کھال تک اُتار لیں گے

کھال تک اُتار لیں گے

مسلمانوں کی عزت کی دھجیاں اُڑا کر خوش ہونے والے سنبھل جائیں کہ اس کا انجام بہت بُرا ہوگا چنانچہ حضرتِ سیِّدُنا یزید بن شَجَرہ رحمۃُ اللّٰہ تعالٰی علیہ فرماتے ہیں:جس طرح سمندر کے کَنارے ہوتے ہیں اِسی طرح جہنَّم کے بھی کَنارے ہیں جن میں بُختی اونٹوں جیسے سانپ اور خَچّروں جیسے بچھّو رہتے ہیں ۔اہلِ جہنَّم جب عذاب میں کمی کیلئے فریاد کریں گے تو حکم ہوگاکَناروں سے باہَر نکلو وہ جُوں
ہی نکلیں گے تو وہ سانپ انہیں ہونٹوں اورچِہروں سے پکڑ لیں گے اور ان کی کھال
تک اُتارلیں گے وہ لوگ وہاں سے بچنے کیلئے آگ کی طرف بھاگیں گے پھر ان پر کھجلی مُسَلَّط کردی جائے گی وہ اس قَدَرکُھجائیں گے کہ ان کاگوشت پوست سب جَھڑ جائے گا اور صرف ہڈّیاں رَہ جائیں گی،پکار پڑے گی:اے فُلاں!کیا تجھے تکلیف ہورہی ہے؟ وہ کہے گا: ہاں ۔ تو کہا جائے گا: یہ اُس اِیذاء کا بدلہ ہے جو تو مومِنوں کو دیا کرتا تھا۔ (اَلتَّرْغِیب وَالتَّرْہِیب،کتاب صفۃ الجنۃ والنار،فصل فی ذکر۔۔۔الخ،۴/ ۲۸۰، حدیث:۵۶۴۹ ملخصاً)
صَلُّوا عَلَی الْحَبِیب ! صلَّی اللّٰہُ تعالٰی علٰی محمَّد

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *