Our website is made possible by displaying online advertisements to our visitors. Please consider supporting us by whitelisting our website.

خوشا دِلے کہ دِہندَش ولائے آلِ رسول

تَرنُّم عَندلیبِ قلم برشاخسارِ مدحِ اکرم حضور پیر و مرشدِ برحق
 علیہ رضوان الحق

خوشا دِلے کہ دِہندَش ولائے آلِ رسول

خوشا دِلے کہ دِہندَش ولائے آلِ رسول
خوشا سَرے کہ کُنِندَش فدائے آلِ رسول
گناہِ  بندہ  بِبَخْش  اے  خدائے  آلِ  رسول
برائے آلِ رسول از برائے آلِ رسول
ہزار دُرجِ سَعادت برآرد از صَدفے
بہائے ہر گہرِ بے بہائے آلِ رسول 
سِیَہ سَپید نہ شُد گر رشید مِصرَش داد
سیہ سپید کہ سازَد عطائے آلِ رسول 
اِذا      رُؤُا      ذُکِرَ اللّٰہ         معائنہ       بینی
مَن و خدائے من آنسْت ادائے آلِ رسول
خبر   دِہَد   ز   تگِ     لآ      اِلٰہ        اِلَّا  اللّٰہ 
فنائے آلِ رسول و بقائے آلِ رسول
ہزار مِہر پَرَد در ہوائے او چو ہَبا
بَرُوْزَنے کہ دَرَخْشَد ضیائے آلِ رسول
نصیبِ پَست نشیناں بلندیسْت ایں جا
تواضع ست دُرِّ مُرتقائے آلِ رسول
برآ بہ چرخِ برین و بِبیِں ستانۂ او
گرا بہ خاک و بِیا بر سمائے آلِ رسول 
قبائے شہ بگلیمِ سیاہ خود نخرد
سیہ گلیم نباشَد گدائے آلِ رسول 
دوائے  تلخ  مَخور  شہد  نوش  و  مژدہ   نیوش
بیا مریض بَدارُ الشفائے آلِ رسول 
ہمیں نہ از سر افسر کہ ہم زِ سر برخاست
نشست ہر کہ بفرقَش ہمائے آلِ رسول
بَسخر و طعنۂ سختی زنَد بعارضِ گل
بَسنگِ صخرہ و ز دگر صَبائے آلِ رسول
دِہد ز باغِ منیٰ غنچہ ہائے زر بہ گرہ
دمِ سوال حیا و غنائے آلِ رسول
ز چرخ کانِ زرِ شرقی، مغربی آرند
بدرد مس بمس کیمیائے آلِ رسول
جَرس بصلصلہ اش آنچہ گفت راہی را
ہماں بسلسلہ آرد ورائے آلِ رسول
رسول داں شوی از نامِ او نمی بینی
دو حرفِ معرفہ در ابتدائے آلِ رسول
بخدمتش نخرد باج و تاج رنگ و فرنگ
سپید بخت سیاہ سرائے آلِ رسول
اگر شب است و خطر سخت و رہ نمی دانی
بِبَند  چشم  و  بِیا  بر  قفائے   آلِ    رسول
زِ سر نہند کلاہِ غرور مُدَّعِیاں
بجلوئہ مدد اے کفشِ پائے آلِ رسول
ہزار جامۂ سالوس را کتانی دِہ
بتاب اے مہِ جیبِ قبائے آلِ رسول
مَرو بمیکدہ کانجا سیاہ کارانند
بیا بخانقہِ نورزائے آلِ رسول
مَرو بمجلسِ فسق و فجورِ شَیّاداں
بیا بانجمنِ اِتقائے آلِ رسول
مَرو بَدامگہِ ایں دروغ بافاں ہیچ
بیا بجلوہ گہِ دِلکشائے آلِ رسول
ازاں بانجمنِ پاک سَبزپوشاں رفت
کہ سبز بود دراں بزم جائے آلِ رسول
شِکست شیشہ بہجر و پری بشیشہ ہنوز
زِ دل نمی رود آں جلوہ ہائے آلِ رسول
شہیدِ عشق نمیرد کہ جاں بجاناں داد
تو مُردی ایکہ جدائی زِ پائے آلِ رسول 
بگو کہ وائے من و وائے مردہ ماندنِ من
مَنال ہَرزہ کہ ہَیہات وائے آلِ رسول 
کہ می برد زِ مریضانِ تلخ کام نیاز
بعہد شہد فروشِ بقائے آلِ رسول
صَبا سلامِ اسیرانِ بستہ بال رساں
بطائرانِ ہوا و فضائے آلِ رسول
خطا مَکن دلکا؟ پردہ ایْست دوری نیست
بگوش می خورد اَکْنوں صدائے آلِ رسول
مَگو  کہ  دیدہ  گری  و  غبار   دیدہ   بخند
بکارِ تُست کنوں توتیائے آلِ رسول
مَپِیچ   در   غمِ  عیّارگانِ    ذنب    شعار
اگر ادب نکُنَند از برائے آلِ رسول
ہر آنکہ نِکْث کُند نکث بہرِ نفسِ وَیسْت
غنی ست حضرتِ چَرخ اِعْتِلائے آلِ رسول
سپاس کن کہ بپاس و سپاسِ بدمنشاں
نیاز و ناز نَدارد ثنائے آلِ رسول
نہ سگ بَشور و نہ شَپّر بَخامُشی کاہَد
زِ قدرِ بدر و ضیائے ذُکائے آلِ رسول
تواضعِ شہِ مسکیں نواز را نازَم
کہ ہمچو بندہ کند بوس پائے آلِ رسول
منم امیرِ جہانگیر کج کلہ یعنی
کمینہ بندہ و مسکیں گدائے آلِ رسول
اگر مثالِ خلافت دِہد فقیرے را
عجب مَدار زِ فیض و سخائے آلِ رسول
مَگِیر خُردہ کہ آں کس نہ اہلِ ایں کار اَست
کہ دانَد اہلِ نَمودن عطائے آلِ رسول
’’ بِبِیں تَفاوُتِ  رہ  از  کُجا  ست   تا   بکجا‘‘
 تَبَارَکَ  اللّٰہ   ما   و   ثَنائے   آلِ   رسول
مَرا زِ نسبتِ مَلکْ اَست اُمید آنکہ بہ حشر
 ندا کُنَند بِیا اے رضاؔئے آلِ رسول
٭…٭…٭…٭…٭…٭
سخاوتِ مصطفی     صلَّی اللّٰہ تعالٰی عَلَــیْہِ وَسَلَّم
       حضرت جابر بن عبداللّٰہ رَضِیَ اللّٰہُ تَعَالٰی عَنْہُمَا  فرماتے ہیں کہ حضور صلَّی اللّٰہ تعالٰی عَلَــیْہِ وَسَلَّم  نے کسی سائل کے جواب میں خواہ وہ کتنی ہی بڑی چیز کا سوال کیوں نہ کرے ’’ لَا ‘‘ (نہیں)کا لفظ نہیں فرمایا۔          (الشفاء ،ج۱،ص۱۱۱)      
error: Content is protected !!