم جدیدۃ تناسبھا فھی تشھد علی تفقھہ فی الدین و تضلعہ من العلوم الحدیثیۃ۔ ومازال الکتاب مخطوطا فی مکتبۃ الجامعۃ النظامیۃ لم یطبع بعدُ، یقوم بتحقیقہ وتعلیقہ فضیلۃ الأخ الاستاذ محمد شبیر احمد المدرس بالجامعۃ۔
۲۔ مقاصد الإسلام: إن مؤلفہ الشھیر العبقری المفعم بالمعارف الإسلامیۃ المعروف بـ ’’مقاصد الإسلام‘‘ المکون بأحد عشر جزء ا إنہ دائــرۃ الـمـعـارف الإسلامیۃ التی تنیر قلب کل مستنیر وترشد کل مستر شد۔ یتضمّن الکتاب مجموعۃ من المقالات فی أغراض متنوعۃ دینیۃ وعلمیۃ و ثقافیۃ واجتماعیۃ وتاریخیۃ۔ ویھدی کل مستھد إلی سواء السبیل فی کل قضیۃ شائکۃ للمجتمع المسلم مثلا عن حقیقۃ الایمان وعقیدتہ وھل ھناک فرق بین الایمان والاسلام؟ وختم النبوۃ والرسالۃ والرفض والخروج والجبر والقدر وضرورۃ المعجزات وإثبات الولایۃ والکرامۃ  و حقیقۃ الإنسان و رؤیۃ داروین عن الإنسان وغیرھا من الموضوعات المھمّۃ ولا شک فی أنھا درر منثورۃ نظمھا الشیخ فی سلک واحد۔
۳۔ الأنوار الأحمدیۃ: وأما کتابہ ’’الانوار الاحمدیۃ‘‘ فھو کتاب جلیل القدر عظیم النفع کثیر الفائدۃ  ما صنف مثلہ فی معناہ۔ فلا یکادیوجد ما تضمنہ من بدائع الفوائد وفرائد القلائد فی کتاب سواہ۔ ویشتمل علی جملۃ من المسائل تتضمّن الکلام علی فضائل النبی صلی اللّٰہ علیہ وسلم ومناقبہ واٰدابہ وفضائل الصلوۃ والسلام علیہ وفوائدہ ومسئـلـۃ زیـادۃ الإیــمان ونـقصہ و استحباب القیام عندالسلام ۔وھوردّ بلیغ علی الوھابیۃ ‘ کتبہ أیام اقامتہ بالمدینۃ المنورۃ موافقا للسنۃ السنیۃ ۔والکتاب یبعث السرور والحبور الی ذھن القاریٔ‘ ففاق علی أقرانہ وتمیز علی اشکالہ باللغۃ الأردیۃ۔ویضمّ الکتاب تقریظا منیفا کتبہ شیخ العرب والعجم مولانا امداد اللہ المھاجر الی مکۃ رحمہ اللہ تعالی ونوّہ فیہ بالکتاب ومؤلفہ ودعمہ بموافقتہ وختمہ۔ فالیکم ــ ایھا الاعزاء ــ قبسۃ من تقریظہ:’’إنی سمعت ھذا الکتاب من اولہ إلی اٰخر بحث الاٰداب ووجدتہ موافقا للسنّۃ السنیۃ فسمّیتہ بالانوار الاحمدیۃ۔ وإنما ھذا  مذھبی وعلیہ مدار مشربی۔(۱۲)
۴) کتا ب العقل: وھو کتاب رد فیہ علی الدھر یین الملحدین والحکماء الیونانیین والعلماء المنحرفین عن الإسلام ردّا إلزامیا محتجّا باصولھم العقلیۃ الموضوعۃ و أوضح مکانۃ العقل وحقیقتہ ورحاب عملہ فی ضوء العقل واستخدامہ وحدّہ الاقصی لدی الإسلام۔
۵) الکلام المرفوع: وھو کتاب صغیر الجسم عظیم القدر قلیل المباني کثیر المعانی‘ ألفہ خلال اقامتہ بالمدینۃ المنورۃ وتکلّم فیہ علی الحدیث الموضوع مما یتعلق بواجبات الفقھاء والمحدثین وقرائن الوضع والجمع والتطبیق بین الأحادیث المتعارضۃ والکلام علیھا سندًا ومتناوأسبابا وعِلَلا وقام بتنقیح الاحادیث التی أدرجت فی الموضوعات۔ والکتاب فی الحقیقۃ جزء من کتابہ ’’الانوار الأحمدیۃ‘‘ أفردہ بأمر الشیخ امداد اللہؒ نظراً لأھمّیۃ محتویاتہ۔ والاٰن طبع مرۃ ثالثۃ بعد ما ترجمہ استاذنا فضیلۃ شیخ الحدیث محمد خواجہ شریف حفظہ اللّٰہ تعالی إلی العربیۃ۔
۶) افـادۃ الأفھام: یتکون الکتاب من جزء ین‘ یھدف المؤلف من خلالہ إلی الکشف عن حقیقۃ المتنبّیٔ القادیانی وإبطال دعاویہ الکاذبۃ وردّ علیہ رداّ إلزامیّا فی ضوئِ أقاویلہ المتعارضۃ ومفتریاتہ الزائفۃ۔ وھو أول کتاب فی موضوعہ لم ینسج علی منوالہ بعدُ۔
ولمّا اطلع علیہ العالم الجلیل مولانا أحمد رضا خان القادریؒ تاق إلیہ و کتب إلی مؤلّفہ الھمام یطلبہ الکتاب۔ فقال: انّی أشتاقُ الی جمیع تصانیفک، لوتباع بالثمن فأخبرنی عن ثمنھا، قرأت صفحتین من کتابک عن القادیانی المخذول ’’افادۃ الأفھام‘‘ أشدت بہ علٰی أحدٍ من الاخوان فذھب بہ۔(۱۳)
۷) حقیقۃ الفقہ: ھذ الکتاب لہ جزئان: فالجزء الأوّل یحتوی علی حقیقۃ الفقہ وضرورتہ وتعریفہ وسبب إختلاف الأحادیث وتعارضھا فی الظاھر و واجبات المجتھدین والمحدثین وجھود المحدثین فی تدوین الحدیث ومکانۃ الامام الأعظم أبی حنیفۃؒ لدی المحدثین وثناء ھم علیہ و الردّ علی نصوص الکتاب ’’سیـرۃ النعمان‘‘ التی تکدر ذھن القاری وتختلجُ فی صدرہ۔
وأمّا الجزء الثانی منہ فیتحدث عن تدوین الفقہ الحنـفی واشتھارہ   فی الآفاق وانتشارہ فی الناس وضرورۃ تقلید الائمۃ واتفاق أئمۃ الحدیث علی إمامۃ الإمام الأعظم أبی حنیفۃ وبیان أن لفظۃ أھل الرأی مدح لاذمّ۔(۱۴) وان بناء الفقہ الحنفی علی الکتاب والسنـۃ۔ 
ونظراً إلی أھمیۃ الکتاب وجامعیتہ ذکرہ الدکتور محمد حمید اللہ الحیدرآبادی فی مقال لہ کمرجع یحال علیہ فی موضوعہ۔
فانظروا ــ أعزّائی القراء ــ ھذہ العبارۃ الرائعۃ من الکتاب ’’الکلام المرفوع‘‘ کمثال لنبوغہ الکامل فی علم الحدیث النبوی الشریف علی صاحبہ الصلوۃ والسلام وھی کما معناہ: 
’’وقد اثبت ابن حجر رحمۃ اللہ علیہ فی فتح الباری رؤیۃ النبی صلی اللہ علیہ وسلم ربّہ واستدل علیہ بروایۃ صحیحۃ عن ابن عباس رضی اللہ تعالی عنھما وکما نـقل ابن حجر قول الحسن البصری رحمہ اللہ تعالی والذی کان یقسم ویقول إن محمدا صلی اللہ علیہ وسلم رأی ربہ‘‘۔ انتھی۔ 
انظروا ــ  ایھا الاعزاء ــ الی تعلیق شیخ الاسلام علی ھذا الکلام وإثبات رؤیۃ النبی صلی اللہ علیہ وسلم ربہ فقال:
’’فقد ھان علی ھؤلاء السادۃ الحلفُ باللّٰہ علی ردمارأت سیدتنا عائشۃ رضی اللّٰہ عنھا بسبب ثقتھم الکاملۃ فی باب رؤیتہ صلی اللّٰہ علیہ وسلم ربہ مع ان الحلف شیٔ عظیم۔ فلم یخرج الإمام البخاری تلک الروایات۔  فھل یعقل أن ھذہ الروایات لم تبلغ البخاری؟ مع ان روایۃ عائشۃ رضی اللہ عنھا لیست مرفوعۃ وانما کانت من اجتھادھا کما یظھر ذلک من استدلالھا ولکن اخرجھا فی صحیحہ فقد کان اجتھاد الإمام البخاری موافقا لإجتھاد سیدتنا عائشۃ الصدیقۃ رضی اللہ عنھا لذلک روی الإمام البخاری نفس الروایات‘‘۔(۱۵)
أیھا الاعزاء !  لشیخ الإسلام جنب ھذا تالیفات شعریۃ فی النظم۔
وانا لست شاعرا ولکن من خلال مطالعۃ شخصیۃ الإمام الفاروقی أحاول أن اقدم لکم تحلیلی المتواضع عن شعرہ الوارف العمیق معناہ بأنہ مستوحی من قلب ذاکر وخاشع متضرع یعطی رسالتہ الروحیۃ ویدخل الروح والریحان فی قلب المستمع وإنہ لطیب مستخرج من الکتاب والسنۃ۔
صفوۃ الکلام أن ماٰثرہ الخالدۃ ستذکر العالم  عن شخصیتہ‘ وفوق کل ذلک ان مؤلفاتہ مستلھمۃ من القراٰن المجید والحدیث النبوی الشریف۔وجلّ مؤلفاتہ مقتطفۃ من ثمار الروضۃ النبویۃ فکل من جناھا ارتوت نفسہٗ و شبعت روحہ وتطھرت من الادران والاوساخ فی مجـال الـحیٰـوۃ الـدنیویۃ والاخرویۃ۔ فمحتویاتُھا بدیعۃ المنال‘ منیعۃ المثال انفرد شیخ الاسلام بتدقیقہ فیھا عن نظرائہ واشتھر بتحقیقہ لھا عن قرنائہ۔
وبھذہ الأعمال الجلیلۃ والاسھامات النبیلۃ التی خلّفھا الإمام الفاروقی متوخّیا دار البقاء ‘زاھدًا بدار الفناء استحق قول الشاعر:
ھیھات أن یأتی الزمان بمثلہ إن الزمان بمثلہ لضنین
أکتفی بھذا القدر من الحدیث عن شخصیۃ ھذا الإمام الجلیل فی ضوء مأثرہ العلمیۃ۔ ونسأل اللّٰہ تعالی أن یجعلنا نترسّم خطاہ وخطا أھل العلم العاملین والدعاۃ إلی الحق المخلصین۔
الھوامش:
۱}ملخصا من مطلع الانوار للمفتی محمد رکن الدینؒ، ورسالۃ الدکتوراۃ: د؍محمد عبدالحمید اکبر۔
۲} مقدمۃ الامام محمد انواراللہ الفاروقیؒ علی ’’الانوار الاحمدیہ‘‘۔
۳} مطلع الانوار، إحالۃ علی ’’حل المغلق‘‘ للامام أبی الحسنات اللکنوی، وانی رأیت نحوہٗ فی حاشیتہٖ۔’’مصباح الدجٰی فی لواء الھدٰی‘‘۔
۴}  حوار فضیلۃ الشیخ المفتی محمد ولی اللّٰہ رحمہ اللّٰہ، شیخ المعقولات السابق بالجامعۃ النظامیۃ۔
۵} حوار فضیلۃ الشیخ ابی بکر محمد الہاشمی، رئیس المصححین بدائرۃ المعارف العثمانیہ۔
۶} مطلع الانوار: المفتی محمد رکن الدینؒ۔
۷}خاتمۃ الطبع للشیخ ابی الحسن الأمروھیّ، علی ’’کنز العمال‘‘ ج:۸، الطبعۃ الاولی ۱۳۱۴؁ھـ ۔
۸} تقریظ سماحۃ الشیخ السید ابراھیم الادیب الرضویؒ علی ’جامع مسانید الامام الاعظم‘‘۔
۹} خاتمۃ الطبع للشیخ الحسن بن أحمد الحنفیؒ، علی ’’الجوھر النقی‘‘(۲/۲۷۱) الطبعۃ الاولی۔ حیدرآباد۔
۱۰} نزھۃ الخواطر :(۸/۷۸) العلامۃ الشریف عبدالحی الحسنیؒ
۱۱} ملخصا من مقدمۃ المفتی محمد عبدالحمید ؒ علی ’’مقاصد الاسلام‘‘ (ج :۱)
۱۲} تقریظ سماحۃ الشیخ امداد اللہ المکیؒ علی ’’الانوار الأحمدیۃ‘‘ للامام الفاروقیؒ۔
۱۳} رسالۃ الدکتوراۃ :د؍ محمد عبدالحمید اکبر، مکاتیب الشیخ احمد رضا خان البریلویؒ (ص:۸۶)
۱۴}وممّا یدلّ علی ھذا المعنی ما ذکرہ الحافظ الذھبی أثناء ترجمۃ الامام أبی الحسن علی بن موسی القمّی شیخ الحنفیۃ بخر اسان فقال: ’’کان عالم أھل الرأی فی عصرہ بلا مدافعۃ …… فکان المحدثون إذ ذاک أئمّۃ عالمین بالفقہ أیضا، وکان أھل الرأی بصراء بالحدیث، قد رحلوا فی طلبہ، وتقدّموا فی معرفتہ، وأمّا الیوم فالمحدث قد قنع بالسکۃ والخطبۃ، فلا یفقہ ولایحفظ، کما أنّ الفقیہ قد تشبّث بفقہ لا یجید معرفتہ ولا یدری ما ھو الحدیث۔ (الذھبی : سیراعلام النبلاء ۱۱ /۲۶۸)
۱۵} الکلام المرفوع فیما یتعلق بالحدیث الموضوع  ص ۔ ۴۵ : الامام الفاروقی ‘ تعریب : فضیلۃ الشیخ محمد خواجہ شریف شیخ الحدیث بالجامعۃ النظامیۃ ۔
٭٭٭

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *