افاداتِ رضویہ

٭۔۔۔۔۔۔حدیث کے صحیح نہ ہونے اور موضوع ہونے میں زمین وآسمان کا فرق ہے۔اور حدیث کے صحیح نہ ہونے سے اس کا موضوع ہونا لازم نہیں آتا۔ 
(ج۵،ص۴۴۰،۴۴۱)
٭۔۔۔۔۔۔ابن جوزی نے جس جس حدیث کو غیر صحیح کہا اس کا موضوع ہونا لازم نہیں آتا۔                             (ج۵،ص۴۴۱)
٭۔۔۔۔۔۔لفظ ”لا یثبت”سے یہ ثابت نہیں ہوتاکہ حدیث موضوع ہے۔ 
(ج۵،ص۴۴۲)
٭۔۔۔۔۔۔سند کا منقطع ہونا مستلزم وضع نہیں۔             (ج۵،۴۴۸)
٭۔۔۔۔۔۔ہمارے ائمہ کرام اور جمہور علماء کے نزدیک انقظاع سے صحت وحجیت میں کچھ خلل نہیں آتا۔                     (ج۵، ص۴۴۸)
٭۔۔۔۔۔۔حدیث مضطرب بلکہ منکر بلکہ مدرج بھی موضوع نہیں یہاں تک کہ فضائل میں مقبول ہیں۔                         (ج۵،ص۴۵۰)                                                                                                                                                                              (1)مذكورہ فوائدِحدیثیہ میں سے اكثر فوائدفتاوی رضویہ مخرجہ جلد 5 میں موجود رسائل منیر العین اور حاجزالبحرین سے لئے گئے ہیں ان فوائد كو فقط ایك نظر دیكھنے سے امامِ اہلسنت كی دیگر علوم وفنون میں مہارت وجودتِ طبع كی طرح علم اصول حدیث میں بھی مہارت و وقتِ نظری آفتابِ نیم روز كی طرح واضح دكھائی دیتی ہے۔  ہم نے یہاں ان فوائد كو اجمالاً ذكر كیا ہے لہٰذااگر كسی كو تفصیل یا تشریح مطلوب ہو تو ان رسائل اور دیگر كُتبِ اصولِ حدیث كی طرف مراجعت كرے۔ 12
Advertisement
٭۔۔۔۔۔۔ضعف ِراویان کے باعث حدیث کو موضوع کہہ دینا ظلم وجزاف ہے۔                                    (ج۵،ص۴۵۳)
٭۔۔۔۔۔۔منکر ومتروک کی حدیث بھی موضوع نہیں۔(ج۵،ص۴۵۵،۴۵۶)
٭۔۔۔۔۔۔بارہا موضوع یا ضعیف کہنا صرف ایک سند کے اعتبار سے ہوتاہے نہ کہ اصلِ حدیث کے اعتبار سے۔                 (ج۵،ص۴۶۸)
٭۔۔۔۔۔۔تعدد ِطرق سے ضعیف حدیث قوت پاتی ہے بلکہ حسن ہوجاتی ہے۔
(ج۵،ص۴۷۲)
٭۔۔۔۔۔۔حصولِ قوت کو صرف دو سندوں سے آنا کافی ہے۔(ج۵،ص۴۷۵)
٭۔۔۔۔۔۔اہلِ علم کے عمل کرلینے سے حدیثِ ضعیف قوی ہوجاتی ہے۔
(ج۵،ص۴۷۵)
٭۔۔۔۔۔۔حدیث ”أَصْحَابِیْ کَالنُّجُوْمِ فَبِاَیِّہِمُ اقْتَدَیْتُمْ اِہْتَدَیْتُمْ میں اگرچہ محدثین کو کلام ہے مگر وہ اہل کشف کے نزدیک صحیح ہے۔
(ج۵،ص۴۹۱)

(adsbygoogle = window.adsbygoogle || []).push({});

٭۔۔۔۔۔۔اَخذ میں قلتِ مبالات زمانہ  تابعین سے پیداہوئی۔

(ج۵،ص۶۱۲)
٭۔۔۔۔۔۔محدثین کی اصطلاح میں جس حدیث کو مُرْسَل، مُنْقَطِع، مُعَلَّق، مُعْضَل کہتے ہیں فقہاء اور اصولیین کی اصطلاح میں ان سب کومُرْسَل کہاجاتاہے۔                            (ج۵،ص۶۲۱)
٭۔۔۔۔۔۔لَاأَصْلَ لَہَا مقتضی ِ کراہت نہیں۔             (ج۵،ص۶۴۱)
٭۔۔۔۔۔۔کسی حدیث کی سند میں راوی کا مجہول ہونا اگراثرکرتا ہے تو صرف اس قدر کہ اسے ضعیف کہاجائے نہ کہ باطل وموضوع ۔         (ج۵،ص۴۴۳)
٭۔۔۔۔۔۔نافع اورعبد اللہ بن واقد دونوں شاگرد ِعبد اللہ بن عمر رضی اللہ عنہما ہیں۔ 
(ج۵،ص۱۶۷)
٭۔۔۔۔۔۔محاوراتِ سلف واصطلاحِ محدثین میں تشیع اور رفض کے درمیان فرق ہے متأخرین” شیعہ” روافض کو کہتے ہیں۔            (ج۵،ص۱۷۵)
٭۔۔۔۔۔۔بخاری ومسلم کے تیس سے زیادہ وہ راوی ہیں جن کو اصطلاح قدماء پر بلفظِ تشیع ذکرکیاجاتاہے۔                     (ج۵،ص۱۷۶)
٭۔۔۔۔۔۔چند اوہام یا کچھ خطائیں محدث سے صادرہونا نہ اسے ضعیف کردیتا ہے نہ اس کی حدیث کومردود۔                    (ج۵،ص۱۸۴)
٭۔۔۔۔۔۔حدیث ِمعلول کیلئے ضعف ِراوی ضروری نہیں۔    (ج۵،ص۲۰۶)
٭۔۔۔۔۔۔جمہور محدثین کے مذہبِ مختارپرمدلس کاعنعنہ مردود ہے۔
(ج۵،ص۲۴۵)
٭۔۔۔۔۔۔مرسل حدیث ہمارے اورجمہورکے نزدیک حجت ہے۔
(ج۵،ص۲۹۲)
٭۔۔۔۔۔۔ضعیف ومتروک میں زمین وآسمان کا فرق ہے کہ ضعیف کی حدیث معتبر ومکتوب اور متابعت وشواہد میں مقبول ہے بخلاف متروک ۔ 
(ج۵،ص۳۰۳)
٭۔۔۔۔۔۔عبد اللہ بن مسعود، عبد اللہ بن عمرو انس سے افقہ ہیں رضی اللہ تعالی عنہم اجمعین۔                                (ج۵،ص۳۱۱)
٭۔۔۔۔۔۔حدیث صحیح نہ ہونے کے یہ معنی نہیں کہ غلط ہے۔     (ج۵،ص۴۳۶)
٭۔۔۔۔۔۔حدیث ِحسن احکامِ حلال وحرام میں حجت ہوتی ہے۔
(ج۵،ص۴۳۷)
٭۔۔۔۔۔۔کتب ِصحاحِ ستہ میں مذکورہ تما م احادیث صحیح نہیں تسمیہ بصحاح تغلیباً ہے۔                                    (ج۵،ص۴۳۹)
٭۔۔۔۔۔۔حدیثِ موضوع بالاجماع ناقابلِ انجبار،نہ فضائل وغیرہ کسی باب میں لائقِ اعتبار۔                             (ج۵،ص۴۴۰)
٭۔۔۔۔۔۔حدیث ِضعیف احکام میں بھی مقبول ہے جبکہ محلِ احتیاط ہو۔
(ج۵،ص۴۹۴)
٭۔۔۔۔۔۔حدیثِ ضعیف پر عمل کیلئے خاص اس فعل میں حدیث ِصحیح کا آنا ضروری نہیں۔                            (ج۵،ص۵۰۱)
٭۔۔۔۔۔۔مسلم وبخاری میں بھی ضعفاء کی روایات موجود ہیں۔
(ج۵،ص۵۱۱،۵۱۲)
٭۔۔۔۔۔۔دارقطنی احادثِ شاذہ معلّلہ سے پرُہے۔        (ج۵،ص۵۱۸)
٭۔۔۔۔۔۔کتب ِموضوعات میں کسی حدیث کا ذکر مطلقاً ضعف ہی کو مسلتزم نہیں۔                                (ج۵،ص۵۴۸)
٭۔۔۔۔۔۔ابنِ جوزی نے صحاحِ ستہ اور مسندِ امام احمد کی چوراسی احادیث کوموضوع کہا۔                            (ج۵،ص۵۴۸)
٭۔۔۔۔۔۔بالفرض اگر کتبِ حدیث میں اصلا ًپتانہ ہوتا،تاہم ایسی حدیث کا بعض کلماتِ علماء میں بلا سند مذکور ہونا کافی ہے۔            (ج۵،ص۵۵۵)
٭۔۔۔۔۔۔حدیث اگرموضوع بھی ہوتاہم فعل کی ممانعت نہیں۔
(ج۵،ص۵۶۱)
٭۔۔۔۔۔۔عمل بموضوع اورعمل بما فی الموضوع میں فرقِ عظیم ہے۔
(ج۵،ص۵۷۱)
٭۔۔۔۔۔۔اعمالِ مشایخ محتاجِ سند نہیں، اعمال میں تصرف اور ایجادِ مشایخ کو ہمیشہ گنجائش(ہے)۔                        (ج۵،ص ۵۷۱)
٭۔۔۔۔۔۔مشاجرات صحابہ میں سیروتاریخ کی موحش حکایتیں قطعا ًمردود ہیں۔    
(ج۵،ص۵۸۲)
٭۔۔۔۔۔۔مجہول العین کا قبول ہی مذہب ِمحققین ہے۔        (ج۵،ص۵۹۵)
٭۔۔۔۔۔۔فضائلِ اعمال سے مراد اعمالِ حسنہ ہیں نہ صرف ثواب ِاعمال۔
(ج۵،ص۶۰۰)
٭۔۔۔۔۔۔ہمارے امامِ اعظم رضی اللہ عنہ جس سے روایت فرمالیں اس کی ثقاہت ثابت ہوگی۔                         (ج۵،ص۶۱۲)
٭۔۔۔۔۔۔ افِادہ عام (جہالتِ راوی سے حدیث پر کیااثرپڑتاہے) کسی حدیث کی سند میں راوی کا مجہول ہونااگر اثرکرتاہے توصرف اس قدر کہ اسے ضعیف کہا جائے نہ کہ باطل وموضوع بلکہ علماء کو اس میں اختلاف ہے کہ جہالت قادحِ صحت ومانعِ حجیت بھی ہے یا نہیں۔            (ج۵،ص۴۴۳)

(adsbygoogle = window.adsbygoogle || []).push({});

٭۔۔۔۔۔۔ جس حدیث میں راوی بالکل مبہم ہو وہ بھی موضوع نہیں۔
(ج۵، ص۴۵۱)
٭۔۔۔۔۔۔ تعددِ طرق سے مبہم کا جبرِ نقصان ہوتاہے۔        (ج۵،ص۴۵۲)
٭۔۔۔۔۔۔ حدیث ِمبہم دوسری حدیث کیلئے مقوی ہوسکتی ہے۔     (ایضا)
٭۔۔۔۔۔۔ (تعددِ طرق سے ضعیف حدیث قوت پاتی بلکہ حسن ہوجاتی ہے) حدیث اگر متعدد طریقوں سے روایت کی جائے اور وہ سب ضعف رکھتے ہوں توضعیف ضعیف ملکر بھی قوت حاصل کرلیتے ہیں بلکہ اگر ضعف غایتِ شدت وقوت پرنہ ہوتوجبرِ نقصان ہوکر حدیث درجہ حسن تک پہنچتی اور مثلِ صحیح خود احکامِ حلال میں حجت ہوجاتی ہے۔                (ج۵،ص۴۷۲)
٭۔۔۔۔۔۔اعلی حضرت رضی اللہ تعالی عنہ (التعقبات علی الموضوعات)کے حوالے سے فرماتے ہیں کہ ”نہ صرف ضعیف ِمحض بلکہ منکر بھی فضائل اعمال میں مقبول ہے۔”                            (ج۵، ص۴۷۷) 
٭۔۔۔۔۔۔ اعلی حضرت رضی اللہ تعالی عنہ (فَتحُ المُبین بِشرْح الاربَعِین) کے حوالے سے فرماتے ہیں۔ایک حدیث ضعیف میں آیاہے کہ جسے میری طرف سے کسی عمل پر ثواب کی خبر پہنچی اور اس نے اس پر عمل کرلیا تو اسے اس کا اجر حاصل ہوجائے گا اگرچہ وہ بات میں نے نہ کہی ہو۔    (ج۵، ص۴۷۹)
٭۔۔۔۔۔۔ دوسری جگہ دار قطنی وغیرہا کتب سے نقل فرماتے ہیں کہ: ” مَنْ بَلَغَہ، عَنِ اللہِ عَزَّوَجَلَّ شَیْءٌ فِیْہِ فَضِیْلَۃٌ فَاَخَذَ بِہٖ اِیْمَانًا بِہٖ وَرَجَاءً ثَوَابَہ،، اَعْطَاہ، اللہُ تَعَالٰی ذٰلِکَ وَاِنْ لَّمْ یَکُنْ کَذٰلِکَ”  جسے اللہ عزوجل کی طرف سے کسی بات میں کچھ فضیلت کی خبر پہنچے اور وہ اس پر یقین اور ثواب کی امید سے عمل کرلے تواللہ عزوجل اسے وہ فضیلت عطافرمائے گا اگرچہ خبر ٹھیک نہ ہو۔                                (ج۵، ص۴۸۶)
٭۔۔۔۔۔۔امام بخاری کو ایک لاکھ احادیثِ صحیحہ حفظ تھیں، صحیح بخاری میں کل چارہزار بلکہ اس سے بھی کم ہیں۔                 (ج۵، ص۵۴۶) 
٭۔۔۔۔۔۔ (ایسی جگہ اگر سند کسی قابل نہ ہوتوصرف تجربہ، سندِ کافی ہے) أَقُوْلُ بالفرض اگر ایسی جگہ ضعفِ سند ایسی ہی حد پر ہوکہ اصلا ًقابلِ اعتماد نہ رہے مگر جو بات اس میں مذکور ہوئی وہ علماء وصلحاء کے تجربہ میں آچکی توعلمائے کرام اس تجربہ ہی کو سندِ کافی سمجھتے ہیں۔                    (ج۵،ص۵۵۱) ٭۔۔۔۔۔۔ اَلْمُعَلَّقُ عِنْدَ نَا فِی الْاِسْتِنَادِکَالْمَوْصُوْلِ ہمارے نزدیک معلق مستند ہونے میں متصل کی طرح ہے۔                (ج۱،ص۲۳۸)
٭۔۔۔۔۔۔ حدیثِ ضعیف :حلیہ میں فرمایا کہ جب حدیثِ ضعیف بالاجماع فضائل میں مقبول ہے تو اباحت میں بدرجہ اَولی۔        (ج۱، ص۲۴۰)

(adsbygoogle = window.adsbygoogle || []).push({});

٭۔۔۔۔۔۔ حدیثِ حسن :کسی مقصد کا ثبوت حدیثِ صحیح پر موقوف نہیں بلکہ حدیثِ صحیح کی طرح حسن سے بھی ثابت ہوجاتاہے۔    (ج۱،ص۲۴۱)

٭۔۔۔۔۔۔حدیثِ ضعیف سے استحباب ثابت ہوتاہے سنیت نہیں۔
(ج۱،ص۱۹۶)
٭۔۔۔۔۔۔ راوی کی تعریف وستائش روایت کی تعریف وستائش نہیں۔اور راوی کا فی نفسہٖ صادق ہونا، حدیث میں اس کے ضعیف ہونے کے منافی نہیں۔ (ج۳،ص۳۵۳)
٭۔۔۔۔۔۔اسباب ِطعن دس ہیں: ۱۔کذب ۲۔تہمت ۳۔کثرتِ غلط ۴۔غفلت ۵۔فسق ۶۔وہم ۷۔مخالفتِ ثقات ۸۔جہالت ۹۔بدعت ۱۰۔سوءِ حفظ ۔
(ج۵،ص۴۵۴)
٭۔۔۔۔۔۔مجہول کی تین قسمیں ہیں:۱۔مستور:جس کی عدالتِ ظاہری معلوم اور باطنی کی تحقیق نہیں ۔۲۔مجہول العین: جس سے صرف ایک ہی شخص نے روایت کی ہو۔۳۔مجہول الحال: جس کی عدالتِ ظاہری وباطنی کچھ ثابت نہیں۔قسمِ اول یعنی مستور تو جمہور محققین کے نزدیک مقبول ہے یہی مذہب امام الأئمہ سیدنا امام اعظم رضی اللہ تعالیٰ عنہ کا ہے۔اور دو قسم باقی کو بعض اکابر حجت جانتے جمہور مورث ضعف مانتے ہیں۔ (ج۵،ص۴۴۳،۴۴۴)
٭۔۔۔۔۔۔(موضوعیتِ حدیث کیونکر ثابت ہوتی ہے)غرض ایسے وجوہ سے حکم وضع کی طرف راہ چاہنا محض ہوس ہے، ہاں موضوعیت یوں ثابت ہوتی ہے کہ اس روایت کا مضمون(۱)قرآنِ عظیم (۲)سنتِ متواترہ (۳)یا اجماعی قطعی قطعیات الدلالۃ(۴)یا عقلِ صریح (۵)یا حسنِ صحیح(۶)یا تاریخِ یقینی کے ایسامخالف ہوکہ احتمالِ تاویل وتطبیق نہ رہے۔(۷)یا معنی ،شنیع وقبیح ہوں جن کا صدور حضور پُرنور صلوات اللہ علیہ سے منقول نہ ہو، جیسے معاذاللہ کسی فساد یا ظلم یا عبث یا سفہ یا مدحِ باطل یا ذمِ حق پر مشتمل ہونا۔(۸)یا ایک جماعت جس کا عدد حدِ تواتر کو پہنچے اور ان میں احتمال کذب یا ایک دوسرے کی تقلید کا نہ رہے اُس کے کذب وبطلان پر گواہی مستنداً الی الحس دے۔ع:  زِدْتُہ، لِاَنَّ التَّوَاتُرَ لاَیُعْتَبَرُ اِلَّافِی الْحِسِّیَّاتِ کَمَا نَصُّوْا عَلَیْہِ فِی الْاَصْلَیْن. منہ (م)میں نے اس کا اضافہ کیا کیونکہ تواتر کا اعتبار حسیات کے علاوہ میں نہیں ہوتا جیسے کہ انہوں نے اصول میں اس کی تصریح کی ہے ۔ منہ (ت) (۹)یا خبر کسی ایسے امر کی ہوکہ اگر واقع ہوتا تو اُس کی نقل وخبر مشہور ومستفیض ہوجاتی، مگر اس روایت کے سوا اس کا کہیں پتا نہیں۔(۱۰)یا کسی حقیر فعل کی مدحت اور اس پر وعدہ وبشارت یا صغیر امر کی مذمّت اور اس پر وعید وتہدید میں ایسے لمبے چوڑے مبالغے ہوں جنہیں کلام معجز نظام نبوت سے مشابہت نہ رہے۔ یہ دس۱۰ صورتیں تو صریح ظہور ووضوحِ وضع کی ہیں۔(۱۱)یا یوں حکمِ وضع کیا جاتا ہے کہ لفظ رکیک وسخیف ہوں جنہیں سمع دفع اور طبع منع کرے اور ناقل مدعی ہوکہ یہ بعینہا الفاظ کریمہ حضور افصح العرب صلی اللہ تعالیٰ علیہ وسلم ہیں یا وہ محل ہی نقل بالمعنی کا نہ ہو۔(۱۲)یا ناقل رافضی حضرات اہلبیت کرام علیٰ سیدہم وعلیہم الصلاۃ والسلام کے فضائل میں وہ باتیں روایت کرے جو اُس کے غیر سے ثابت نہ ہوں، جیسے حدیث:لَحْمُک لَحْمِیْ وَدَمُک دَمِی ْ(تیرا گوشت میرا گوشت، تیرا خُون میرا خُون۔ ت)
أقول: انصافاً یوں ہی وہ مناقبِ امیر معاویہ وعمروبن العاص رضی اللہ تعالیٰ عنہما کہ صرف نواصب کی روایت سے آئیں کہ جس طرح روافض نے فضائلِ امیرالمومنین واہلِ بیت طاہرین رضی اللہ تعالیٰ عنہم میں قریب تین لاکھ حدیثوں کے وضع کیں ”کَمَانَصَّ عَلَیْہِ الْحَافِظُ أَبُوْیَعْلٰی وَالْحَافِظُ الْخَلِیْلِيُّ فِي الْاِرْشَادِ” (جیسا کہ اس پر حافظ ابویعلی اور حافظ خلیلی نے ارشاد میں تصریح کی ہے۔ت)یونہی نواصب نے مناقبِ امیرِ معٰویہ رضی اللہ تعالیٰ عنہ میں حدیثیں گھڑیں کَمَاأَرْشَدَ اِلَیْہِ الْاِمَامُ الذَّابُّ عَنِ السُّنَّۃِ أَحْمَدُ بْنُ حَنْبَلٍ رَحِمَہُ اللہُ تَعَالٰی (جیسا کہ اس کی طرف امام احمد بن حنبل رحمہ اللہ تعالیٰ نے رہنمائی فرمائی جو سنّت کا دفاع کرنے والے ہیں۔ ت) (۱۳)یا قرائن ِحالیہ گواہی دے رہے ہوں کہ یہ روایت اس شخص نے کسی طمع سے یاغضب وغیرہما کے باعث ابھی گھڑکر پیش کردی ہے جیسے حدیث ِسبق میں زیادتِ جناح اورحدیثِ ذمِ معلمین اَطفال۔(۱۴)یا تمام کتب وتصانیفِ اسلامیہ میں استقرائے تام کیاجائے اور اس کاکہیں پتانہ چلے یہ صرف اَجلہ حفاظ ائمہ شان کاکام تھاجس کی لیاقت صدہاسال سے معدوم۔ (۱۵)یاراوی خود اقرارِ وضع کردے خواہ صراحۃً ،خواہ ایسی بات کہے جو بمنزلہ ئاقرار ہو،مثلاً ایک شیخ سے بلاواسطہ بدعوی سماع روایت کرے ، پھراُس کی تاریخِ وفات وہ بتائے کہ اُس کااس سے سننامعقول نہ ہو۔
یہ پندرہ باتیں ہیں کہ شاید اس جمع وتلخیص کے ساتھ ان سطور کے سوانہ ملیں۔  وَلَوْبَسَطْنَا الْمَقَالَ عَلٰی کُلِّ صُوْرَۃٍ لَطَالَ الْکَلَامُ وَتَقَاصَی الْمَرَامُ، وَلَسْنَاھُنَالِکَ بِصَدَدِ ذٰلَکَ۔ (اگرہم ہرایک صورت پرتفصیلی گفتگو کریں تو کلام طویل اور مقصد دور ہوجائے گا لہذا ہم یہاں اس کے در پے نہیں ہوتے) 

(adsbygoogle = window.adsbygoogle || []).push({});

(فتاوی رضویہ، ج۵، ص۴۶۰)

٭۔۔۔۔۔۔ (حدیث سے ثبوت ہونے میں مطالب تین قسم ہیں)جن باتوں کا ثبوت حدیث سے پایا جائے وہ سب ایک پلّہ کی نہیں ہوتیں بعض تو اس اعلیٰ  درجہ قوت پر ہوتی ہیں کہ جب تک حدیثِ مشہور، متواتر نہ ہو اُس کا ثبوت نہیں دے سکتے ،اَحاد اگرچہ کیسے ہی قوتِ سند ونہایتِ صحت پر ہوں اُن کے معاملہ میں کام نہیں دیتیں۔(عقائد میں حدیث احاد اگرچہ صحیح ہو کافی نہیں)یہ اصولِ عقائد ِاسلامیہ ہیں جن میں خاص یقین درکار، علامہ تفتازانی رحمہ اللہ تعالیٰ شرح عقائد ِنسفی میں فرماتے ہیں: خَبْرُ الْوَاحدِ عَلٰی تَقْدِیْرِ اشْتِمَالِہٖ عَلٰی جَمِیْعِ الشَّرَائِطِ الْمَذْکُوْرَۃِ فِیْ اُصُوْلِ الْفِقْہِ لَایُفِیْدُ اِلاَّ الظَّنَّ وَلَاعِبْرَۃَ بِالظَّنِّ فِیْ َبابِ الْاِعْتِقَادَاتِ۔ (حدیثِ احاد اگرچہ تمام شرائط ِصحت کی جامع ہو ظن ہی کا فائدہ دیتی ہے اور معاملہ اعتقادمیں ظنیات کاکچھ اعتبار نہیں)
    مولاناعلی قاری منح الروض الازہر میں فرماتے ہیں:  اَلاْحَادُ لاَ تُفِیْدُ اْلاِعْتِمَادَ فِی اْلاِعْتِقَادِ (احادیث احاد دربارہ اعتقاد ناقابلِ اعتماد) (دربارہ احکام ضعیف کافی نہیں)دوسرا درجہ احکام کا ہے کہ اُن کے لئے اگرچہ اُتنی قوت درکار نہیں پھر بھی حدیث کا صحیح لذاتہ خواہ لغیرہ یا حسن لذاتہ یا کم سے کم لغیرہ ہونا چاہے، جمہور علماء یہاں ضعیف حدیث نہیں سنتے۔
(فضائل ومناقب میں باتفاق علماء حدیثِ ضعیف مقبول وکافی ہے)تیسرا مرتبہ فضائل ومناقب کا ہے یہاں باتفاقِ علماء ضعیف حدیث بھی کافی ہے،مثلاً کسی حدیث میں ایک عمل کی ترغیب آئی کہ جو ایسا کریگااتنا ثواب پائے گایاکسی نبی یاصحابی کی خُوبی بیان ہوئی کہ اُنہیں اللہ عزوجل نے یہ مرتبہ بخشا،یہ فضل عطا کیا، تو ان کے مان لینے کوضعیف حدیث بھی بہت ہے،ایسی جگہ صحت حدیث میں کلام کرکے اسے پایہ قبول سے ساقط کرنا فرق مراتب نہ جاننے سے ناشی،جیسے بعض جاہل بول اُٹھے ہیں کہ امیر معاویہ رضی اللہ تعالیٰ عنہ کی فضیلت میں کوئی حدیث صحیح نہیں،یہ اُن کی نادانی ہے علمائے محدثین اپنی اصطلاح پر کلام فرماتے ہیں، یہ بے سمجھے خدا جانے کہاں سے کہاں لے جاتے ہیں، عزیز ومسلم کہ صحت نہیں پھر حسن کیا کم ہے، حسن بھی نہ سہی یہاں ضعیف بھی مستحکم ہے۔                فتاوی رضویہ ، (ج۵، ص۴۷۷) 

(adsbygoogle = window.adsbygoogle || []).push({});

٭۔۔۔۔۔۔صحیح وموضوع دونوں ابتداء وانتہاء کے کناروں پر واقع ہیں،سب سے اعلیٰ صحیح اور سب سے بدتر موضوع، اور وسط میں بہت اقسامِ حدیث ہیں درجہ بدرجہ،(حدیث کے مراتب اور اُن کے احکام) مرتبہ صحیح کے بعد حسن لذاتہٖ بلکہ صحیح لغیرہ پھر حسن لذاتہ، پھر حسن لغیرہ، پھر ضعیف بضعف قریب اس حد تک کہ صلاحیتِ اعتبار باقی رکھے جیسے اختلاطِ راوی یا سُوء ِ حفظ یا تدلیس وغیرہا، اوّل کے تین بلکہ چاروں قسم کو ایک مذہب پر اسمِ ثبوت متناول ہے اور وہ سب محتج بہاہیں اور آخر کی قسم صالح،یہ متابعات وشواہد میں کام آتی ہے اور جابر سے قوّت پاکر حسن لغیرہ بلکہ صحیح لغیرہ ہوجاتی ہے،اُس وقت وہ صلاحیتِ احتجاج وقبول فی الاحکام کا زیور گرانبہاپہنتی ہے، ورنہ دربارہ فضائل تو آپ ہی مقبول وتنہا کافی ہے، پھر درجہ ششم میں ضعفِ قوی ووہنِ شدید ہے جیسے راوی کے فسق وغیرہ قوادحِ قویہ کے سبب متروک ہونا، بشرطیکہ ہنوز سرحدِ کذب سے جُدائی ہو،یہ حدیث احکام میں احتجاج درکنار اعتبار کے بھی لائق نہیں، ہاں فضائل میں مذہب راجح پر مطلقاً اور بعض کے طور پر بعد ِانجبار بتعدد ِ مخارج وتنوعِ طرق ،منصب ِقبول وعمل پاتی ہے ،کماسَنُبَیِّنُہ، اِنْ شَاءَ اللہُ تَعَالٰی (اِن شاء اللہ تعالیٰ عنقریب ان کی تفصیلات آرہی ہیں۔ ت) پھر درجہ ہفتم میں مرتبہ مطروح ہے جس کا مدار وضاع ،کذّاب یا متہم بالکذب پر ہو، یہ بدترین اقسام ہے بلکہ بعض محاورات کے رُو سے مطلقاً اور ایک اصطلاح پر اس کی نوعِ اشد یعنی جس کا مدار کذب پر ہو عینِ موضوع، یا نظرِ تدقیق میں یوں کہے کہ ان اطلاقات پر داخل موضوع حکمی ہے۔ان سب کے بعد درجہ موضوع کاہے،یہ بالاجماع نہ قابلِ انجبار،نہ فضائل وغیرہا کسی باب میں لائقِ اعتبار، بلکہ اُسے حدیث کہنا ہی توّسع وتجوّز ہے،حقیقۃً حدیث نہیں محض مجعول وافترا ہے،  والعِیَاذُ بِاللہِ تَبَارَکَ وَتَعَالٰی۔ وَسَیُرَّدُّ عَلَیْکَ تَفَاصِیْلُ جَلِّ ذٰلِکَ اِنْ شَاءَ اللہُ الْعَلِيُّ الْاَعْلٰی (اس کی روشن تفاصیل ان شاء اللہ تعالیٰ آپ کے لئے بیان کی جائیں گی۔ ت)طالبِ تحقیق ان چند حرفوں کو یاد رکھے کہ باوصفِ وجازت ،محصل وملخصِ علمِ کثیر ہیں اور شاید اس تحریرِ نفیس کے ساتھ ان سطور کے غیر میں کم ملیں،  وَلِلّٰہِ الْحَمْدُ وَالْمَنَّۃُ. (فتاوی رضویہ، ج۵، ص۴۴۰)

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

error: Content is protected !!